اسلام آباد (وقائع نگار خصوصی) پیپلز پارٹی رہنمائوں نے کہا ہے کہ سلیکٹڈ حکومت ملک کیلئے جگ ہنسائی کاسبب بن رہی ہے ،پیپلزپارٹی کومزاحمتی سیاست آتی ہے ،زرداری کوئی سوداکرنے کوتیار نہیں ہیں،غیر جمہوری حکومت سلیکٹڈ وزیر اعظم اور کابینہ کے دن گنے جا چکے ، میڈیا کوڈکٹیشن فسطائیت اور مطلق العنانیت سوچ کی عکاس ہے ۔ ڈاکٹر نفیسہ شاہ نے ایک بیان میں کہا کہ عمران خان ڈرائیور تو بن سکتے ہیں مگر سٹیٹ مین نہیں بن سکتے ۔ انکی نالائقی کے قصے اب عالمی شہرت پار ہے ہیں۔ عمران خان کے پاس حکومت کرنے کا وقت تو ختم ہوا چاہتا ہے مگر جب تک چند دنوں کیلئے یہی منصب پر فائز ہیں ،اس منصب کی لاج رکھنے کیلئے انہیں سفارتی آداب سمجھنے کی ضرورت ہے ۔ سینیٹر شیری رحمن نے کہا کہ چیئرمین سینیٹ کو ہٹانے کا معاملہ کسی کی ذات کا معاملہ نہیں،ایوان کوچیئرمین سینٹ پر اعتماد نہیں رہا تو وہ خود ہی مستعفی ہوجائیں۔پیپلز پارٹی کو کہاں ریلیف ملا ہے ؟پیپلز پارٹی کو مزاحمتی سیاست کرنا آتی ہے ۔آصف زرداری بغیر کسی جرم کے 12 سال قید کاٹ چکے ، زرداری کوئی سودا کرنے کو تیار نہیں۔پیپلزپارٹی کے سیکرٹری جنرل سید نیئربخاری نے کہاکہ میڈیامیں تشہیر پر پابندی کا آغاز وزیراعظم اورانکے خاندان سے کیا جائے ، عمران خان خود ہیلی کاپٹر کیس میں زیر تفتیش ہیں،بنی گالہ کی غیر قانونی تعمیرات اور تجاوزات کا معاملہ سپریم کورٹ میں زیر سماعت ہے ۔ نیئر بخاری نے کہا کہ آدھی سے زائد کابینہ نیب زدگان پر مشتمل ہے ، منشیات برآمدگی مقدمہ کا پتہ وفاقی وزیر کی سرکاری رہائشگاہ کا ہے ۔نیئربخاری نے کہا کہ مہنگائی کے ہاتھوں تنگ لوگوں کا سونامی اور بے روزگاری سے مجبوروں کا سیلاب سلیکٹڈ حکمرانوں کو جلد گمنامی کے گہرے سمندر میں پھینک دے گا۔