BN

اوریا مقبول جان


کیا ابھی وقت نہیں آیا


تنہائی اور دنیا سے کٹ کر زندگی گزارنا،شاید گیان حاصل کرنے والوں کے لیے ایک نعمت ہوتی ہوگی، لیکن انسانی تاریخ اس بات پر متفق ہے کہ قیدِ تنہائی میں اگر ذرا سی بھی لذت ہوتی تو یہ صدیوں سے سزا کے طور پر متعارف نہ ہوتی۔ گذشتہ ایک مہینے کی پابندیاں کسی طور پر بھی مکمل قیدِِ تنہائی تصور نہیں کی جاسکتی۔مگر ''شہر اداس اور گلیاں سونی'' والی کیفیت آدمی کو ایک وسیع قید خانے میں لے جاتی ہے۔ ایک ایسا وسیع قید خانہ کہ جس میں دن کا وقفہ ہوا ہے۔ قیدی اپنی اپنی بیرکوں سے نکل کر
اتوار 12 اپریل 2020ء

کون ہے جو طاقت میں ہم سے زیادہ ہو

هفته 11 اپریل 2020ء
اوریا مقبول جان
یوں لگتا ہے کہ پوری دنیا قومِ عاد کی بستی میں تبدیل ہوچکی ہے جس پر اللہ نے ایسی خوفناک آندھیاں مسلط کی تھیں جو سات راتیں اور آٹھ دن چلتی رہیں۔ مگر وائرس کی آندھی ہے جس نے پوری دنیا کو اپنی لپیٹ میں لے لیا ہے اس کا انجام تک معلوم نہیں۔ آج سے صرف ایک ماہ پہلے تک وسیع و عریض امریکہ کے دیہاتی علاقوں، جنگلی اور صحرائی آبادیوں کو اس لیے محفوظ تصور کیا جا رہا تھا کہ وہاں لوگوں کی زندگیاں اپنے علاقوں اور دائروں تک محدود ہیں۔ لاتعداد ایسے امریکی ہیں جنہوں نے عمر
مزید پڑھیے


ٹھیک ایک سو سال بعد

جمعه 10 اپریل 2020ء
اوریا مقبول جان
روزانہ ساڑھے چار لاکھ افراد اس چوراہے سے پیدل گذرتے تھے، رات بھر روشنیوں اور رنگوں کی برسات رہا کرتی تھی، چونکہ یہ دو سڑکوں کے سنگھم پر اس طرح واقع ہے جیسے غلیل کا دو شاخہ ہوتا ہے، اس لیے اسے اپنی اہمیت کے اعتبار سے’’ دنیا کا چوراہا ‘‘ بھی کہا جاتا رہا ہے۔ نیویارک کا ٹائمز اسکوائر۔۔۔ ہر سال پانچ کروڑ سیاح اس علاقے میں آتے رہے ہیں اور اپنی اپنی دلچسپیوں سے لطف اندوز ہوتے تھے۔ آج اس ٹائم اسکوائر کی روشنیاں اسی طرح قائم ہیں، وہ بہت بڑا نیو آئن سائن جہاں ہر چند لمحوں
مزید پڑھیے


سازشی نظریہ اور میرا اللہ

جمعرات 09 اپریل 2020ء
اوریا مقبول جان
یہ اچانک یوٹیوب کو ہوش کیسے آگیا۔ وہ شخص براہ راست ڈھائی گھنٹے گفتگو کرتا رہا، بلکہ لوگوں کے سوالات کے جواب بھی دیتا رہا۔ کون تھا یہ شخص جس کی گفتگو کے بعد ویڈیو، یوٹیوب سے ڈیلیٹ کر دی گئی۔ فورا ایسا نہیں کیا گیا بلکہ بی بی سی کے اس سوال کے بعدکہ ''تم لوگوں نے اس ویڈیو کی اجازت کیسے دے دی''، یوٹیوب نے ویڈیو ڈیلیٹ کی اور اپنے قوانین سخت کرتے ہوئے اعلان کیا، '' ہماری یہ واضح پالیسی ہے کرونا وائرس سے متعلق جو مواد بھی عالمی ادارہ صحت یا کسی ملک کے محکمہ صحت
مزید پڑھیے


کس نے ہمیں پکارا۔ ہم آگئے فریادی

اتوار 05 اپریل 2020ء
اوریا مقبول جان
دنیا جس دن نیو ایئر نائٹ منانے کی تیاریوں میں مصروف تھی، رات بارہ بجے ٹائمز اسکوائر نیویارک، بگ بین لندن اور ایفل ٹاور پیرس جیسے مقامات پر رنگ و نور، رقص و سرود اور فحاشی و عریانی کا سیلاب امڈنے والا تھا، اس دن یعنی 31 دسمبر 2019 کو چین کے ماہر ڈاکٹروں نے عالمی ادارہ صحت کو اطلاع دی کہ ہمارے شہر ووہان میں بہت سے مریض ایک عجیب وغریب نمونیے کا شکار ہوئے ہیں، جن کے مرض کا کچھ اندازہ نہیں ہو رہا۔ یہ ایک معمول کی درخواست تھی جو اقوام متحدہ کے عالمی ادارہ صحت
مزید پڑھیے



ڈرو اس وبال سے

هفته 04 اپریل 2020ء
اوریا مقبول جان
انسان ہتھیار بناتا ہے، اسے استعمال بھی کرتا ہے لیکن موت اللہ کے ہاتھ میں ہے وہ جسے چاہتا ہے موت کی آغوش میں جانے دیتا ہے اور جسے چاہتا ہے اپنے فضل و کرم سے محفوظ رکھتا ہے۔ انسان دوا بناتا ہے، اسے مریض کو دیتا ہے لیکن شفا اور زندگی اللہ کے ہاتھ میں ہے وہ کسی کو اسی دوا سے صحت عطا فرماتا ہے اور کسی کے لئے یہی دوا زہِر قاتل بن جاتی ہے۔ میں نے یہاں لفظ ''بنانا'' تحریر کیا ہے ورنہ جب سے انسان نے اس زمین پر اکڑ کر چلنا اور قوت و
مزید پڑھیے


ثناخوان تہذیبِ مغرب کہاں ہیں

جمعه 03 اپریل 2020ء
اوریا مقبول جان
نفسیات کی تعلیم کے دوران جب ہم مختلف ذہنی مریضوں کا نفسیاتی مطالعہ کرتے، ان کی خاندانی، ذاتی اور معاشرتی زندگی کا معلوماتی چارٹ مرتب کرتے ہوئے مختلف ٹیسٹوں کے ذریعے ان کے ذہنی لاشعور میں چلنے والی کشمکش کا مطالعہ کرتے تو، مہذب، تعلیم یافتہ اور بظاہر انسانی اخلاق کی پاسداری کرنیوالے شخص کا ذہن بھی غلاظت اور گندگی کا ڈھیر نظر آتا۔ یوں لگتا جیسے یہ بیماری ایک پردہ ہے، جس نے اس کی شخصیت کے گٹر پر ڈھکن دے کر اس پر چونا ڈال رکھا ہے۔ ایسے میں ہمارے ایک استاد ایم اے ملک جنہیں شاعری سے
مزید پڑھیے


متاعِ غرور

جمعرات 02 اپریل 2020ء
اوریا مقبول جان
کیا عبرتناک منظر ہے۔۔۔ دنیا اپنی تمامتر رنگینیوں اور حشر سامانیوں کے ساتھ ہمارے اردگرد موجود ہے، لیکن انسان سے اس سے لطف اندوز ہونے کی صلاحیت چھین لی گئی ہے۔گذشتہ دو ماہ سے ایک بے کیف زندگی ہے جس کا فقط ایک مقصد ہے کہ کب اس قید سے رہائی نصیب ہو گی۔ کئی سو سال کی تگ و دو، محنت اور جستجو سے انسان نے پہیے کی ایجاد سے لے کر ٹیکنالوجی کے بامِ عروج پر پہنچنے تک، فضاؤں میں اڑنے کا خواب پورا کیا، اور آراستہ و پیراستہ ہوائی جہاز آسمان کی بلندیوں میں پرواز کرنے
مزید پڑھیے


عبرت پکڑو ۔ اے صاحبانِ بصیرت

اتوار 29 مارچ 2020ء
اوریا مقبول جان
کہاں ہیں وہ سیکولر، لبرل ملحدین جو کہا کرتے تھے کہ یہ اگر اللہ کا عذاب ہے تو امریکہ اور مغربی دنیا میں کیوں نہیں آتا، جہاں فحاشی، عریانی اور جنسی بے راہ روی سمیت تمام برائیاں عروج پر ہیں۔ کدھر ہیں وہ دانشور جو اللہ کے فیصلوں پر طعن وتشنیع کرتے ہوئے کہتے تھے کہ اللہ کا عذاب صرف غریبوں پر ہی کیوں آتا ہے۔ دیکھو!جن ملکوں نے زلزلوں سے بچنے کے لیے انتظامات کرلیے ہیں، وہاں اللہ کا عذاب اگر زلزلے کی صورت آ بھی جائے تو وہ انکا کچھ نہیں بگاڑ سکتا۔ لیکن آج تو اس ٹیکنالوجی
مزید پڑھیے


کیا آخری کڑی ٹوٹ چکی ہے

هفته 28 مارچ 2020ء
اوریا مقبول جان
دنیا کے ہر ضروری سمجھے جانے والے کاروبارِ زندگی کو معمول کے مطابق چلانے کے لئے ''کرونا'' کی اس خوفناک وبا میں بھی انتظامات کیے جا رہے ہیں۔ حتیٰ کہ پوری دنیا پر غیر محسوس طریقے سے حکومت کرنے والے میڈیا کا کسی بھی ملک میں ایک ٹیلی ویژن چینل، ایک ریڈیو سٹیشن یا آباد نشریاتی ادارہ بند نہیں کیا گیا۔ حرمِ کعبہ، مسجد نبوی، کربلا، مشہد، جامعہ مسجد دہلی، الازہر، بادشاہی مسجد لاہور سے لے کر مسلم دنیا میں لاتعداد مساجد کے پہلو میں بے شمار ٹیلی ویژن چینل مسلسل اپنی نشریات جاری رکھے ہوئے ہیں۔ دنیا بھر کی
مزید پڑھیے