نئی دہلی ( 92 نیوزرپورٹ ، نیٹ نیوز )مقبوضہ کشمیرکی آئینی حیثیت تبدیل کرنے کے معاملے پرکانگریسی رہنمائوں نے مودی حکومت کو سنگین نتائج سے خبردارکردیا۔ مدھیہ پردیش کے سابق وزیر اعلیٰ اور کانگریس کے جنرل سیکرٹری ڈِگ وجے سنگھ نے کہا آرٹیکل 370ختم کرکے حکومت نے اپنے ہاتھ جلا ڈالے ۔انہوں نے مودی حکومت کو تنبیہ کی ہے کہ اگر اس نے احتیاط سے کام نہ لیا توکشمیر کی صورتحال مکمل بے قابو ہو جائے گی۔تامل ناڈوسے رکن لوک سبھاوائیکونے مودی سرکار کوانتباہ کیاکہ 100ویں یوم آزادی پرکشمیربھارت کیساتھ نہیں ہوگا،بی جے پی حکومت نے کشمیرکوکیچڑمیں پھینک دیاہے ۔ سابق بھارتی وزیراعظم منموہن سنگھ نے بھی آرٹیکل 370 ختم کرنے کو غلط فیصلہ قرار دیدیا۔منموہن سنگھ نے مقبوضہ کشمیر کی صورتحال پر تشویش کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ حکومت کے فیصلے کو بہت سے بھارتی بھی پسند نہیں کررہے ۔حکومت نے کشمیر کی خصوصی حیثیت ختم کرنے سے پہلے کشمیریوں کی بات تک نہیں سنی۔بھارت کے حق میں یہی بہتر ہے مخالفین کی بات سنی جائے ۔بھارت کے سابق یونین وزیر اور کانگریس کے رہنما پی چدم برم نے کہا ہے کہ مقبوضہ جموں و کشمیر کی حیثیت کی تبدیلی مذہبی جنونیت کی وجہ سے ہے ۔ مسلم اکثریتی ریاست ہونے کی وجہ سے آرٹیکل 370 کو ختم کیا گیا۔ مقبوضہ کشمیر کی کی صورتحال غیرمستحکم ہے اور بین الاقوامی خبررساں اداے اس بدامنی کو رپورٹ کر رہے ہیں لیکن بھارتی میڈیا ہاؤسز نہیں۔