لاہور(گوہر علی) پنجاب میں پراونشل ایمپلائز سوشل سکیورٹی ترمیمی آرڈیننس 2019کی منسوخی کا خدشہ پیدا ہوگیا جس سے پنجاب میں ملازمین کی اجرت اور سماجی تحفظ سے متعلقہ معاملہ متاثر ہوسکتاہے ،پراونشل ایمپلائز سوشل سکیورٹی ترمیمی آرڈیننس 16 اپریل کو90دن کے لئے جاری کیاگیا ،اس آرڈنینس کو22اپریل کو پنجاب اسمبلی میں پیش کیا گیا لیکن پنجاب اسمبلی سے یہ 90دن میں منظور نہ ہوسکا جس کے بعد اس کی آرڈنینس کی26جون کو دوبارہ پنجاب اسمبلی سے مزید 90دن کی توسیع لی گئی لیکن اس کے باوجود پنجاب اسمبلی نے اس آرڈنینس کو منظور نہیں کیا، 26جون کو اس آرڈنینس کی دوبار ہ توسیع لینے کے باوجود 14اکتوبر کو اس کی مدت ختم ہوجائے گی اور اگر14اکتوبر کورات بارہ بجے سے قبل اس آرڈنینس کی پنجاب اسمبلی سے تیسری بار توسیع نہ لی گئی تویہ منسوخ تصور ہوگا جس سے پنجاب میں ملازمین کی اجرت اور سماجی تحفظ سے متعلقہ حکومتی فیصلہ متاثر ہوگا ۔ذرائع کے مطابق پنجاب اسمبلی کے آج ہونے والے اجلاس میں اس آرڈنینس کی تیسری بار توسیع کو ایجنڈے پر نہیں رکھا گیا اور آج پنجاب اسمبلی کا اجلاس غیر معینہ مدت کے لئے ملتوی کرنے کا امکان ہے جس کی وجہ سے اب اس آرڈنینس میں اسی صورت توسیع ہوسکتی ہے کہ 14 اکتوبررات بارہ بجے سے قبل دوبارہ پنجاب اسمبلی کا اجلاس بلایا جائے ۔ذرائع کے مطابق اس پیچیدہ صورت حال پر محکمہ قانون کے افسران اور پارلیمانی امور کے ماہرین نے سرجوڑ لئے اور آرڈنینس کو برقرار رکھنے کے لئے مختلف تجاویز پر غور کررہے ہیں۔