لاہور(میاں رؤ ف)سیف سٹی پروجکیٹ کے افسران اپنے ہی پر وجکیٹ کی بیٹر یا ں چو ری کر نے وا لو ں کو پکڑ نے میں نا کا م ہوگئے ،اکثر کیمرے نہ چلنے کی وجہ سے منصوبہ افا دیت کھو بیٹھا ،شہر میں ہو نے وا لی سینکڑوں ڈکیتی، چوریوں ، قتل اور دیگر وارداتوں کی فوٹیج کیمرے خراب ہونے کی وجہ سے میسر نہیں ہو پا تی ، با وثو ق ذرا ئع کے مطا بق شہر کی سب سے معروف مال روڈ پر سخت سیکورٹی کے باوجود چور سیف سٹی کیمروں کی نصب شدہ14بیٹریاں چوری کرکے لے گئے ایک بیٹری کی قیمت ایک لاکھ سے زائد ہے ، پولیس اور متعلقہ ادارہ ان بیٹری چوروں کو گرفتار نہیں کرسکا، ذرائع کا کہنا ہے کہ بیٹریاں سڑک یا چوراہوں میں موجود گرین بیلٹ میں سبز رنگ کے باکس میں رکھی گئی ہیں ، رات گئے کوئی حفاظتی انتظام دکھائی نہیں دیتا، پراجیکٹ کے بیشتر کیمرے خراب ہیں ، پولیس کو فوٹیج نے ملنے کے باعث تفتیش میں مشکلات کا سامنا ہے ، پولیس ذرائع کے مطابق تھانہ ٹاون شپ کے علاقہ سے شہری کے اغوا کے مقدمہ میں اے ایس آئی شہزاد درخواست گذار کے ہمراہ سیف سٹی کیمرہ سپاٹ 6236 کی فوٹیج کے لئے پہنچا تو بتایا گیا ان کے مطلوبہ وقت شام 7 سے 8 بجے کی فوٹیج میسر نہیں ہے ، پولیس ذرائع کا کہنا ہے متعدد مقدمات میں پولیس کو درکار فوٹیج تفتیش میں بہت مدد گار ثابت ہو سکتی ہے مگر فوٹیج نہ ملنے سے مشکلات کا سامنا کرنا پڑ جاتا ہے ، شہر کے پوش اور دیہی علاقوں ڈیفنس، برکی، شیرا کوٹ، شاہدرہ، شفیق آباد، سندر، مانگا منڈی، رائے ونڈ، مصری شاہ، بادامی باغ، شادباغ، گجر پورہ، باغبانپورہ، ہربنس پورہ، غازی آباد، شالیمار، ہڈیارہ، مناواں کے علاقوں میں قتل و غارت کے علاوہ بچوں کے اغوا کی وارداتوں میں بھی اضافہ دیکھنے میں آیا ، سیف سٹی حکا م کا کہنا ہے بیٹریا ں چو ری کر نے وا لو ں کو جلد قا نو ن کے شکنجے میں لا یا جا رہا ہے ۔