BN

احسان الرحمٰن


’’ بھارتیوں سے بپھرے عرب ‘‘


کینیڈا میں پرآسائش زندگی گزارنے والا روی ہودا ایک بھارتی نژاد کینیڈین شہری ہے ،ہودا ایک مشہور اسکول کا کونسلر بھی تھا اور ساتھ ہی ایک رئیل اسٹیٹ فرم کے ساتھ جڑا بھی ہوا تھاوہ ایک خوشحال زندگی گزار رہا تھااسکے پاس بہترین کار، اپنا گھر، پرسکون ملازمت اور کاروبار بھی تھا جہاں اسکے اچھے خاصے چھکے لگ جاتے تھے۔ اسے زندگی میں ہر وہ آسائش میسر تھی جس کی کوئی بھی ہندو لکشمی دیوی سے امید رکھتا ہے۔ روی اپنی پرآسائش زندگی سے مطمئن تھا بس اسے اپنے آس پاس مسلمان بہت کھلتے تھے اسکے اند ر کا شدت
پیر 11 مئی 2020ء

’ ’ بھارت بلیک لسٹ ۔۔۔‘‘

بدھ 06 مئی 2020ء
احسان الرحمٰن
دہلی سے ستر کلومیٹر دور ایک گاؤں میں کھیتی باڑی کرتے کرتے ادھیڑ عمر قاسم زندگی کے پینتالیس برس گزار چکا تھا لیکن اس نے ان چالیس برسوں میں ایسے حالات کبھی نہ دیکھے تھے اسکے بچے گھر سے باہر نکلتے تو کسی انجانے خطرے سے اس کا دل دھڑک دھڑک جاتا او روہ گھر سے باہر جاتا تو اسکی بیوی گھبرا جاتی، دوازے تک پیچھے پیچھے دعائیں پڑھتی آتی او رپھر چوکھٹ سے لگ کر اسے دیکھتی رہتی ،وہ پہلے ایسا نہیں کرتی تھی لیکن اب اسے ایک انجانے خوف نے آگھیرا تھاقاسم شام ڈھلے واپس آتا
مزید پڑھیے


برصغیر میں کورونا اور بل گیٹس کے خدشے

اتوار 03 مئی 2020ء
احسان الرحمٰن
ڈپٹی کمشنر اسلام آباد محمد حمزہ شفقات نوجوان افسر ہیںاپنے دفتر کے ساتھ ساتھ سوشل میڈیا پر بھی متحرک رہتے ہیں میںٹوئٹر پر ان کے ’’مریدوں ‘‘ میں سے ہوں اس ڈیجیٹل بیعت کا خالص مقصد موجودہ حالات میں سرکاری اقدامات سے آگاہی ہے میں نے کورونا کے ان دنوں میں اپنی ڈیوٹی لگا رکھی ہے کہ کسی بھی وقت ایک نظر ان کے ٹوئٹر پر ڈال لوںکہ شائد کوئی بھلی خبر مل جائے یہ الگ بات ہے کہ وہاں سوائے خوف کے کچھ نہیں ملتا ،چند روز پہلے ہی انہوں نے اسلام آباد کے سب سے زیادہ خطرناک کورونائی
مزید پڑھیے


’’تیسری عالمی جنگ ۔۔۔‘‘

اتوار 26 اپریل 2020ء
احسان الرحمٰن
ہاورڈد یونیورسٹی کے بین الاقوامی تعلقات عامہ کے پروفیسر گراہم ایلیسن کا نام ایک بار پھر امریکی اور مغربی تھنک ٹینکز میں ڈسکس ہونے لگا ہے ،سفارت کاروں ،تجزیہ نگاروں کی آن لائن مجلسوں اورٹیلی وژن کے سنجیدہ نوعیت کے پروگراموں میں اس وقت کورورنا وائرس کے بعد سب سے زیادہ نام پروفیسر کے متعارف کرائی گئی ’’تھوسیڈائڈز ٹریپ ‘‘ کا سننے میں آرہا ہے ،تھوسیڈائڈز ایک قدیم یونانی مفکر،دانشور تھا جس نے اپنے وقت کی دو بڑی قوتوں کے درمیان جنگ کی پیشن گوئی کی تھی،تھوسیڈائڈز کا پہلی بار نام 2017ء میں پروفیسر گراہم کی کتاب میں
مزید پڑھیے


’’ قطار میں کھڑا کرکے گولی ماردو۔۔۔‘‘

بدھ 22 اپریل 2020ء
احسان الرحمٰن
ہریانہ کی تیس سالہ ببیتا کماری پھوگاٹ سابقہ بھارتی پہلوان ہیں ،پہلے یہ اکھاڑے میں دھوبی پٹڑا مارتی تھیں اب گل کھلا رہی ہیں یہ مہیلا 2010،2014،2018ء کے دولت مشترکہ کھیلوں میںبھارت کے لئے کانسی،چاندی اور سونے کے تمغے جیت چکی ہے اور2012ء کی ورلڈ ریسلنگ چیمپئن شپ میں بھی کانسی کا تمغہ اپنے نام کرنے میں کامیاب رہی ہے ،بھارتی اداکار عامر خان کی فلم دنگل اسی کی زندگی پر بنائی گئی ہے لیکن یہ سب کچھ کرنے کے بعد بھی وہ اتنی مشہو ر اور ڈسکس نہیں ہوئی جتناپندرہ اپریل 2020ء کوان کے ٹوئٹر اکاؤنٹ سے اُگلے جانے
مزید پڑھیے



’’اک سیاسی قرنطینہ بھی ہو جائے ۔۔۔۔‘‘

اتوار 19 اپریل 2020ء
احسان الرحمٰن
’’جناب ! مسئلہ یہ ہے کہ ہمارا یقین نہیں بناہوا ،یقین بناؤ یقین ،یہ کورونا شورونا کچھ نہیں ہے بھائی جو رات قبر میں لکھی ہے وہ گھر کے بستر پر نہیںآنی ‘‘ اپنے پڑوسی کے ان الفاظ پر میں نے بس اپنا سر ہی تو نہیں پیٹ لیا ،وہ پڑھا لکھا شخص پشاو ر پولیس میںملازم ہے اور وہیں کہیں پوسٹ ہے لیکن اس کی رہائش اسلام آباد ہی میں ہے ہفتہ دس دن میں اسکی گرد آلود کا ر دروازے کے سامنے کھڑی ہو کر اسکی آمد کا پتہ دے رہی ہوتی ہے ،آج میں کسی کام سے
مزید پڑھیے


’’وقت سیاست کا نہیں انسانیت کا ہے‘‘

پیر 13 اپریل 2020ء
احسان الرحمٰن
وہ دیوار سے ٹیک لگائے گھٹنوں میں سردیئے ہوئے بیٹھا تھا ، مجھے اس شخص تک پہنچانے والے سپاہی نے اسے آواز دی ،سپاہی کی آواز پر دیوار سے لگی گھٹڑی میں حرکت ہوئی اس نے سر اٹھایا او ر پھر دو ویران آنکھیں ہم پر آجمیں سپاہی نے اس سے میرا تعارف کرایا اور کہا انہیں صاحب نے بھیجا ہے تم سے دو چار منٹ باتیں کرنا چاہتے ہیں اس مبہم تعارف پر اس نے میری طرف وضاحت طلب نظروں سے دیکھا جیسے کہہ رہا ہو کال کوٹھڑی میں موت کا انتظار کرنے والے قیدی سے کون اور کیوں
مزید پڑھیے


’’چک بھی پڑسکتی ہے‘‘

هفته 11 اپریل 2020ء
احسان الرحمٰن
کہتے ہیں ہندوستان کے پانچویں شہنشاہ شاہ جہاں کا چہیتا بیٹامحمد دارا شکوہ فلسفہ وحدت الوجود پر یقین رکھنے والا صوفی مزاج آزاد منش آدمی تھا لیکن ایسا آزاد بھی نہ تھا کہ اقتدار کی رونقوں اور حرص کی زنجیریں توڑ ڈالتا صوفیوں کی تعلیمات سے متاثر ہونے کے باجود داراشکوہ اقتدار کی چاہ دل سے نہ نکال سکا اسکی دلی کیفیت ’’کعبہ میرے پیچھے ہے کلیسا مرے آگے‘‘ کی تھی وہ شاہجہاں کا لاڈلا تھا ساتھ ساتھ رہتا اور اپنے بھائیوں کے خلاف کان بھرتا رہتا ،شاہ جہاں ایک جہاندیدہ شخص تھا اس سے دارا شکوہ کی دلی کیفیت
مزید پڑھیے


’’بلند شہر کی سفید ٹوپیاں اورسبرامنیم جی کی قے‘‘

اتوار 05 اپریل 2020ء
احسان الرحمٰن
ذرا دل پر ہاتھ رکھ کر سوچئے کہ گھر کے آنگن میں بوڑھے باپ کی لاش پڑی ہو اور کوئی پرسہ کیا کاندھا دینے بھی نہ آئے تو اس گھر کے مکینوں پر کیا بیت رہی ہوگی ؟ یہ گئے مہینے کے آخری دنوں کی بات ہے جب نئی دہلی سے 68کلومیٹر دور اتر پردیش کے بلند شہر میں73برس کے روی شنکر نے آخری ہچکی لی او ر اپنی سانسیں پوری کر گیا،وہ اپنے بوڑھے بدن میں کینسر جیسا موذی مرض لئے جی رہا تھا اس کی بدقسمتی کہ اسے آخری ہچکی آئی بھی تو ان دنوں جب پوری
مزید پڑھیے


’’ بس سو چ لیجئے۔۔۔‘‘

جمعرات 02 اپریل 2020ء
احسان الرحمٰن
افغانستان کی تاریخ اٹھا کر دیکھیں وہاںامن کے سورج سے روشن دن کم کم ہی ملیں گے ،کہتے ہیں افغانوں کو دو ہی کام آتے ہیں حملہ کرنا یا حملہ روکنا، یہاں قبائل پہچان ہیں۔ یہاں فرد کی فرد سے نہیں قبیلے کی قبیلے سے دشمنی اور دوستی ہوتی ہے ۔ پشتونو ں کی قبائلی دشمنیاں مشہور ہیں کہتے ہیں دو قبیلے باہم دست وپیکا ر ہوں اور اس موقع سے تیسرا فائدہ اٹھانا چاہے تو دو نوں حریف ایک ہوجاتے ہیں قبیلوں کے مشران، بڑے مل کر ایک پتھر اٹھاتے ہیں اور زمین پر جما کر رکھ دیتے ہیں کہ
مزید پڑھیے