سرینگر(این این آئی) بھارت کی رمضان میں بھی دہشتگردی جاری ہے فائرنگ کر کے مزید 3کشمیری شہید کردیئے ۔تینوں نوجوانوں کو ضلع اسلام آباد کے علاقے ویلومیں تلاشی اور محاصرے کی کارروائی کے دوران شہید کیا گیا ،آئی جی پولیس نے جھڑپوں کا دعویٰ کیا ہے ، قابض انتظامیہ کی جانب سے پوری وادی کا محاصرہ جاری ہے ،بھارتی فوجی تلاشی کی کارروائیو ں کے دوران زبردستی گھروں میں داخل ہو کر کوروناو ائرس پھیلا رہے ہیں،تفصیلات کے مطابق غیر قانونی طور پر بھارت کے زیرتسلط جموں و کشمیر میں بھارتی فوجیوں نے اپنی ریاستی دہشت گردی کی تازہ کارروائی کے دوران منگل کو ضلع اسلام آباد میں تین اورکشمیری نوجوانوں کو شہید کردیا ۔ کشمیرمیڈیاسرو س کے مطابق فوجیوں نے نوجوانوں کو ضلع کے علاقے ویلومیں تلاشی اور محاصرے کی کارروائی کے دوران شہید کیا۔ آخری اطلاعات ملنے تک علاقے میں فوجی کارروائی جاری تھی ۔یاد رہے کہ مہلک کورونا وائرس میں مبتلا بھارتی فوجی گھر گھر تلاشی کی کارروائیو ں کے دوران زبردستی گھروں میں داخل ہو کر کوروناو ائرس پھیلا رہے ہیں جبکہ قابض انتظامیہ نے پوری مقبوضہ وادی کا محاصرہ کر رکھا ہے ۔ بھارتی فوج ، سینٹرل ریزروپولیس فورس اور بھارتی پولیس نے مشترکہ طورپر ضلع کے علاقے ویلو میں تلاشی اور محاصرے کی کارروائی شروع کی ہے ، آئی جی پولیس وجے کمار نے دعویٰ کیاہے کہ علاقے میں بھارتی فوجیوں اور مجاہدین کے درمیان جھڑپ جاری ہے ۔ صباح نیوز کے مطابق مقبوضہ جموں و کشمیر میں کورونا کرفیو میں توسیع کردی گئی ہے جبکہ 17 مئی تک سخت پابندیوں کا اعلان کر دیا گیا ہے ، حکام نے جموں وکشمیر کے تمام 20 اضلاع میں کورونا کرفیو میں 17 مئی کی شام 7 بجے تک توسیع کردی ہے ۔تازہ ترین حکم نامے کے مطابق اس بار کورونا کرفیو پہلے کے مقابلے میں سخت ہوگا اور اس دوران صرف میڈیکل اور کھانے پینے جیسی ضروری خدمات ہی کھولنے کی اجازت ہوگی اس دوران 25 سے زائد افراد کو شادی کی تقاریب میں شرکت کی اجازت نہیں ہوگی اس سے قبل کورونا کرفیو کی مدت 10 تاریخ کو صبح سات بجے تک ختم ہونے والی تھی،مقبوضہ جموں و کشمیر میں کووڈ کی دوسری لہر کی وجہ سے مثبت کیسز کی تعداد میں بہت تیزی سے اضافہ ہورہا ہے اور ہسپتالوں میں بیڈ بالخصوص آئی سی یو بیڈ کی شدید قلت ہوگئی ہے ۔مقبوضہ جموں و کشمیر میں کورونا وائرس کی قہر انگیز دوسری لہر میں اموات میں اضافہ کا سلسلہ جاری ہے ۔