BN

اشرف شریف


پی ٹی وی کا کوئی وارث ہے ؟


ثقافتی ادارے کسی قوم کی نظریاتی شناخت اور فنون لطیفہ میں رابطے کا کام کرتے ہیں۔ یوں سمجھ لیں جو بات فلسفیوں اور عالموں کی ثقیل گفتگو سے آپ کو بیزار کردے وہی کسی نغمے‘ ڈرامے اور فلم میں ایسے سمودی جاتی ہے کہ ہم سب اس کا اثر قبول کرلیتے ہیں۔ ذوالفقار علی بھٹو نے ملک میں سینما انڈسٹری کو فروغ دیا‘ بڑے شہروں میں آرٹس کونسلیں قائم کیں‘ ثقافتی اور علمی اداروں کواپنی عمارات دیں۔ ٹی وی اور ریڈیو کو اس طرح چلایا کہ نسلی‘ لسانی اور علاقائی تعصبات کمزور ہوں اور قومی اتحاد مستحکم ہو۔ امین اقبال نجی
هفته 24 اکتوبر 2020ء

اپوزیشن کی تحریک سے کچھ سوال

بدھ 14 اکتوبر 2020ء
اشرف شریف
اب یہ بات راز نہیں رہی کہ ن لیگ سینٹ الیکشن سے پہلے حکومت گرانے کی ہر ممکن کوشش کرنا چاہتی ہے۔ اس کوشش میں مولانا فضل الرحمن شراکت دار ہیں ،جن کا قول ہے کہ موجودہ پارلیمنٹ ناجائز ہے اسے تحلیل کردیا جائے۔ مولانا اور ان کی جماعت موجودہ پارلیمانی نظام کی حامی نہیں۔ وہ صرف اس لیے اس نظام کا حصہ ہیں کہ باقی کوئی جماعت اس سلسلے میں ان کا ساتھ دینے کو تیار نہیں۔ اس بنا پر ان کے لیے یہ ایک غیر اہم معاملہ ہے کہ پارلیمنٹ ہو یا نہ ہو پھر وہ غلط یا
مزید پڑھیے


کیا باسمتی ہم سے چھن جائے گی؟

هفته 10 اکتوبر 2020ء
اشرف شریف
آپ کے پاس گائوں میں رہنے کی کیا وجہ ہے؟میں نے ایک بار اپنے دادا جی سے پوچھا۔آپ کی ساری اولاد شہر میں بس چکی۔ باغ کی دیکھ بھال اب آپ سے ہو نہیں سکتی۔طبیعت خراب ہو جائے تو وہی نیم حکیم‘نیم ڈاکٹر۔ ان کی آنکھوں میں انار کے پھولوں جیسے رنگ بھر گئے‘ محبت کی ہر یاول ان کے سفید دراز بالوں کے گرد حاشیہ بنا کر اتر آئی۔ بولے !تم جس راستے سے آئے ہو وہاں چاول کی فصل پکنے کو تیار ہے۔ اس کی خوشبو سے ملے؟نمدار مٹی میں اگے دھان کی باس ‘ وہ باس جو
مزید پڑھیے


جنوبی پنجاب کا تعلیمی مرکز: داتا گنج بخش اہل قلم کانفرنس

منگل 06 اکتوبر 2020ء
اشرف شریف
قلم دوست کے رکن اور عزیز دوست ڈاکٹر اختر سندھو نے وائس چانسلر خواجہ فرید یونیورسٹی رحیم یار خان کے ساتھ ایک نشست رکھی تو معلوم ہوا جنوبی پنجاب میں تعلیمی سہولیات کے ضمن میں اہم کام ہورہا ہے۔ وی سی ڈاکٹر سلیمان طاہر انجینئرنگ میں پی ایچ ڈی ہیں۔ خوشگوار حیرت ہوئی کہ وہ کئی کھیلوں میں یونیورسٹی گرانٹس کمشن کی ٹیم کا حصہ رہے۔ زمانہ طالب علمی سے ان کے دوست اور سینئر صحافی میاں عابد اور عدنان احمد نے بتایا کہ انہیں تعجب ہوا کرتا کہ ایک کھلاڑی کیسے اتنے اچھے نمبر لے جاتا ہے۔ ڈاکٹر سلیمان طاہر
مزید پڑھیے


لندن میں سازشوں کا مکان

پیر 05 اکتوبر 2020ء
اشرف شریف
لندن شہر سے نزدیک ایک وسیع و عریض گھر ہے‘ آپ اسے ڈیرہ کہہ لیں جہاں کئی بین الاقوامی انٹیلی جنس اداروں کے اہلکاروں کا آنا جانا ہے۔ اس کا مالک ناصر بٹ بتیا جاتا ہے ،پتہ نہیں یہ اس کا اپنا مکان ہے ،کرائے پر ہے یا کسی شریف آدمی نے اپنے ذاتی کام کے لیئے خرید دیا ہے۔گنجان آبادی سے دور ہونے کا فائدہ ہے کہ میڈیا اور عام لوگوں کو معلوم نہیں ہو پاتا کہ اس ڈیرے پر آنے والی عالیشان گاڑیوں میں کون لوگ تھے اور ان کا یہاں جمع ہونے کا مقصد کیا ہے۔ ایک
مزید پڑھیے



جناب وزیر اعظم!رکاوٹیں ہٹائیں

هفته 03 اکتوبر 2020ء
اشرف شریف
میٹرک کے نتائج آئے۔ داخلے کے انتظامات میں اضافہ کیا گیا اور آن لائن فیس کی شرط رکھ دی گئی۔ کئی بینکوں نے یہ فیس وصول کرنے سے معذرت کر لی۔بچے اور ان کے والدین طویل قطاروں میں لگے رہے۔ انٹر کے نتائج آنے کے بعد بدانتظامی مزید ابتر ہو گئی۔ ہدایت کی گئی کہ داخلے آن لائن ہوں گے۔کالجز نے داخلے کے جو اشتہار شائع کرائے ان پر بھی آن لائن داخلے کا لنک دیا گیا تھا۔اکثر طلبا نے شکایت کی کہ لنک اوپن نہیں ہوتا۔کالج انتظامیہ سے رابطہ کریں تو وہ کہتے ہیں صرف آن لائن ہی درخواست
مزید پڑھیے


درندے سے دوستی

بدھ 30  ستمبر 2020ء
اشرف شریف
ہر سیاسی خطرے سے آزاد عمران حکومت کے لیے دو انتظامی خطرات سامنے آئے ہیں۔ پہلا خطرہ حکومت مخالف مذہبی شخصیات کا فرقہ وارانہ سطح پر سرگرم ہونا اور دوسرا آٹا‘ گندم‘ ادویات اور اشیائے ضروریہ کے نرخ جن پر حکومتی کنٹرول مکمل طور پر ختم ہوتا دکھائی دے رہا ہے۔ آمدن بڑھنے کی بجائے سکڑنے لگے تو چیزوں کا مہنگا ہونا معاشی نفسیات توڑ ڈالتا ہے ۔ گھر کا کفیل ان حالات میں انتہا پسند بننے لگتا ہے ۔فرد دوسرے فرد سے اور گھر کی دیوار دوسرے مکان سے جڑی ہے اس لئے یہ پریشانی پورے معاشرے کو گھیر لیتی
مزید پڑھیے


سیاسی قالین کے نیچے چھپا گند

پیر 28  ستمبر 2020ء
اشرف شریف
جنرل پرویز مشرف کا دور ختم ہونے کے قریب تھا۔جنرل تنویر نقوی کا ترتیب دیا گیا مقامی حکومتوں کا نظام فعال تھا ۔فوجی حکومت اس کا کریڈٹ لیتی تھی۔ انٹیلی جنس ادارے کے اعلیٰ ترین عہدیداروں میں سے ایک نے پوچھا کیا آپ مجھے نئے بلدیاتی نظام میں خواتین کی نمائندگی کے سماجی پہلوئوں سے آگاہ کر سکتے ہیں۔ وہ چاہتے تھے کہ میں انہیں وہ کچھ بتائوں جو دیگر ذرائع سے ان تک نہیں پہنچ رہا تھا۔ میں نے کچھ پوائنٹ تحریری شکل میں فراہم کر دئیے۔ میں نے بتایا کہ اختیارات کو نچلی سطح پر منتقل کرنے کا
مزید پڑھیے


پی ڈی ایم کی بنیاد کیا ہے ؟

هفته 26  ستمبر 2020ء
اشرف شریف
اپنی سوانح حیات میںبے نظیر بھٹو کہتی ہیں: سیاست کس قدر عجیب چیز ہے۔ 5فروری 1981ء کو پاکستان جمہوری پارٹی کے نصراللہ خان ترکی ٹوپی پہنے میری والدہ کے دائیں طرف بیٹھے‘ اصغر خان کی معتدل مزاج تحریک استقلال کے بھرے ہوئے چہرے والے خورشید قصوری ان کے نمائندے کے طور پر میرے بالمقابل براجمان تھے۔ جمعیت علمائے اسلام کے باریش رہنما کمرے میں ایک طرف تھے اور دوسری طرف بائیں بازو کی ایک چھوٹی سی جماعت کے رہنما فتح یاب علی خان۔ تقریباً 20کے قریب افراد تھے جن میں سے اکثر سابقہ پاکستان قومی اتحاد کے رہنما تھے۔ ایک مرحلے
مزید پڑھیے


ایک تاجر کا جمہوری کاروبار

بدھ 23  ستمبر 2020ء
اشرف شریف
اگر کوئی نوازشریف سے پوری طرح واقف نہ ہو تو اے پی سی سے ان کے خطاب کو ایک ایسے عظیم رہنما کے خیالات تصور کرے گا جو جمہوریت کی بالادستی کے لیے اپنی جان‘ مال اور اولاد قربان کرنے کا عزم رکھتا ہو۔ جناب شہباز شریف اور مریم نواز نے جس طرح نوازشریف کی تقریر کو ایک تاریخ ساز واقعہ بنا کر پیش کیا اور ن لیگی رہنما جس طرح واہ واہ کر رہے ہیں اس سے یہی معلوم ہوتا ہے کہ نوازشریف فوج سے زیادہ طاقتور ہیں۔ایک دن پہلے شہباز شریف بلاول بھٹو اور چھوٹے مولانا آرمی چیف
مزید پڑھیے