اسلام آباد،واشنگٹن(این این آئی)عالمی بنک اور آئی ایم ایف نے کہا ہے کہ قرض دینے والے امیر ممالک سے دنیا کے غریب ترین ممالک کے ذمہ دوطرفہ قرضوں کی ادائیگیاں معطل کرنے کی سفارش کریں گے ، امیر ممالک سے انٹرنیشنل ڈویلپمنٹ ایسوسی ایشن کے قرضوں کی واپسی کا عمل بھی روک دینے کی سفارش کریں گے ۔مشترکہ اعلامیہ میں کہا گیا کہ کرونا وائرس سے غریب ممالک کی معیشتوں کو سخت نقصان پہنچ رہا ہے ،اس اقدام سے ان ترقی پذیر ممالک کو فوری مالی ضرورتوں کو پورا کرنے میں مدد ملے گی۔ اعلامیہ میں مزید کہا گیا ہے کہ اقدام سے بحران کے اثرات کا تخمینہ اور مالی ضرورتوں کیلیے وقت ملے گا۔ اعلامیہ میں کہا گیا کہ جی 20 ممالک پر زور دیں گے کہ کروناوائرس کے نقصانات کا تخمینہ لگانے کا ٹاسک دیں ،عالمی بینک اور آئی ایم ایف کی موسم بہار اجلاسں میں ترقیاتی کمیٹی سے اس تجویز کی منظوری مانگیں گے ۔ دریں اثنا آئی ایم ایف کی صدر کرسٹینا جارجیوا نے خبردار کیا ہے کہ انہیں خدشہ ہے کہ کرونا وائرس کے پھیلائو سے دنیا بحران کی جانب جارہی ہے ۔ بیان میں ان کا کہنا تھا کہ وبا کے پھیلائو سے اب تک 80 ممالک اس کے نتائج سے نمٹنے کے لیے آئی ایم ایف سے رابطہ کرچکے ہیں ،آئی ایم ایف پالیسی اقدامات پر توجہ دے رہا ہے تاکہ بحران کے اثرات کو کم کیا جاسکے اور جنہیں مالی ضرورت ہے ان کی مدد کرنے کیلئے تیار ہیں، ہم ہنگامی فنانسنگ کو مزید بڑھائیں گے ۔ 2020 میں عالمی نمو منفی ہے اور بدترین بحران کا خدشہ ہے ۔