واشنگٹن میں پاکستانی سفارت خانہ میں بچیوں کے عالمی دن کی تقریب میں امریکہ میں مقیم پاکستان کے سفیر اسد مجید کی اہلیہ زنائرہ اسد نے کہا ہے کہ کشمیر میں بھارتی فوج کشمیری بچیوں کی عصمت ریزی کر کے مفلوج بنا رہی ہے۔ بھارت گزشتہ 78 روزسے مقبوضہ کشمیر میں ذرائع ابلاغ معطل اور بدترین کرفیو نافذ کرنے کے باوجود کشمیریوں کے جذبہ حریت کو دبانے میں ناکام ہے۔ بھارتی فوج کشمیر میں جو انسانیت سوز مظالم ڈھا رہی ہے ان کے خلاف نہ صرف دنیا بلکہ خود بھارت میں انصاف پسند حلقے سراپا احتجاج ہیں۔ ظلم روا رکھنے والی فوج کے روشن ضمیر اور انسان دوست فوجی بھی بے گناہ انسانوں سے سفاکانہ سلوک کے بجائے خودکشی کرنے کو ترجیح دے رہے ہیں۔ پہلے تو بے گناہ نہتے کشمیریوں پر پیلٹ گنز کا استعمال کیا جا رہا تھا مگر بدترین کرفیو کے باوجود کشمیری شہدا کے جنازوں میں لاکھوں کشمیریوں کی کرفیو توڑ کر شرکت کے بعد بھارتی فوج کشمیری خواتین کو جنگی ہتھیار کے طور پر استعمال کر رہی ہے۔ مودی سرکار کے تعصب پسند ہندو رہنما فوج کو مظالم کی شہہ دے رہے ہیں اور اس کا ثبوت بھارت کے ایک گورنر اور بی جے پی کے ایک وزیر کی طرف سے کشمیری دلہنیں لانے کا بیان ہے۔ اس تناظر میں دیکھا جائے تو بھارت کا کشمیر پر غاصبانہ قبضہ نہ صرف عالمی قوانین کی خلاف ورزی ہے بلکہ بھارتی فوج کا کشمیریوں سے انسانیت سوز سلوک بھی عالمی ضمیر کے منہ پر طمانچہ بھی ہے۔ بہتر ہو گا عالمی برادری بھارتی مظالم کا نوٹس لیتے ہوئے مسئلہ کشمیر کے پرامن حل کے لئے عملی اقدامات کرے۔