لاہور (فورم رپورٹ : رانا محمد عظیم ، محمد فاروق جوہری )پاکستان روس اپنا ما ضی بھلا کر تعلقات کی بہتری کی طرف توجہ دے رہے ہیں ،روسی وزیر خارجہ کا دورہ پاکستان دونوں ممالک کے درمیان تعلقات کو مزید مضبوط کرے گا ،روس نے کورونا ویکسین پاکستان میں تیار کر نے کی بھی آ فر کی ہے جو کہ خوش آ ئند بات ہے ،اگر پاکستان اور روس میں دفاعی معاہدہ ہو جاتا ہے تو یہ ایک بڑی بات ہو گی ۔ ان خیالا ت کا اظہار خارجہ و عسکری امور کے ماہرین نے روزنامہ92نیوز فورم سے گفتگو کرتے ہوئے کیا۔ سابق وزیر خارجہ سردار آ صف احمد علی نے کہا کہ روسی وزیر خارجہ کا دورہ پاکستان ایک اچھی ڈویلپمنٹ ہے ،پاکستان اور روس کے درمیان تعاون کافی بڑھ گیا ہے روس نے کورونا ویکسین کی پاکستان میں تیاری میں بھی مدد کرنے کا علان کیا ہے ، روس کے ساتھ بہتر تعلقات ہمارے مفاد میں ہیں کچھ عرصہ میں مزید باتیں کلئیر ہو جائیں گی ۔ یوکرائن میں پاکستان کے سابق سفیر جنرل (ر)زاہد مبشر شیخ نے کہا کہ روسی وزیر خارجہ نو سال بعد پاکستان آ ئے ہیں عالمی سیاست میں نئی صف بندی ہو رہی ہے اور اس صف بندی کو دیکھتے ہوئے حالیہ دورہ بہت اہمیت کا حامل ہے ،اگر رو س اور پاکستان قریب آ تے ہیں تو ا مریکہ کا اثر اس خطہ میں کم ہو گا ،انہوں نے کہا کہ اگر پاکستان اور روس میں ڈیفنس معاہدہ ہو جاتا ہے تو یہ ایک بڑی بات ہو گی۔ معروف تجزیہ کار عبد اﷲ گل نے کہا کہ پاکستان اور روس کے درمیان تعلقات پچیدہ چل رہے تھے ،اب بھارت نے امریکہ کے ساتھ دفاعی معاہدہ کر لیا ہے تو اس صورتحال میں پاکستان کو روس کے ساتھ تعلقات کو بہتر کرنا ہو گا ، انہوں نے کہا کہ جنرل حمید گل مرحوم نے کہا تھا کہ ہمیں ماسکو بیجنگ کے راستے سے جانا چاہئے اور پاکستان اب یہی کر رہا ہے اور اگر افغانستان کے حالات بہتر ہو جاتے ہیں تو سی پیک کا روٹ افغانستان کے راستے سے روس تک جائے گا ، جس میں پاکستان کا فائدہ ہی ہے ۔