اسلام آباد (خصوصی نیوز رپورٹر)کابینہ کی اقتصادی رابطہ کمیٹی نے پی آئی اے کے احیانو منصوبہ کو منظوری کیلئے وفاقی کابینہ کے سامنے پیش کرنے کی سفارش کی ہے ، احیاء نو کے منصوبہ میں رضاکارانہ علیحدگی سکیم ، ہوابازی کے ماہرین کی خدمات کاحصول، بیڑے کی جدت، روٹس کومعقول بنانا اورمحصولات میں اضافہ کیلئے اقدامات شامل ہیں۔ای سی سی نے متعدد تکنیکی ضمنی گرانٹس کی منظوری بھی دی ہے ۔ اقتصادی رابطہ کمیٹی کااجلاس وفاقی وزیرخزانہ حماداظہرکی زیرصدارت منعقدہوا۔ اجلاس میں کابینہ کی کمیٹی برائے توانائی کے فیصلہ کے مطابق فوری طورپربندکئے جانیوالے پاورپلانٹس کے موجودہ ملازمین کے پنشن وواجبات کی ذمہ داری اور ڈسکوزکے سرپلس ملازمین کوپنشن اورپنشن سے متعلق مراعات کی ادائیگی کے ضمن میں جنیکوز کو ایک بارکی گرانٹ کی فراہمی سے متعلق سمری پیش کی گئی، ڈاکٹرعشرت حسین نے پی آئی اے کے آپریشنل ری سٹرکچرنگ بارے تفصیلی پریزینٹیشن دی۔ای سی سی نے پی آئی اے کے احیانوپلان کو منظوری کیلئے وفاقی کابینہ کے سامنے پیش کرنے کی سفارش کی۔اجلاس میں طیاروں کی مرمت وبحالی کیلئے وزارت دفاع کیلئے 33 کروڑروپے ، وزیراعظم کے سکلزفارآل حکمت عملی کے نفاذ کیلئے وزارت وفاقی تعلیم وپیشہ وارانہ اہمیت کیلئے دوارب، 38 کروڑ، 20 لاکھ ،انصاف امداد احساس پروگرام کے ضمن میں ری فنڈ کیلئے وزارت خزانہ کیلئے ایک ارب روپے ، صوبہ سندھ اوربلوچستان میں سرکاری شعبہ کے ترقیاتی پروگرام کے تحت مختلف سکیموں کی تکمیل کے ضمن میں وزارت توانائی کیلئے 38 کروڑ، 22 لاکھ، 80 ملین روپے ، بلوچستان میں سول ورک کے ضمن میں وزارت ہائوسنگ کیلئے 15 کروڑروپے ، سرمایہ کاری بورڈ کے مختلف اخراجات کیلئے 3 کروڑروپے اور انٹرنیٹ ووٹنگ کے نفاذاور کنسلٹنسی کے ضمن میں وزارت انفارمیشن ٹیکنالوجی وٹیلی مواصلات کیلئے 28 کروڑ روپے کے تکنیکی ضمنی گرانٹس کی منظوری دی گئی۔اجلاس میں اسدعمر، عمرایوب خان، محمدمیاں سومرو، فخرامام، عبدالرزاق داؤد، ڈاکٹروقارمسعود، وفاقی سیکرٹریز، گورنرسٹیٹ بینک، چیئرمین سرمایہ کاری بورڈ اورسینئرافسران نے شرکت کی۔