BN

آصف محمود


مدارس کے طلباء سیاست میں حصہ نہیں لے سکتے؟


خبر ہے کہ دینی مدارس کے طلباء کی سیاسی جلسوں میں شرکت پر پابندی لگا دی گئی ہے اور جناب شیخ رشید کو یہ ذمہ داری دی گئی ہے کہ وہ آئندہ ماہ پی ڈی ایم کے مارچ میں دینی مدارس کے طلباء کو شرکت سے روکیں۔سوال یہ ہے اس پابندی کا اطلاق صرف دینی مدارس پر کیوں؟کیوں نہ کالجوں اور یونیورسٹیوں میں قائم طلباء تنظیموں پر بھی پابندی عائد کر دی جائے جہاں طلباء کا مختلف عنوانات سے استحصاال کر کے انہیں سیاسی جماعتوں کے مفادات کے چولہے میں ایندھن کے طور پر ڈالا جاتا ہے؟ دینی مدارس کے
هفته 16 جنوری 2021ء

لالٹین کا جو ذکر کیا تو نے ہم نشیں

منگل 12 جنوری 2021ء
آصف محمود
بجلی کا طویل بریک ڈائون ہوا اور یو پی ایس بھی جواب دے گیا تو موسم کی پہلی بارش کے ہمراہ آنے والے جھونکے کی طرح لالٹین کا خیال آیا۔ یادوں کی سمت دریچہ سا کھل گیا۔ سامنے پروین شاکر کھڑی تھیں: کچا سا اک مکان کہیں آبادیوں سے دور چھوٹا سا ایک حجرہ فرازِ مکان پر وادی میں گھومتا ہوا بارش کا جلترنگ سانسوں میں گونجتا ہوا اک ان کہی کا بھید اتری ہوئی پہاڑ پر برسات کی وہ رات کمرے میں لالٹین کی ہلکی سی روشنی ایک سہہ پہرمیں برف باری کی امید میں خانس پور پہنچا تو تیز بارش نے آ لیا۔ بجلی کی
مزید پڑھیے


کیا وزیر اعظم کا کوئٹہ نہ جانے کا فیصلہ درست ہے؟

هفته 09 جنوری 2021ء
آصف محمود
وزیر اعظم عمران خان نے اپنا فیصلہ اور اس کی شان نزول بیان کر دی۔ فیصلہ یہ ہے کہ لاشوں کی تدفین تک وہ کوئٹہ نہیں جائیں گے اور فیصلے کی شان نزول یہ ہے کہ ان کے خیال میں یہ بلیک میلنگ ہے اور وزیر اعظم کو بلیک نہیں کیا جا سکتا۔ سوال یہ ہے کیا وزیر اعظم کا یہ فیصلہ درست ہے اور کیا اس شان نزول کا دلیل اور سیاست کی دنیا میں کوئی اعتبار ہے؟ عمران خان ، روایت یہ ہے کہ ، آکسفرڈ یونیورسٹی سے سیاست اور فلسفے کی ڈگری لے چکے ہیں۔لیکن ان
مزید پڑھیے


سانحہ مچھ۔۔۔۔ ایک تو آپ نے گھبرانا نہیں ہے

جمعرات 07 جنوری 2021ء
آصف محمود
سانحہ مچھ۔۔۔۔ ایک تو آپ نے گھبرانا نہیں ہے ہزارہ کے مقتولین کے لاشے سڑک پر رکھے ہیں اور لواحقین کی آنکھوں میں اترا درد سراپا سوال ہے کہ حکومت کے پاس پرسہ دینے کے لیے کوئی رجل رشید نہیں تھا،جو شیخ رشید صاحب کو بھیج دیا؟اس موقع پر اس فریضے کی ادائیگی کے لیے ان سے ناموزوں شخص شاید ہی کوئی ہو سکے۔ درست کہ اتفاقات زمانہ نے انہیں وزارت داخلہ کا قلمدان سونپ رکھا ہے لیکن انسانی جذبات کابینہ کا قلمدان نہیں ہوتے۔ اپنی افتاد طبع کے سارے حوالوں سے شیخ رشید اس فریضے کی ادائیگی کے لیے غیر
مزید پڑھیے


کیا اسرائیل ایک ریاست ہے؟

منگل 05 جنوری 2021ء
آصف محمود
اسرائیل کو تسلیم کرنے یا نہ کرنے کا فیصلہ تو ہر ریاست اپنے آدرشوں اور مفادات کی بنیاد پر ہی کرے گی لیکن اس سے پہلے یہ تو دیکھ لیجیے کہ کیا انٹر نیشنل لاء کے تحت اسرائیل ایک ریاست قرار دی جا سکتی ہے؟انٹر نیشنل لاء کے تحت ایک ریاست تین چیزوں سے بنتی ہے۔ علاقہ ، سرحد اور شہری۔ علاقوں کا معاملہ یہ ہے کہ اسرائیل اقوام متحدہ کے ضابطے پامال کر رہا ہے اور مقبوضہ جات خالی کرنے کو تیار نہیں۔سرحد کا معاملہ یہ ہے کہ وہ دنیا کی واحد ریاست ہے جس نے آج تک اپنی
مزید پڑھیے



ریکٹر انٹر نیشنل اسلامک یونیورسٹی جواب دیں

پیر 04 جنوری 2021ء
آصف محمود
ڈاکٹر معصوم یاسین زئی صاحب انٹر نیشنل اسلامک یونیورسٹی کے ریکڑ ہیں۔ صاحب علم ہیں ۔ان کا احترام بھی ہے اور حسن ظن بھی۔ یونیورسٹی کی اپنی تحقیقاتی کمیٹی کی رپورٹ کے مندرجات کے بعد ان کے اس منصب پر رہنے کا کوئی اخلاقی جواز موجود نہیں۔ ان کے سارے احترام کے باوجود، دل پر بھاری پتھر رکھ کر ، میں یہ کہنے پر مجبور ہوں کہ وہ خود یہ استعفی نہیں دیتے تو صدر پاکستان کو انہیں برطرف کر کے کوئی نیا ریکٹر تعینات کر دینا چاہیے۔ اس یونیورسٹی کو تباہی سے بچانا ہے تو یہ قدم اب ناگزیر
مزید پڑھیے


کیا سور ج صرف یکم جنوری کو طلوع ہوتا ہے؟

هفته 02 جنوری 2021ء
آصف محمود
باہر چڑیا چونچ میں سورج لیے چہچہاتی پھرتی ہے ، ہم کمرے میں پردہ کھینچ لیتے ہیں ، ہماری شام ہو جاتی ہے۔ ہمارا سورج سال میں ایک ہی بار اکتیس دسمبر کو غروب ہوتا ہے اور یکم جنوری کو ایک ہی بار طلوع ہوتا ہے۔ ہم یہ تصاویر اہتمام سے شیئر کرتے ہیں، نئے سال کی مبارک دیتے ہیں اور پھر پردے کھینچ لیتے ہیں۔ہماری شام ہو جاتی ہے۔ باقی کا سارا سال، اسی شام کے اندھیرے میں ، ہم گھڑیوں پر جیتے ہیں اور ہمیں کچھ خبر نہیں ہوتی کب سورج طلوع ہو رہا ہے اور کب غروب۔ہم
مزید پڑھیے


اسرائیل زمینیں ہتھیا کر قائم ہوا

منگل 29 دسمبر 2020ء
آصف محمود
سلطنت عثمانیہ کی یہودیوں کو گائوں کے گائوں اونے پونے داموں بیچنے کی غلطی اپنی جگہ،اس کا مطلب یہ نہیں کہ یہودیوں نے عربوں سے زمینیں خرید کر یہاںا سرائیل قائم کیا تھا۔ یہ واردات زمینیں خرید کر نہیں ، زمینیں ہتھیا کر کی گئی۔ معاملے کی درست تفہیم کے لیے ضروری ہے کہ چیزوں کی ترتیب ٹھیک رکھی جائے۔ یہود کو زمینیں بیچنے کے دو ادوار ہیں۔ایک 1882 سے 1908 تک ہے اور دوسرا دور1908 سے 1914 تک ہے۔ان دو ادوار میں بیچی گئی زمینوں کی غلطی اپنی جگہ اور یہی غلطی یہودی ریاست کی تشکیل کے عوامل میں
مزید پڑھیے


کیا اتا ترک بھی ارطغرل دیکھتے؟

پیر 28 دسمبر 2020ء
آصف محمود
مصطفی کمال اتا ترک نے جس ترکی سے سلطنت عثمانیہ کے آخری بادشاہ کو بچوں اور خواتین سمیت صرف چوبیس گھنٹے کے نوٹس پر نکل جانے کا حکم دیا تھا ، آج اسی ترکی سے سلطنت عثمانیہ کے پہلے نقش ارطغرل بے پر بنے ڈرامے نے دنیا بھر میں مقبولیت کے جھنڈے گاڑ دیے ہیں۔کل ارطغرل کی موت کا منظر دیکھا اور اس پر دنیا بھر کے اخبارات میں شائع ہونے والے تبصرے دیکھے تو ایک خیال آیا کہ جناب مصطفی کمال اتا ترک زندہ ہوتے تو کیا وہ بھی اس ڈرامے کو شوق سے دیکھ رہے ہوتے یا
مزید پڑھیے


اسرائیل سلطنت عثمانیہ کی دو غلطیوں کا نتیجہ ہے

هفته 26 دسمبر 2020ء
آصف محمود
فلسطین میں اسرائیل کا قیام محض دشمنوں کی سازش کا نتیجہ نہ تھا ، اس میں مسلمانوں کی چند خوفناک غلطیاں بھی شامل تھیں۔ آگہی اور عبرت کے لیے ہمیں ان غلطیوں کا سنجیدگی سے جائزہ لینا ہو گا ۔کیونکہ ان غلطیوں کو اسرائیل کے قیام کی وجہ نہ بھی قرار دیا جائے تو ان عوامل میں سے چند بنیادی عوامل میں شمار ہوتی ہیں جو اسرائیل کے قیام کا پیش خیمہ ثابت ہوئیں۔ پہلی غلطی کو آپ آسان تفہیم کے لیے نجکاری کہہ سکتے ہیں۔ سلطنت عثمانیہ کے پاس فلسطین میں زمینیں تھیں۔اس نے یہ زمینیں لیز پر یہودیوں
مزید پڑھیے