اسلام آباد (سپیشل رپورٹر،این این آئی) سینٹ قائمہ کمیٹی برائے خزانہ نے کمپنیز ایکٹ میں ترمیم کے ذریعے شیئرز پر ڈیویڈنڈ کی ادائیگی کو لازم بنانے کا بل منظور کرلیا۔چیئرمین فاروق نائیک کی زیر صدارت قائمہ کمیٹی خزانہ کے اجلاس ہوا میں بل سینیٹر غوث محمد خان نے پیش کیا ۔ وزارت خزانہ نے کہاکہ حکومتی پالیسی کے مطابق کسی محکمے یا ادارے کو اضافی گرانٹ نہیں دی جا سکتی، اضافی گرانٹ ایمرجنسی کی صورت میں منظور کی جا سکتی ہے ۔اجلاس میں ایف بی آر حکام نے بتایا کہ بیرون ملک سے لائے گئے فون پر مقامی سم 2 ماہ تک استعمال ہوسکتی ہے ،اس کے بعد ٹیکس ادا کرنا ہوگا۔ گزشتہ 8 ماہ میں موبائل فونز رجسٹریشن سے 7 ارب روپے ٹیکس وصول کیا گیا ، ٹیکس ادا نہ کرنے پر 6 لاکھ 75 ہزار موبائل فون بلاک کیے گئے ۔اجلاس میں کسٹمزحکام نے افغان سرحد سے سمگلنگ کا اعتراف کیا،حکام کا کہنا تھا کہ بلوچستان کے بعض علاقوں سے بھی سمگلنگ ہورہی ہے ، سمگلنگ روکنے کیلئے افرادی قوت کی قلت ہے ۔سینیٹر شبلی فراز نے کہاکہ انڈر انوائسنگ کے ذریعے بھی سمگلنگ ہوتی ہے ، دہشتگردی سے زیادہ خطرناک معاشی دہشتگردی ہے ۔قومی اسمبلی قائمہ کمیٹی ریلوے نے ریلویز میں بھرتیوں کی تفصیلات طلب کرلیں جکبہ ریلوے کے مختلف شعبوں میں کام کرنیوالے انجینئرز کوٹیکنیکل الاؤنس دینے کی سفارش کی اورریلوے اراضی پر تجاوزات کا معاملہ دیکھنے کیلئے ذیلی کمیٹی تشکیل دیدی۔قومی اسمبلی کی قائمہ کمیٹی برائے سمندر پار پاکستانیز کو بتایاگیاکہ سعودی عرب سے 579 قیدی رہا کیے گئے ،قیدیوں کو ولی عہد کے دورے کے بعد شاہی حکم پر رہا کیا گیا۔ حکام نے بتایاکہ سعودی حکام نے 3ہزار 396پاکستانیوں کو بے دخل کرکے بھی وطن واپس بھیجا۔سینٹ قائمہ کمیٹی کابینہ سیکرٹریٹ نے کراچی میں کرنٹ سے اموات پر تشویش کا اظہار کرتے ہوئے عوامی شکایات سننے کیلئے کراچی کے دورے کا اعلان کردیا، جہاں عوامی سماعت ہوگی، قائمہ کمیٹی نے بجلی کی بڑھتی ہوئی قیمتوں پر تشویش کا اظہارکیا ۔ بجلی کی پیداوار، تقسیم اور ضابطہ کار سے متعلق الیکٹرک پاور ترمیمی بل آئندہ اجلاس تک موخر کردیا گیا۔