BN

اوریا مقبول جان


سول سروس ریفارمز:تباہی پر مہر تصدیق ……(قسط 3)


قیام پاکستان کے بعد پورے ملک کا انتظام و انصرام اسی سول سروس کے ذمہ تھا، جس کی وجہ سے ایک گھنٹے کے لیے بھی امورِ سلطنت کی انجام دہی میں خلل نہیں پڑا۔ تمام کاروبار سلطنت بالکل ویسے ہی چلتا رہا، حالانکہ جیسی افتاد اس زمانے میں ٹوٹیں اور جس طرح کی بے سر و سامانی کا عالم تھا اگر سرکاری مشینری مضبوط نہ ہوتی تو یہ نو زائیدہ ملک آغاز میں ہی ہمت ہار جاتا۔ دس لاکھ لوگ سرحد کے آر پار جان سے ہاتھ دھو بیٹھے تھے اور لاکھوں مہاجرین کے قافلے کیمپوں میں پڑے ٹھکانوں کے
هفته 22 فروری 2020ء

سول سروس ریفارمز :تباہی پر مہر تصدیق …قسط 2

جمعه 21 فروری 2020ء
اوریا مقبول جان
پاکستان کی سول سروس ابھی تک انہی خطوط پر استوار ہے، جن پر اسے برطانوی سامراج نے اپنے اقتدار کی مضبوطی اور استحکام کے لیے قائم کیا تھا۔ برطانیہ نے بھی اپنا انتظامی ڈھانچہ ان بنیادوں پر استوار کیا تھا جوپہلے سے مغلیہ دور میں موجود تھیں۔ پورے ہندوستان کو ضلع، پرگنہ اور صوبہ وغیرہ کی تقسیم سے ایک انتظامی اختیاراتی درجہ بندی میں بانٹا گیا تھا۔ چانکیہ کی ارتھ شاستر، البیرونی کی تاریخِ ہند اور آئین اکبری سے لے کر ماثر عالمگیری تک ہر بڑی تاریخی کتاب میں برصغیر کے اس شاندار انتظامی ڈھانچے اور انتہائی کامیاب سول سروس
مزید پڑھیے


سول سروس ریفارمز:تباہی پر مہر تصدق

جمعرات 20 فروری 2020ء
اوریا مقبول جان
ڈیڑھ سال کے بعد عمران خان صاحب کی سول سروسز ریفارمز کمیٹی کی پٹاری سے جو برآمد ہوا ہے اس نے ہر بددیانت، چور، کرپٹ سیاستدان اور ہر طالع آزما، ہوسِ اقتدار میں غرق، مسند اقتدار پر موجود شخص کے ہاتھ میں ایک ایسا چابک تھما دیا ہے، جس کے خوف سے اعلیٰ سے اعلیٰ اور ادنی سے ادنیٰ سرکاری ملازم،ایک سدھائے ہوئے خوف زدہ ریچھ کی طرح انکے حکم پر ناچے گا۔ خان صاحب کی ٹیم کی ان ریفارمز میں ایمانداری کی حفاظت، غلط احکامات سے انکار، اور بددیانت وزراء وزرائے اعلیٰ اور وزرائے اعظم کے سامنے سینہ سپر
مزید پڑھیے


اسلامی جمہوری سیاست کا المیہ

اتوار 16 فروری 2020ء
اوریا مقبول جان
کس قدر عبرت کا مقام ہے کہ اللہ تبارک و تعالیٰ نے قرآن پاک میں شیطان کے حربوں اور چالوں میں سے کامیاب ترین چال مفلسی کا خوف قرار دیا ہے، فرمایا ''شیطان تمہیں مفلسی سے ڈراتا ہے اور تمہیں بے حیائی کا حکم دیتا ہے (البقرہ:268)، اور آج پوری امت مسلمہ کی مذہبی و سیاسی قیادت پوری قوت سے ایک ارب ساٹھ کروڑ مسلمانوں کو مفلسی کے خوف سے مسلسل ڈرائے چلی جا رہی ہے۔ وہ ایک اہم ترین ذمہ داری جو شیاطین نے اپنے ذمہ لے رکھی تھی اس کا بوجھ ہلکا کرنے کے لیے بڑے بڑے صاحبان
مزید پڑھیے


ہم رہنے والے ہیں اسی اجڑے دیار کے

هفته 15 فروری 2020ء
اوریا مقبول جان
اشفاق احمد اور بانو قدسیہ کا مسکن ''داستان سرائے'' بھی بک گیا۔ اسے بکنا ہی تھا، ہم نے پہلے کونسی اہل علم و دانش کی نشانیاں سنبھال رکھی ہوئی ہیں۔ کوئی جانتا ہے کہ مال روڑ اور ہال روڈ لاہور کے سنگھم پر ایک خوبصورت عمارت لکشمی مینشن ہے جسے پلازوں کی بھرمار اور بل بورڈوں کی یلغار چھپائے بیٹھی ہے۔اس بے ہنگم ترقی کے شور میں دبی ہوئی اس عمارت میں کبھی سعادت حسن منٹو رہا کرتا تھا، ایک دنیا آج جس کے افسانوں کی دیوانی ہے، جہاں اردو کے صاحب طرز ادیب مولانا محمد حسین آزاد کا
مزید پڑھیے



حوصلہ مند بہادر، جرأت مند

جمعه 14 فروری 2020ء
اوریا مقبول جان
یہ بہت حوصلہ مند، بہادر اور جرأت مند سیاسی لیڈر،انسانی حقوق کے علمبردار اور دانشور کالم نگار ہیں جو جرم کی سنگینی، وحشت، درندگی اور مقتول معصوم بچوں کی بے بسی کو جانتے ہوئے بھی مجرم کی عزت کیلئے سرعام سزا کی مخالفت کر رہے ہیں۔شاید اس لیے کہ ان میں سے کسی ایک نے بھی ایسی تکلیف دہ راتیں اور اذیت ناک دن نہیں گزارے کہ جب ان میں سے کسی کی بیٹی یا بیٹا اچانک غائب ہو جائے، اور وہ اس کی تلاش میں سرگرداں سر پٹکتے رہیں، انہیں طرح طرح کے خیالات گھیر لیں،انہیں رہ رہ کر
مزید پڑھیے


ایک بیوروکریٹ اور تبدیلی کے خواب کی تکمیل

جمعرات 13 فروری 2020ء
اوریا مقبول جان
اس بات کا ادراک مجھے آج سے پینتیس سال قبل سول سروسز اکیڈمی کی دو سالہ ٹریننگ کے دوران ہی ہو گیا تھا کہ پاکستان کے زوال، پستی، خرابی، غربت، کرپشن اور دیگر مسائل کی وجہ جہاں لاکھوں بیوروکریٹوں کا ٹولہ ہے، وہیں اس مرض کو بھی صرف اور صرف چند اہل اور جذبے سے سرشار بیوروکریٹ ہی ٹھیک کر سکتے ہیں۔ اس کی بنیادی وجہ یہ ہے کہ انتظامی مشینری کی پیچیدگی سے یہی لوگ واقف ہوتے ہیں اور اس مشینری کو مزید پیچیدہ تر بنانے میں بھی مہارت رکھتے ہیں۔انہیں ہی علم ہوتا ہے کہ عوام کے وسائل
مزید پڑھیے


کمرے میں ہاتھی

اتوار 09 فروری 2020ء
اوریا مقبول جان
بنائوٹی ‘ جھوٹی اور گھڑی ہوئی کہانیوں کو انگریزی زبان میں فیبلر(Fables)کہتے ہیں۔ روس کے شہر ماسکو میں زار روس کے زمانے میں ایک ایسا شخص مشہور تھا جو ایسی کہانیاں لکھنے میں یدطولیٰ رکھتا تھا۔ یہ شخص ایوان کرائیلو(ivan Krylov)اپنی ان تحریروں کی وجہ سے بہت مشہور ہوا۔ حالانکہ وہ شاعر ‘ ڈرامہ نگار‘ناول نگار‘ مترجم اور سب سے بڑھ کر صحافی بھی تھا۔ اس نے 1814ء میں ایک بنائوٹی اور جھوٹی کہانی یعنی فیبل تحریر کی جس کا نام تھا متجسس آدمی(inquisitive man) اس کہانی میں ایک شخص عجائب گھر کی سیر کے لئے جاتا ہے اور وہاں
مزید پڑھیے


پاکستانی معیشت،غلام عبّاس کا اوور کوٹ اور عمران خان

هفته 08 فروری 2020ء
اوریا مقبول جان
یہ بالکل درست ہے کہ عمران خان کو ایک ایسا اجڑا ہوا اور برباد پاکستان ملا جس کی حالت غلام عباس کے افسانے ''اوور کوٹ'' جیسی تھی۔ جس کا ہیرو ایک انتہائی خوش پوشاک شخص ہوتا ہے جو بہترین لباس پہنے، اوور کوٹ زیب تن کیے، ہیٹ سر پر رکھے مٹر گشت کر رہا ہوتا ہے اور اچانک کسی گاڑی کی زد میں آکر انتقال کر جاتا ہے۔ ہسپتال میں سنگ مر مر کی میز پر لٹا کر جب پوسٹ مارٹم کے لیے اس کے کپڑے اتارے جا رہے ہوتے ہیں تو اس کی غربت و افلاس اورکسمپرسی سامنے آتی
مزید پڑھیے


تو نے کیا دیکھا نہیں مغرب کا جمہوری نظام

جمعه 07 فروری 2020ء
اوریا مقبول جان
بدنما جمہوری تاریخ کے چہرے پر 5 فروری 2020 کی تاریخ بھی ایک اور داغ کی صورت ہمیشہ یاد رہے گی، جب 53 ووٹوں کی اکثریت نے 47 ووٹوں کی اقلیت پر اپنا آمرانہ فیصلہ مسلط کرتے ہوئے یہ اعلان کیا کہ ہم انصاف اور عدل کے کسی بھی تقاضے کو نہیں مانتے۔امریکی صدر، ڈونلڈ ٹرمپ چونکہ رپبلکن پارٹی سے تعلق رکھتا ہے،اس لیے ہم اس کے جرائم کے ثبوتوں کے باوجود اسے سزا دینے کی اجازت دیں گے اور نہ ہی اسے کسی مقدمے کا سامنا کرنے دیں گے۔ وہ بدستور اگلے الیکشن تک جمہوری نظام کے سب سے
مزید پڑھیے