اسلام آباد؍ لاہور(سپیشل رپورٹر؍وقائع نگار؍ مانیٹرنگ ڈیسک ) وزیراعظم عمران خان نے کہا ہے کہ مہنگائی سے عوام کی پریشانی کا احساس ہے ، دو ہفتے رہ گئے ، سمندر سے گیس نکل آئی تو 50 سال کیلئے مسئلہ حل ہوجائیگا، جب تک اصلاحات چلیں گی، ملک میں مشکل وقت رہے گا، اپوزیشن کا جمہوریت کو بچانے کا مطلب اپنی کرپشن بچانا ہے ۔تحریک انصاف کے 23 ویں یوم تاسیس کے سلسلے میں تقریب سے خطاب کرتے ہوئے وزیراعظم نے کہا پاکستان واحد ملک تھاجو اسلام کے نام پر بنا، ہم نے دنیا کیلئے اسلامی فلاحی ریاست کی مثال بننا تھا مگر ہم اس مقصد سے پیچھے ہٹ گئے ،اب ہم نے ملک کو اسلامی فلاحی ریاست کی طرف لے کر جانا ہے ، میرے رول ماڈل صرف نبی ? ہیں، دو قسم کی سیاست ہوتی ہے ایک اپنی ذات اور دوسری اﷲ کیلئے ، جب سیاست اﷲ کیلئے ہوتی ہے تو اس میں وقت لگتا ہے ۔اپوزیشن کو تنقید کا نشانہ بناتے ہوئے وزیراعظم نے کہا یہ لوگ کہتے ہیں کہ بہت مہنگائی ہو گئی، اس میں کوئی شک نہیں کہ مہنگائی ہے اور ہمیں اس کا بھی احسا س ہے کہ لوگ پریشان ہیں۔ انہوں نے کہا ایک طرف مولانا فضل الرحمان ہمارے خلاف تیاری کر رہا ہے تو ایک طرف بلاول بھٹو صاحب ہمارے خلاف باتیں کرتے ہیں،سمجھ نہیں آتی کہ شام کو ٹی وی پر عجیب شکلیں بنا کر کہتے ہیں پی ٹی آئی نے یہ کر دیا، وہ کر دیا، یہ سب لوگ اسمبلی میں شور مچاتے ہیں اور جمہوریت بچانے کی باتیں کرتے ہیں، ان لوگوں کا جمہوریت کو بچانے کا مطلب اپنی کرپشن کو بچانا ہے ، یہ لوگ صرف این آر او کیلئے اسمبلی میں شور مچاتے ہیں، یہ لوگ جو مرضی کر لیں، ہم انہیں کسی صورت این آر او نہیں دینے والے ،جنرل پرویز مشرف نے نواز شریف اور آصف زرداری کو این آر او دیا جس کی وجہ سے ملک کا 6 ہزار ارب روپے کا قرضہ 30 ہزار ارب روپے تک پہنچ گیا۔انہوں نے کہا اپوزیشن کو سمجھ آ گئی کہ ہر روز ان کی کرپشن کی چیزیں مل رہی ہیں، دیگر ممالک بھی ہمیں ان کی کرپشن کی معلومات بھیج رہے ہیں، 2018ء میں ان کا خیال تھا کہ تحریک انصاف کی حکومت نہیں بن سکتی لیکن عوام کے ووٹوں سے ہماری حکومت بنی، ان کی چوری کے باعث پاکستان پر قرضہ چڑھا، انہوں نے پکڑے جانا ہے ، وہ پیسے بچانے کیلئے حکومت گرانے کے چکر میں ہیں، ان کے پیسے باہر پڑے ہیں، روپے کی قدر گرتی ہے تو ان کی رقم بڑھتی ہے ، ان کے مفادات پاکستان کے مفادات سے متصادم ہیں۔ عمران خان نے کہا نواز شریف علاج کیلئے ملک سے باہر جانا چاہتے ہیں، شہباز شریف کے اقتدار میں آتے ہی ان کی 11 کمپنیاں بن جاتی ہیں لیکن ان کے دور حکومت میں کوئی ایک ایسا ہسپتال نہیں بنا جہاں ان لوگوں کا علاج ہو سکے ،شہباز شریف، ان کے داماد اور بچے ملک سے باہر ہیں، اسحاق ڈار بھی علاج کے بہانے باہر اور ان کے بچے بھی باہر ہیں، ان لوگوں نے کوئی ہسپتال بنایا ہوتا تو نواز شریف کا علاج بھی یہیں ہو رہا ہوتا، قومیں اس وقت تباہ ہوتی ہیں جب چوروں کو بچانے کیلئے سہولتیں فراہم کی جاتی ہیں، لیکن ہم نئے پاکستان میں سب کیلئے ایک جیسا قانون بنا رہے ہیں۔انہوں نے کہا شریف خاندان کی حدیبیہ پیپر ملز کی منی لانڈرنگ پکڑی گئی، یہ لوگ عدالتوں کو برا کہتے ہیں حالانکہ انہیں شکر گزار ہونا چاہئے کہ تکنیکی وجوہات پر بچ نکلے ۔انہوں نے کہا پیپلزپارٹی کی حکومت کے پہلے 8 مہینوں میں مہنگائی 2.1 فیصد تھی ،ن لیگ کے دور میں 8 فیصد اور تحریک انصاف کی حکومت میں 6 فیصد ہے ،اگر ہم قرضے کو 30 ہزار ارب سے 20 ہزار ارب روپے تک لے آتے ہیں تو اب تک کی یہ سب سے بہتر حکومت ہوگی۔انہوں نے کہا تیل کی قیمتیں نہ بڑھائیں تو قرضوں میں اضافہ ہو جاتا ہے ۔ ایک بار پھر وزیراعلیٰ پنجاب عثمان بزدار پر بھرپور اعتماد کا اظہار کرتے ہوئے عمران خان نے کہا عثمان بزدار ثابت کرے گا کہ پنجاب میں ان سے بہتر کوئی وزیراعلیٰ نہیں آیا۔عمران خان نے 10 نکات بتاتے ہوئے کہا احساس پروگرام لانچ ہونے جارہا ہے ،پاکستان جلد سیاحت کا حب بن جائے گا،بلدیاتی نظام ایک زبردست نظام ہے ،زرعی اصلاحات کے لئے مکمل پروگرام بنایا ہے ، چین ہماری بھر پور مدد کررہا ہے ۔انہوں نے کہا کہ چین سے مصنوعی ذہانت کے پروگرام کے لئے مدد لے رہے ہیں۔انہوں نے کہا ایگزون موبل کمپنی کی ڈرلنگ میں دو ہفتے باقی رہ گئے ہیں اور میرا یقین ہے کہ یہاں سے گیس کا بہت بڑا ذخیرہ نکلنے والا ہے ، اور جو ایگزون کا اندازہ ہے اس کے مطابق اگر یہاں سے گیس کا ذخیرہ دریافت ہو گیا تو اگلے 50 سال تک پاکستان کا گیس کا مسئلہ ختم ہو جائے گا۔قبل ازیں اپنے خطاب میں وزیر خارجہ شاہ محمود قریشی نے اپوزیشن جماعتوں کے اکٹھ کو چوں چوں کامربہ قراردیتے ہوئے کہا تحریک انصاف کا ماضی میں تمسخر اڑانے والی جماعتیں آج اس سے خوفزدہ ہوکر اکٹھی ہوگئی ہیں تاہم یہ بازو میرے آزمائے ہوئے ہیں، کارکنوں پر لاٹھیاں ، آنسو گیس برسانے والی اسلام آباد پولیس آج انہی پارٹی کارکنوں کو سلیوٹ کررہی ہے ۔انہوں نے کہاانصاف کے ادارے قوم کی لٹیروں سے جان چھڑائیں گے ، 40 سال کا گند 8 ماہ میں صاف نہیں ہوسکتا، کارکن بلدیاتی انتخابات کی تیاری کریں۔تحریک انصاف کے چیف ا?رگنائزر سیف اﷲ نیازی نے کہا ہمیں اس پارٹی کو تمام دھڑے بندیوں سے نکال کر متحد کرنا ہے ۔علاوہ ازیں وزیراعظم سے گور نر پنجاب چودھری محمد سرور نے ملاقات کی۔ ملاقات میں پنجاب کی سیاسی صورتحال ،حکومتی امور،پنجاب آب پاک اتھارٹی و دیگر امور پر بات چیت کی گئی۔ وزیر اعظم نے پینے کے صاف پانی کی فراہمی کیلئے گورنر پنجاب کو ہنگامی بنیادوں پر اقدامات کی ہدایت کردی۔وزیر اعظم سے سندھ کے سیاسی رہنما تیمور خان اور اﷲ بخش انڑ نے بھی ملاقات کی اور تحریک انصاف میں شمولیت کا باضابطہ اعلان کیا۔