اسلام آباد(سپیشل رپورٹر؍وقائع نگار) وزیرِ اعظم عمران خان کی زیر صدارت سرکاری املاک و اثاثوں کی نجکاری میں پیش رفت کا جائزہ لینے کیلئے اجلاس ہوا۔سیکرٹری نجکاری ڈویژن نے اجلاس کے شرکاء کو حویلی بہادر شاہ ، بلوکی پاور پلانٹ، ایس ایم ای بینک، جناح کنونشن سنٹر، ماڑی پٹرولیم میں حکومتی شیئرز کی فروخت، لاکھڑا کوئلے کی کان جیسی سرکاری املاک کی نجکاری کے حوالے سے پیش رفت سے آگاہ کیا۔اس موقع پر وزیرِ اعظم عمران خان نے کہا ماضی کی حکومتوں کی جانب سے ملک کو قرضوں کی دلدل میں دھکیل دیا گیا، ایک ایسا ملک جو روزانہ کی بنیاد پر تقریبا 7 ارب روپے محض قرضوں کی قسطیں ادا کرنے کیلئے خرچ کر رہا ہو، وہاں غیر منافع بخش اثاثوں اور غیر استعمال شدہ املاک کو بروئے کار نہ لانا ناقابلِ فہم ہے ۔ انہوں نے کہا ہزاروں ایکڑ غیر استعمال شدہ سرکاری اراضی کو بروئے کار لا کر نہ صرف حکومتی خسارے کو کم کیا جا سکتا ہے بلکہ ترقیاتی عمل کو بھی مزید آگے بڑھایا جا سکتا ہے ۔ انہوں نے کہا سرکاری املاک کے بارے میں حکومت کو معلومات فراہم نہ کرنے والے سرکاری اہلکاروں کے خلاف کارروائی کی جائیگی۔وزیرِ اعظم نے ہدایت کی کہ کثیر المنزلہ عمارات کی تعمیر کے حوالے سے حکومتی پالیسی کے تحت قواعد و ضوابط کو جلد از جلد حتمی شکل دی جائے ۔علاوہ ازیں وزیراعظم کی زیر صدارت غیرقانونی گیس کنکشنز، گیس تقسیم کار کمپنیوں کی کارکردگی اور ترسیلی نظام میں خامیوں کے باعث گیس کے ضیاع کی روک تھام کے حوالے سے اجلاس ہوا۔ذرائع کے مطابق وزیر اعظم نے گیس کے ضیاع سے قومی خزانے کو 45ارب کے نقصانات پر ناپسندیدگی کا اظہار کرتے ہوئے کمپنیوں کی سنجیدہ بنیادوں پر اقدامات اٹھانے کی ہدایت کی۔وزیرِ اعظم نے کہا سسٹم کی خامیوں اور انتظامی کوتاہیوں کا نتیجہ گیس کی قیمت میں اضافے اورصارفین پر بوجھ کی صورت میں نکلتا ہے جو ناقابل قبول ہے ۔وزیراعظم نے بعض مقامات پر گیس کی مین لائن پر غیر قانونی کنکشنز اور اس غیر قانونی کارروائی کے نتیجے میں بڑے پیمانے پر کسی حادثے کے خدشے پر گہری تشویش کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ غیر قانونی کنکشنز کے خلاف نہ صرف فوری طور پر کریک ڈاؤن کیا جائے بلکہ گیس چوری میں معاونت فراہم کرنے والے گیس کمپنیوں کے اہلکاروں کے خلاف بھی سخت ترین کارروائی یقینی بنائی جائے ۔وزیراعظم نے ٹورازم سمٹ سے خطاب کرتے ہوئے کہا سیاحت سے ملک میں زرمبادلہ آئے گا اور لوگوں کو روزگار بھی ملے گا،حکومت کا کام سڑک بنانا، رکاوٹیں دور کرنا اور تحفظ دینا ہے ، باقی کام نجی شعبے کریں گے ۔عمران خان نے کہا سیاحت کی وجہ سے ہی گزشتہ 5 سالوں میں خیبرپختونخوا میں غربت کم ہوئی۔ وزیراعظم نے تقریب میں موجود مشیر برائے اوور سیز پاکستانیز کے حوالے سے بات کرتے ہوئے کہا کہ زلفی بخاری نے ایسے کپڑے پہنے ہوئے ہیں جیسے فرانس کی سیاحت کا پروگرام ہو۔مزیدبرآں وزیرِ اعظم نے سی ڈی اے کووفاقی دارالحکومت میں واقع تمام عمارات میں معذور افرادکے لئے تمام مطلوبہ سہولتوں کی فراہمی کو یقینی بنانے کے لئے فوری اقدامات کی ہدایت کی ہے ۔ وزیرِ اعظم نے سی ڈی اے کو ماہانہ بنیادوں پر پیش رفت سے آگاہ کرنے کی بھی ہدایت کی۔دریں اثناء وزیر اعظم سے گورنر خیبر پختونخوا شاہ فرمان اور وزیرِ اعلیٰ محمود خان نے ملاقات کی جس میں پختون خوا میں انضمام شدہ قبائلی علاقہ جات کی تعمیر و ترقی کے حوالے سے امور پر تبادلہ خیال کیاگیا ۔وزیر اعلیٰ پنجاب کے مشیر عون چودھری نے بھی وزیر اعظم سے ملاقات کی ہے ۔ گلوبل ریڈیئنس گروپ کے چیئرمین عبداللطیف صدیقی نے وزیراعظم سے ملاقات کرکے ڈیم فنڈ کیلئے ایک لاکھ ڈالر کا عطیہ دیا۔وزیراعظم سے پاکستانی نژاد برطانوی پارلیمنٹرین اور کنزرویٹوپارٹی کی رہنما سعیدہ وارثی بھی ملیں۔ ملاقات میں خطے کی امن وامان کی صورتحال سمیت مختلف امورپر تبادلہ خیال کیا گیا۔ذرائع کے مطابق وزیر اعظم نے سعیدہ وارثی کو مقبوضہ کشمیر میں انسانی حقوق کی خلاف ورزیوں سے آگاہ کیا ۔این این آئی کے مطابق وزیراعظم نے پالیسی سازی میں نوجوانوں کو شامل کرنے کا فیصلہ کیا ہے جس کے تحت یوتھ کونسل بنائی جائے گی، وزیراعظم یوتھ کونسل کے پیٹرن ان چیف ہوں گے جبکہ یوتھ کونسل مختلف شعبوں کے 22 ارکان پرمشتمل ہوگی۔وزیر اعظم آج حیدر آباد میں یونیورسٹی کا سنگ بنیاد رکھیں گے ۔