سرینگر (این این آئی، آ ن لا ئن )بدنام زمانہ بھارتی تحقیقاتی ادارے ’’ نیشنل انویسٹی گیشن ایجنسی ( این آئی اے ) نے دختران ملت کی غیر قانونی طور پر نظر بند چیئرپر سن آسیہ اندرابی کے گھر کو سرینگرمیں ضبط کر لیاہے ۔مقبوضہ کشمیر میں لاپتہ افراد کے والدین کی تنظیم ’’ای پی ڈی پی‘‘ نے بھارتی فورسز کے ہاتھوں لاپتہ اپنے پیاروں کے بارے میں معلومات کی فراہمی کے مطالبے پر زور دینے کیلئے پرتاپ پارک سرینگر میں پر امن احتجاجی دھرنا دیا ۔کشمیر میڈیاسروس کے مطابق ’این آئی اے ‘‘ نے سرینگر کے علاقے صورہ میں واقع آسیہ اندرابی کے گھر کے باہر چسپاں کیے جانے والے حکمنامے میں تمام متعلقین سے کہا کہ وہ پیشگی اجازت کے بغیر مذکورہ گھرکی خرید و فروخت نہ کریں۔ این آئی اے کے تحقیقاتی افسر اعلیٰ وکاس کیتھیرائی نے کہا کہ آسیہ اندرابی کے گھر کو مقبوضہ کشمیر کے ڈائر یکٹرجنرل پولیس کی منظور ی کے بعد ضبط کیا گیا۔ تحقیقاتی ادارے شبیر احمد شاہ اور غلام محمد خان سوپوری کے گھروں اور جموں وکشمیر لبریشن فرنٹ اور جماعت اسلامی مقبوضہ کشمیر سمیت دیگر آزادی پسند تنظیموں اور لوگوں کی جائیدادیں اور دفاتر پہلے ہی ضبط کر چکے ہیں۔ جموں وکشمیرمسلم کانفرنس کے چیئرمین شبیر احمد ڈار نے بدنام زمانہ بھارتی تحقیقاتی ادارے ’این آئی اے ‘ کی طرف سے دختران ملت کی غیر قانونی طور پر نظربند سربراہ آسیہ اندرابی کے مکان کو ضبط کرنے کی شدید مذمت کرتے ہوئے کہا کہ اس طرح کے اوچھے ہتھکنڈوں سے آسیہ اندرابی اوردیگر حریت رہنمائوں کو حق خود ارادیت کے مطالبے سے دستبردار نہیں کیا جاسکتا ۔ادھر لاپتہ افراد کے والدین کی تنظیم ’’ای پی ڈی پی‘‘ کے ساتھ وابستہ بیسیوں افراد نے جن میں خواتین کی ایک بڑی تعداد شامل تھی ہاتھوں میں پلے کارڑز اور بینرز اٹھا رکھے تھے جن پر لاپتہ افراد کی تصاریر موجود تھیں اور مختلف نعرے درج تھے ۔ علا وہ ازیں انسانی حقوق کمیشن نے غیر قانونی طورپر نظربند جموں وکشمیر لبریشن فرنٹ کے چیئرمین محمد یاسین ملک کے کیس میں کمیشن کے سامنے پیش نہ ہونے پر محکمہ داخلہ کے ڈپٹی سیکرٹری مشتاق احمد کی وارنٹ گرفتاری جاری کئے ہیں ۔ کشمیرمیڈیا سروس کے مطابق کمیشن کے رکن دشاد شاہین نے یہ وارنٹ گرفتاری سرینگر میں انسانی حقوق کے کارکن محمد احسن انتو کی طرف سے دی جانے والی ایک درخواست پر جاری کی ہے ۔ درخواست گزار نے بتایا کہ نوٹس کے باوجود ڈپٹی سیکرٹری جواب دینے میں ناکام رہے ہیں۔