لاہور(حنیف خان)محکمہ آبپاشی کے اعلی حکام کی مبینہ سست روی کے باعث پنجاب بھرمیں نہری نظام کو کنٹرول کرنے والے افسران اور ملازمین کو تنخواہیں ادا نہیں کی گئیں جس کے باعث پروگرام مانیٹرنگ اینڈ ایمپلیٹیشن (پی ایم آئی)یونٹ کے 145افسران سمیت ملازمین عید الاضحیٰ کی خوشیاں دوبالا کرنے سے محروم رہ گئے اور ذمہ داران کو بددعائیں دیتے رہے جبکہ وزیر اعلی پنجاب سے تنخواہوں کی عدم ادائیگی کا نوٹس لینے کی اپیل کی ہے ۔تفصیلات کے مطابق محکمہ آبپاشی میں پی ایم آئی یونٹ ہے جہاں سے پنجاب بھر میں نہری نظام کوکنٹرول کیا جاتا ہے اور یہاں سے پانی چوری کی روک تھام کرنے سمیت مانیٹرنگ کا کام کیا جاتا ہے اس کے علاوہ سیلاب سے بچائوکے لئے عملہ بھی مذکورہ یونٹ میں فرائض سرانجام دے رہا ہے ۔باوثوق ذرائع نے بتایا کہ پی ایم آئی یونٹ میں کام کرنے والے ایس ڈی اوز،سب انجینئرز،آپریٹرز سمیت دیگر ملازمین جن کی تعداد 145سے زائد ہیں ان کو گزشتہ دوماہ سے تنخواہیں ادا نہیں کی گئیں۔ذرائع نے بتایا کہ محکمہ آبپاشی کے افسران نے تنخواہوں کی ادائیگی کا کیس فائلوں کی نذر کررکھا ہے ۔تنخواہوں کی ادائیگی کا عمل یقینی بنانے کے لئے متاثرافسران اور ملازمین نے سیکرٹری آبپاشی آفس سے بھی متعدد بار رابطہ کیالیکن حکام اس معاملے پر ٹال مٹولی سے کام لیتے رہے ۔تنخواہوں سے محروم افسران اور ملازمین نے کہا کہ قربانی کا جانور لانا تھا اورتنخواہوں کی عدم ادائیگی کے باعث نہ صرف سنت ابراہیمی کی ادائیگی سے محروم ہوگئے ہیں بلکہ بچوں کی شاپنگ بھی نہیں کی جاسکی۔وزیر اعلی پنجاب سے اپیل ہے تنخواہیں ادا نہ کرنے والے افسران کے خلاف ایکشن لیں تاکہ آئندہ کوئی مجرمانہ غفلت نہ برتیں۔