BN

افتخار گیلانی


فلسطین کو ضم کرنے کا اسرائیلی پلان اور کشمیر


حال ہی میں امریکہ کی طاقتور یہودی لابی نے کورونا وائرس کی وبا کے دوران ہی اپنا ایک اعلیٰ سطحٰ وفد ان ممالک کے دورہ پر بھیجا تھا، جہاں ان کو واضح طور پر بتایا گیا کہ مغربی کنارہ کو ضم کرنے کے پلان کے بعد وہ ٹرمپ کے پلان کو حمایت نہیں دے پائیں گے۔ اردن نے بھی خبردار کر دیا کہ نیتن یاہو کے منصوبہ سے خطے میں حالات انتہائی خراب ہوسکتے ہیں۔ ان ذرائع نے راقم کو بتایا کہ کوشنر فی الحال خلیجی ممالک کی ناراضگی مول لینے کی پوزیشن میں نہیں ہے، کیونکہ ان ممالک میں
بدھ 08 جولائی 2020ء

فلسطین کو ضم کرنے کا اسرائیلی پلان اور کشمیر

منگل 07 جولائی 2020ء
افتخار گیلانی
گو کہ جموں و کشمیر اور فلسطین کے خطے سیاسی، سماجی اور جغرافیائی اعتبار سے کوسوں دور ہیں، مگر تاریخ کے پہیوں نے ان کو ایک دوسرے کے قریب لاکر کھڑا کر دیا ہے۔ دونوں خطے تقریباً ایک ساتھ 1947-48ء میں دنیا کے نقشہ پر متنازعہ علاقوں کے طور پر ابھرے۔ کئی جنگوں کے باعث بھی بنے اور پچھلی سات دہائیوں سے نہ صرف امن عالم کیلئے خطرہ ہیں، بلکہ مسلم دنیا کیلئے ناسور بنے ہوئے ہیں۔ افغانستان میں خون خرابہ ہو یا بھارت،پاکستان مخاصمت ، یا مغربی ایشیا میں یمن و شام و لیبیا کی خانہ جنگی یا ایران، ترکی،
مزید پڑھیے


بھارت، چین اور جنوبی ایشیائی ممالک

بدھ 01 جولائی 2020ء
افتخار گیلانی
نیپال نے جس طرح پارلیمنٹ میں اتفاق رائے سے آئین میں ترمیم کرکے ملک کا نیا نقشہ جاری کرکے متنازعہ سرحدی علاقوں کو اس میں شامل کیا، اس قدم سے بھارت میں سخت ناراضگی ہے۔چند ماہ قبل بھارت نے بھی کچھ اسی طرح کا قدم اٹھا کر جموں و کشمیر کیلئے نئے نقشہ ریلیز کیا تھا۔ 2018ء میں بنگلہ دیش میں شیخ حسینہ کو عوامی غیظ و غضب سے بچانے اور واپس اقتدار میں لانے کیلئے بھارت نے خاصا کردار ادا کیا تھا۔ ان انتخابات میں استعمال ہوئی الیکٹرانگ ووٹنگ مشینیں بھارت کے گجرات صوبہ سے آئی تھیں۔ جنکو خود
مزید پڑھیے


بھارت، چین اور جنوبی ایشیائی ممالک

منگل 30 جون 2020ء
افتخار گیلانی
کیسی ستم ظریفی ہے کہ جنوبی ایشیا کے تقریباً سبھی ممالک ایک کثیر جہتی اور جمہوری پڑوسی ملک بھارت کے بجائے ایک آہنی نظام کے ملک چین کے ساتھ اطمینان محسوس کرتے ہیں۔ ہونا تویہ چاہئے تھا کہ بھارت ان سبھی ممالک کیلئے مشعل راہ ہوتا اور اسکی مشفق خارجہ پالیسی ایک مہربان بڑے بھائی کی طرح ان کے مفادات کا خیال رکھ کر خطے کی تعمیر و ترقی کا ضامن بن جاتی۔ مگر برسوں سے بھارت کا رویہ اس خطے میں نوآبادیاتی طرز کا رہا ہے اور 2014ء میں نریندر مودی کے برسراقتدار میں آنے کے بعد اس میں
مزید پڑھیے


لداخ :امارت سے مفلسی کی ایک داستان

هفته 27 جون 2020ء
افتخار گیلانی
خطے کے روابط منقطع ہونے کا سب سے زیادہ نقصان مسلم اکثریتی کرگل ضلع کو اٹھانا پڑا۔ اس کے علاوہ بھارت،پاکستان جنگوں میں اس ضلع کے کئی دیہات کبھی ادھر تو کبھی ادھر چلے آتے تھے۔ 1999ء کی کرگل جنگ کے بعد جب لداخ کے پہلے کور کمانڈر جنرل ارجن رائے کی ایما پر دیہاتوں کی سرکاری طور پر پیمائش وغیرہ کی گئی، تو معلوم ہوا کہ ترتک علاقے کے کئی دیہات تو سرکاری ریکارڈ میں ہی نہیں ہیں۔ اس لئے 2001ء کی مردم شماری میں پہلی بار معلوم ہوا کہ لداخ خطے میں مسلم آبادی کا تناسب 47فیصد ہے
مزید پڑھیے



لداخ:امارت سے مفلسی کی ایک داستان

منگل 23 جون 2020ء
افتخار گیلانی
جموں و کشمیر کا دور افتادوہ اور پسماندہ لداخ خطہ ، جہاں اسوقت چینی اور بھارتی فوج برسرپیکار ہے، ایک صدی قبل تک خاصا متمول اور متحدہ ہندوستان ، تبت، چین ، ترکستان و وسط ایشیا کی ایک اہم گذرگاہ تھا۔ خوبصورت ارضیاتی خدو خال، حد نگاہ تک رنگ برنگے اونچے پہاڑ، بنجر اور ویران لمبے چوڑے میدان، خاصی حد تک پاکستانی صوبہ بلوچستان سے مماثل ہیں۔ پچھلے سال اگست میں بھارت نے اس خطہ کو جموں و کشمیرسے الگ کرکے ایک علیحدہ مرکز کے زیر انتظام کر دیا۔ دو ضلعوں لہیہ اور کرگل پر مشتمل اس خطے کا رقبہ
مزید پڑھیے


شجاعت بخاری کا قتل ہنوز ایک معمہ

منگل 16 جون 2020ء
افتخار گیلانی
کشمیری صحافت کے درخشاں ستارے شجاعت بخاری کو مرحوم لکھتے ہوئے ابھی بھی قلم لرزتا ہے۔ دو سال قبل 14جون یعنی 29شعبان المبارک کی شام کشمیری صحافت کے اس آفتاب کو ہلال عید کے طلوع ہونے سے پہلے ہی غروب کرادیا گیا۔ کسی کشمیر ی صحافی کو خاموش کرانے کا یہ پہلا واقعہ نہیں تھا ۔ اس سے قبل بھی کئی صحافیوں کو سرینگر میں موت کے گھاٹ اتا را گیااور ان کے کیس داخل دفتر کئے گئے۔ مگر اس بار امید تھی کہ حکومت اس قتل کی باضابط تفتیش کرکے سازش کرنے والے اور گولیاں برسانے والے افراد کو
مزید پڑھیے


ہاتھی کی ذات

منگل 09 جون 2020ء
افتخار گیلانی
اردو زبان کے مزاحیہ شاعر مر حو م ساغر خیامی نے کیا خوب کہا تھا۔ نفرتوں کے دور میں دیکھو کیا کیاہوگیا سبزیا ں ہندو ہیں، بکرا مسلمان ہوگیا شاید ان کو خود بھی یہ اندازہ نہیں رہا ہوگا کہ 2008ء میں انکی وفات کے بعد ان کا یہ شعر اتنی جلد بھار ت کے حالات کی اس قدر صحیح عکاسی کریگا۔ سبزیوں کے علاوہ اب تو بندر اور ہاتھی بھی ہندو بنائے گئے ہیں، جن کو گزند پہچانے کی تاک میں خونخوا رمسلمان ہمہ وقت تیار بیٹھے رہتے ہیں۔ لہذا ان کو بچانے کیلئے مسلمانوں کے سروں
مزید پڑھیے


چین ۔بھارت تنازعہ، چینی ناراضگی کی چار وجوہات……(4)

جمعه 05 جون 2020ء
افتخار گیلانی
بھارتی وزیر داخلہ سردار پٹیل نے جب ریاستوں سے متعلق ایک وائٹ پیپر جاری کیا، تو اس میں بھی یہی رقبہ دکھایا گیا۔ 1891ء میں پہلی مردم شماری کے وقت ریاست کا رقبہ 80,900 مربع میل دکھایا گیا تھا۔مگر 1911ء کی مردم شماری میں رقبہ بڑھا کر 84,258مربع ریکارڈ کیا گیا۔مردم شماری کے کمشنر کی رائے پر 1941میں اس رقبہ کو گھٹا کر 82,258مربع میل کردیا گیا۔1951ء میں پہلی مردم شماری کے وقت اسی کو دہرایا گیا۔ البتہ 1961ء کی مردم شماری میں ریاست کے رقبہ کو بڑھا کر 86,024 مربع میل دکھایا گیا۔یہ جغرافیہ کہاں سے حاصل ہوا، ایک
مزید پڑھیے


چین ۔بھارت تنازعہ، چینی ناراضگی کی چار وجوہات……(3)

جمعرات 04 جون 2020ء
افتخار گیلانی

اپنے اردگرد 14میں سے 13ممالک کے ساتھ چین سرحدی تنازعہ سلجھانے کی تگ و دو کررہا تھا ، تاکہ اسکی پوری توجہ معاشی ایشوز کی طرف مرکوزرہے۔ صرف بھارت واحد ملک تھا ، جس کے ساتھ سرحدی تنازعات کے سلسلے میں کوئی میکانزم موجود نہیں تھا۔ راجیو گاندھی کے دورہ کے دوران سرحدی تنازعات کو سلجھانے کیلئے دونوں ملکوں کے فارن دفاتر میں مشترکہ ورکنگ گروپ تشکیل دئے گئے۔ 1993ء میں وزیر اعظم نرسہما راوٗ نے اس سعی کو اورآگے لیجاکر سرحدوں کو پرامن رکھنے کے ایک معاہدہ پر دستخط کئے۔ اس کے مطابق دونوں ملکوں کی فوجی پارٹیاں ہتھیاروں
مزید پڑھیے