نیویارک( ندیم منظور سلہری سے ) شکاگو میں بھارتی قونصلیٹ کے سامنے مقبوضہ کشمیر میں بھارتی مظالم، ہٹ دھرمی اور آٹھ لاکھ کشمیریوں کو قید رکھنے کیخلاف بھرپور احتجاجی مظاہرہ کیاگیا جس میں پاکستانی، یہودی، عیسائی اور سکھ رہنماؤں کی بڑی تعداد شریک ہوئی۔بھارتی امریکن تھنک ٹینک اور بھارتی کمیونٹی کے رہنماؤں نے بھی خصوصی طور پر مظاہرے میں شرکت کی۔اس موقع پر خطاب کرتے ہوئے کشمیری رہنماجاوید راٹھور، ارشاد خان، ریورین ڈاکٹر بیتھ براون، پروفیسر سکاٹ الیگزینڈر ، یہودی ربائی برینٹ روزن، امام مصطفیٰ ، صبا خان، رفیدہ حمید اور دیگر نے خطاب کرتے ہوئے کہا بھارت نے مقبوضہ کشمیر میں گزشتہ ایک ماہ سے کرفیو لگا رکھا ہے اور بیماروں کیلئے ہسپتالوں کے دروازے بند کر دئیے گئے ہیں، سوچے سمجھے منصوبے کے تحت ادویات ، خوراک، پانی اور دیگر روزمرہ ضروریات کی ترسیل بند ہے ، مقبوضہ کشمیر کربلا کا منظر پیش کر رہا ہے جبکہ بھارتی انتہا پسند تنظیم آر ایس ایس کے غنڈے اور دہشتگرد فوجی وردیاں پہن کر کشمیریوں کی نسل کشی کر رہے ہیں جس پر عالمی ادارے خصوصاً اقوام متحدہ، او آئی سی ، یورپی یونین، انسانی حقوق کی تنظیمیں خاموش تماشائی بنی ہیں۔ بھارت اگر یہ سمجھ رہا ہے کہ وہ کشمیریوں پر ظلم و ستم کے پہاڑ توڑ کر اپنے مذموم مقاصد حاصل کر لے گا تو یہ اسکی بھول ہے ، کشمیر پہلے بھی کشمیریوں کا تھا اب بھی ہے ۔