BN

اشرف شریف


فارن فنڈنگ کیس اور اپوزیشن کی خوش فہمی


پی ڈی ایم پر ن لیگ کے قانون فہموں کا اثر ہونے لگا ہے ،مریم نواز کی طرح اکثر رہنماوں کو لگتا ہے فارن فنڈنگ کیس میں تحریک انصاف کالعدم قرار پا جائے گی۔معاملہ قانونی ہے اس لئے جذبات کو ٹھوڑا دور رکھ کر دیکھتے ہیں کہ اس معاملے کا نتیجہ ممکنہ طور پر کیا برآمد ہو سکتا ہے۔ ہم ہی نہیں ہمسائے میں بھی فارن فنڈنگ کا تنازع موجود ہے۔بھارتی قانون کے تحت پارلیمنٹ کے اراکین‘ سیاسی جماعتیں‘ سرکاری افسران‘ ججز اور میڈیا پرسنز غیر ملکی عطیات وصول نہیں کر سکتے۔ تاہم 2017ء میں 1976ء کے ایکٹ میں ترمیم کے
پیر 18 جنوری 2021ء

پارلیمانی جمہوریت ہمارے لئے نہیں

هفته 16 جنوری 2021ء
اشرف شریف
عمر منظور اور علی خان جاننا چاہتے تھے کہ عمران خان اب تک ہماری امیدوں پر پورے کیوں نہیں اترے‘جب وہ یہ سوال پوچھ رہے تھے تو میرے حافظے میں 1997 میں ہیوی مینڈیٹ والے انتخابات کے بعد قومی اسمبلی میں لیڈر آف اپوزیشن بے نظیر بھٹو کا خطاب گونج رہا تھا۔وہ کہہ رہی تھیں پارلیمانی نظام اور سیاستدانوں کو بدنام کیا جاتا ہے ۔23 برس بیتے نہ پیپلز پارٹی پارلیمانی جمہوریت کی افادیت ثابت کر سکی نہ مسلم لیگ ن ۔میرے خیال میں اگر ذوالفقار علی بھٹو اس نظام میں سے ہمارے مسائل کا حل تلاش نہیں کر
مزید پڑھیے


مولانا چائے کے وقت کیا یاد رکھیں

بدھ 13 جنوری 2021ء
اشرف شریف
مولانا فضل الرحمن کے لیے پیغام بڑا واضح ہے ’’پنڈی آئیں گے تو چائے پانی پوچھیں گے لیکن ان کے آنے کی کوئی وجہ نہیں‘‘۔ فروری 2019ء کے بعد فوج میں چائے پلانے کا مطلب تبدیل ہو چکا۔ اب یہ اس خاطر تواضع کے ہم معنی ہے جو محاورے میں استعمال ہوتی ہے ، اس حالت کا بیان جو ابھی نندن کے ساتھ بیتی۔ مولانا رمز شناس ہیں۔ کیوں نہ ہوں ،ساری عمر اسی کوچے میں مصرعے اٹھاتے اور غزل سرا رہے ہیں۔ فوراً جواب دیا ’’خود تو پاپا جونز کے پیزے کھائیں او رہمیں چائے پر ٹرخا دیں‘
مزید پڑھیے


بھارتی کسانوں کا احتجاج :مسائل تو پاکستان میں بھی ہیں

پیر 11 جنوری 2021ء
اشرف شریف
بھارت میں نئے زرعی قوانین کے خلاف احتجاج کو تین ہفتے ہونے کو ہیں۔ یوں تو پورے بھارت کے کسان احتجاج کر رہے ہیں لیکن پنجاب میں اس احتجاج میں سے مستقبل کی کئی تحریکیں جھانکتی معلوم ہو رہی ہیں۔ کتنے ہی پنجابی گلوکار، اداکار اور کھلاڑی مودی حکومت پر سخت تنقید کرتے ہوئے تحریک آزادی کے دوران اپنے سکھ رہنمائوں کی غلط پالیسیوںکی مذمت کر رہے ہیں‘ قائد اعظم محمد علی جناح کی تعریف کی جا رہی ہے‘ کئی لوگ خالصتان زندہ باد کے نعرے لگا رہے ہیں۔ صاف دکھائی دیتا ہے کہ پنجاب بھارت کے ہاتھ
مزید پڑھیے


ہزارہ قتل ؛ سفاک سیاست پیشقدمی کر چکی

هفته 09 جنوری 2021ء
اشرف شریف
ترقی کرتی دنیا اور پاکستان میں یہی فرق ہے کہ وہ نئے لمحے میں آگے بڑھ جاتے ہیں اور پاکستان ایک سانحہ کی گرفت میں آ کر ٹھہر جاتا ہے۔ ہفتہ ہونے کو آیا 11ہزارہ باشندے قتل ہوئے۔ انسانی ہمدردی کی جگہ اب سفاک سیاست پیشقدمی کر چکی ہے۔ افسوسناک پہلو یہ کہ وزیر اعظم نے وقت ضائع کرنے کے ساتھ اپنی ساکھ بطور لیڈر ماند کر لی ہے۔ پہلے ایک ’’اگر‘‘ کی پڑتال کر لیتے ہیں‘ کسی نے کہا تو نہیں مگر بین السطور ضرور بات ہوتی ہے کہ اگر وزیر اعظم دھرنے پر بیٹھے ہزارہ افراد سے تعزیت کے
مزید پڑھیے



روف طاہر اداس کر گئے

بدھ 06 جنوری 2021ء
اشرف شریف
دس نمبر ڈائیوو بس واپڈا ٹائون سے لاہور ریلوے سٹیشن تک چلا کرتی تھی۔ ہمیشہ سفاری سوٹ میں ملبوسروف طاہر پہلے سٹاپ سے سوار ہوتے، عموماً سب سے آخر والی سیٹوں پر بیٹھتے۔ میں کالج روڈ سے سوار ہوتا تو ان کے ساتھ جگہ مل جاتی۔ آشنائی والا تعلق کئی برسوں سے تھا۔ اس سفر کے دوران علمی و صحافتی موضوعات پر بات ہوتی۔ہم بات کرتے کہ لکھنے والے سطحیت کا شکار ہو رہے ہیں، ہم اس بات پر دکھی ہوتے کہ سماج میں تلخی گھولنے والے زیادہ ہیں،محبت کے مبلغ کم ہوتے جا رہے ہیں۔ وہ جانتے تھے کہ
مزید پڑھیے


جنگ کے بعد مذاکرات کا میز حاضر ہے!

پیر 04 جنوری 2021ء
اشرف شریف
جنگ کے بعد مذاکرات کے میز پر ہی بیٹھنا ہوتا ہے۔ ایک ناکام حکومت ہٹائو تحریک کے بعد ہیئت حاکمہ کا بیانیہ تسلیم کرنا بنتا ہے۔ مسلم لیگ ن کے قائد کا خیال تھا کہ لندن ان کی آئندہ سیاست کا مرکز بن سکتا ہے۔ ان کا یہ سوچنا غلط نہیں تھا۔ کئی علیحدگی پسند لندن میں رہ رہے ہیں۔ بنگلہ دیش بنانے کی تحریک لندن میں پروان چڑھی اور اس تحریک میں مددگار برطانوی رکن پارلیمنٹ کو بنگلہ دیش کی شہریت شکریہ کے ساتھ دی گئی۔ بلوچ علیحدگی پسندوں کے بعض رہنما لندن میں رہتے ہیں۔ الطاف حسین کو
مزید پڑھیے


منی پور اور کشمیر کی کہانیاں

بدھ 30 دسمبر 2020ء
اشرف شریف
میرے پاس منی پور اور کشمیر کی کہانی ہے۔ اگر آپ نونہالان پی ڈی ایم کی تقریروں پر میرا تبصرہ چاہتے ہیں تو پیشگی معذرت‘ یہ سوغات بہت سے وقت ضائع کرنے والوں کے ہاں چٹخارے دار لفظوں میں آپ کو مل جائے گی۔ اگر کچھ تاریخی اور تہذیبی تنازعات کو سمجھنا چاہیں تو تشریف رکھئے، خیالات آپ کی تواضع کے لیے پیش کئے دیتا ہوں۔ ہم جس خطے میں آباد ہیں وہاں خوشبودارگلاب ہیں۔ ساتھ کانٹے بھی۔ جو کوئی اپنی قوم او رریاست کو انسان دشمنی کا درس دے وہ بھی کانٹا ہوتا ہے‘ آپ کہہ سکتے ہیں کانٹے چننے والے
مزید پڑھیے


’’کلامِ اقبال میں رزمیہ عناصر‘‘

پیر 28 دسمبر 2020ء
اشرف شریف
رزمیہ نظمیں جنگجو اقوام کا ثقافتی و سماجی حصہ رہی ہیں۔ جن دنوں پنجاب بیرونی حملہ آوروں کی گرفت میں تھا اس وقت ’’وار‘‘ یعنی حملہ کے نام سے کئی شاعروں نے رزمیہ نظمیں کہیں۔ ایسی کچھ نظمیں جنگ نامہ کے نام سے بھی شائع ہوئیں۔ علامہ اقبال پنجاب کی اسی مٹی سے ابھرے‘ اقبال کے موضوعات ان کے مطالعہ اور سوچ و بچار کے ساتھ پھیلتے گئے۔ انہوں نے ملت اور امہ کے تصور کو خودی سے ہم آہنگ کر کے جب سامنے رکھا تو فرد کو مجاہد کا نام دیا۔ یہ مجاہد صرف تلوار اور بندوق نہیں اٹھاتا
مزید پڑھیے


پارٹی میں مولانا کے خلاف اٹھتی آوازیں

هفته 26 دسمبر 2020ء
اشرف شریف
پہلے دانشمند و پر مزاح حافظ حسین احمد نشانہ بنے‘ انہوں نے جمعیت علماء اسلام کے تنظیمی اجلاسوں میں سوال اٹھائے تھے‘ اس سے پہلے مفتی محمود کی سیاسی وراثت کا جھگڑا اٹھا تو ایک طرف مولانا سمیع الحق تھے اور دوسرف طرف مفتی محمود کے فرزند فضل الرحمن‘ جمہوریت‘ آئین اور اصول اس وقت پامال ہوئے جب خاندانی قیادت کا اصول مان کر بے اصولی کرلی گئی۔ جمعیت کے دو دھڑے ہو گئے۔ ایک کی قیادت اکوڑہ خٹک چلی گئی اور دوسرے کا مرکز ڈیرہ اسماعیل خان بن گیا۔ پہلے دھڑے میں علما کرام اور دوسرے دھڑے میں
مزید پڑھیے