BN

ارشاد احمد عارف


ارشاد نامہ


’’محمد خان جونیجو کی وزارت عظمیٰ کے دوران صدر ضیاء الحق نے ایک اجلاس طلب کیا۔ اقبال احمد خان شاید دل سے مجھے پسند نہیں کرتے تھے کیونکہ میں پیرزادہ صاحب کے ساتھ کام کرتا رہا تھا۔ وہ سمجھتے تھے کہ میں انکو سپورٹ کروں گا حالانکہ میں پروفیشنل آدمی تھا۔ تعلقات اپنی جگہ‘ میں نے کبھی شخصیات و تعلقات کی بناء پر اپنا کام نہیں کیا۔ جو فیصلہ کرتا تھا‘ میرٹ پر کرتا تھا۔ بہرحال ‘ اس اجلاس میں ضیاء الحق نے وزیر قانون کے ساتھ ساتھ مجھے بھی بلایا۔ وزیر اعظم صاحب کے ساتھ اٹارنی جنرل اور ان
اتوار 03 جنوری 2021ء

فراغتے و کتابے و خوشہ چمنے

اتوار 20 دسمبر 2020ء
ارشاد احمد عارف
نور نظر آمنہ شاہ سے ملنے‘ نومولود نواسی حلیمہ شاہ کو دیکھنے اور چند دن سیاست و صحافت کے ہنگاموں سے دور رہنے کی خواہش دیار مغرب کے سیاسی و ثقافتی مرکز لندن لے آئی ہے‘ گھر میں مقید نہ سہی محصور ہوں کہ قرنطینہ کے نئے برطانوی قوانین کے تحت کم از کم پانچ دن تک گھر سے باہر نکلنا منع ہے ورنہ ایک ہزار پائونڈ جرمانے کی سزا‘ برطانیہ کے حکمران خاصے ہوشیار ہیں‘ مختلف ممالک نے کورونا وائرس سے نمٹنے کے لئے قوانین وضع کئے تو ایئر لائنز کو پابند کر دیا کہ صرف مستند لیبارٹریوں سے
مزید پڑھیے


کیسے کیسے لوگ (2)

جمعه 18 دسمبر 2020ء
ارشاد احمد عارف
ایک چھوٹا سا واقعہ یاد آرہا ہے‘ سٹاک ایکسچینج کے حصص پر۔ ڈاکٹر صاحب کے بینک کو ایسے حصص پر منافع کا چیک آ گیا جو وہ بیچ چکے تھے۔ بینک نے وہ منافع ڈاکٹر صاحب کے اکائونٹ میں جمع کر دیا۔ ڈاکٹر صاحب بینک پہنچ گئے۔ اب نیشنل بینک والے منت کر رہے ہیں کہ شیئر ہولڈر ہزاروں کی تعداد میں ہیں۔ ہم اصل حق دار کو کہاں ڈھونڈیں؟ مگر ڈاکٹر صاحب مُصر ہیں کہ ’’میں حصص بیچ چکا ہوں۔ اس منافع پر میرا کوئی حق نہیں۔‘‘ عمر کے پھیلتے سائے صحت پر اثر انداز ہو رہے تھے۔ بے خوابی
مزید پڑھیے


کیسے کیسے لوگ (1)

جمعرات 17 دسمبر 2020ء
ارشاد احمد عارف
جامعہ اشرفیہ کے بانی مفتی محمد حسن صاحب ڈاکٹر صاحب (ڈاکٹر امیر الدین) کے والد شہاب الدین صاحب کے دوست تھے۔ اپنی علالت کے دوران مفتی صاحب نے دو مریضوں کو باتیں کرتے ہوئے سن لیا‘ ایک مریض دوسرے سے کہہ رہا تھا۔ ’’آج تمہیں ایک داڑھی منڈاولی دکھائوں گا۔‘‘ ڈاکٹر صاحب وارڈ میں داخل ہوئے تو ان کی طرف اشارہ کر کے کہا‘ یہ رہا وہ ولی! یہ قصہ سن کر شہاب الدین پھولے نہیں سما رہے تھے۔ آخر باپ تھے اور افتخار کا جواز تھا۔ خود شہاب الدین صاحب کا قریبی تعلق شرق پور والے حضرت میاں شیر
مزید پڑھیے


دارالحکومت پر چڑھائی اور یہ زاد راہ؟

منگل 15 دسمبر 2020ء
ارشاد احمد عارف
لاہور میں مینار پاکستان کے زیر سایہ پی ڈی ایم کے جلسہ کو کامیاب اور متاثر کن اجتماع صرف وہی شخص قرار دے سکتا ہے جس کی بینائی کمزور‘ دانائی مشکوک ہے اوربڑے جلسوں کی تاریخ سے واقفیت واجبی ۔ گیارہ جماعتوں کی شبانہ روز محنت‘ دو ماہ سے جاری جارحانہ احتجاجی تحریک اور کثیر اخراجات کے باوجود پی ڈی ایم بے نظیر بھٹو‘ عمران خان اور ڈاکٹر طاہرالقادری کے جلسوں کی یاد تازہ نہ کرسکی اور مریم نوازشریف کو دوران تقریر یہ کہنا پڑا ’’ سخت سردی میں ان کی قلفی جم گئی جبکہ 2011ء میں عمران خان کے
مزید پڑھیے



نظرے خوش گزرے

جمعه 11 دسمبر 2020ء
ارشاد احمد عارف
٭ حضرت مولانا عبدالرحمن جامی ؒ مشہور فارسی شاعر اور صوفی بزرگ تھے اور عوام الناس کے ساتھ ساتھ صوفی منش لوگ بھی ان کی خدمت میں حاضری دیا کرتے تھے۔ ایک دفعہ ایک مہمل گو شاعر جس کا حلیہ صوفیوں جیسا تھا۔ ان کی خدمت میں حاضر ہوا اور اپنے سفر حجاز کی طویل داستان کے ساتھ ساتھ ان کو اپنے دیوان سے مہمل شعر بھی سنانے لگا اور پھر بولا: ’’میں نے خانہ کعبہ پہنچ کر برکت کے خیال سے اپنے دیوان کو حجرِ اسود پر ملا تھا۔‘‘ یہ سن کر مولانا جامیؒ مسکرائے اور فرمایا:’’حالانکہ ہونا یہ
مزید پڑھیے


خواہشات کے گھوڑوں پر سوار احمق

جمعرات 10 دسمبر 2020ء
ارشاد احمد عارف
8دسمبر کو آر یا پار تو نہیں ہوا‘ البتہ پی ڈی ایم کی جماعتوں میں استعفوں کے معاملے پر اختلافات کھل کر سامنے آئے اور پیپلز پارٹی کی قیادت نے میاں نواز شریف و مولانا فضل الرحمن کی اُمیدوں پر پانی پھیر دیا‘ میاں نواز شریف اور ان کی صاحبزادی مریم نواز کے عزائم واضح ہیں ؎ حجرے شاہ مقیم دے اِک جٹی عرض کرے میں بکرا دیواں فقیر دا جے سر دا سائیں مرے ہٹی سڑے کراڑ دی ‘ جتھے دیوا نت بلے کُتی مرے فقیر دی‘ جیڑھی چوں چوں نت کرے پنج ست مرن گوا نڈھناں‘رہندیاں نوں تاپ چڑھے گلیاں ہو
مزید پڑھیے


اجتماعی استعفے

منگل 08 دسمبر 2020ء
ارشاد احمد عارف
عمران خان اور موجودہ حکومت کو پریشان کرنے کے لئے اپوزیشن کے پاس سینٹ‘ قومی اور صوبائی اسمبلیوں سے اجتماعی استعفے ترپ کا پتہ ہیں‘ متحدہ اپوزیشن اگر ہمت کرے‘ادنیٰ ذاتی‘ خاندانی اور گروہی مفادات کو پس پشت ڈالے اور اتفاق رائے سے استعفوں کا کارڈ کھیلے تو ملک میں بحران پیدا کر سکتی ہے‘ عمران خان کہہ تو رہے ہیں کہ وہ ضمنی انتخابات کرا دیں گے مگر وسیع پیمانے پر چاروں صوبوں میں انتخابات کا انعقاد آسان نہیں‘ عام انتخابات سے ملتا جلتا مرحلہ ہے اور نتائج وسط المدتی انتخاب کی راہ ہموار کر سکتے ہیں مگر اپوزیشن
مزید پڑھیے


جلسہ بمقابلہ جنازہ

اتوار 06 دسمبر 2020ء
ارشاد احمد عارف
’’اڑتی سی اک خبر ہے زبانی طیور کی‘‘ کہ قائد محترم میاں نواز شریف لاہور میں 13دسمبر کو پی ڈی ایم کا ایسا عدیم النظیر جلسہ چاہتے ہیں جس کے سامعین کی تعداد علامہ خادم حسین رضوی کے جنازے میں شریک سوگواروں سے زیادہ ہو‘ یقین تو نہیں آتا کہ ایک تجربہ کار سردوگرم جشیدہ سیاستدان متحدہ اپوزیشن کے جلسے میں شریک سامعین کا موازنہ ایک درویش کی نماز جنازہ کے اجتماع سے کرنا چاہتے ہوں ‘سیاسی اجتماع اور نماز جنازہ میں کیامماثلث اور کیسا موازنہ مگر راوی کا اصرار ہے کہ بات سچ ہے۔ علامہ خادم حسین رضوی کی
مزید پڑھیے


’’غیرسیاسی باتیں‘‘

جمعرات 03 دسمبر 2020ء
ارشاد احمد عارف
کم و بیش بارہ چودہ سال پہلے کی بات ہے گپ شپ کے دوران برادرم عامر خاکوانی نے مجھے عمدہ کالم اور منفرد کالم نگار کے حوالے سے رائے دینے کو کہا‘ ایک ایسا اخبارنویس جو زندگی بھر اچھا کالم لکھنے کی خواہش سے مغلوب مگر تکمیل میں ناکام رہا وہ بھلا عمدہ کالم کی تعریف کا اہل کیونکر اور منفرد کالم نگار کی نشاندہی کے قابل کہاں‘ پھر بھی عرض کیا جس دن لکھنے کے لیے موضوع دستیاب نہ ہو‘ سارے ہی کالم نگار ٹامک ٹوئیاں مارنے میں مصروف ہوں اورپامال موضوع کو رگیدا جا رہا ہو کسی بظاہر
مزید پڑھیے