Common frontend top

ڈاکٹر احمد سلیم


’’شنگھائی تعاون تنظیم کا سربراہی اجلاس‘‘


شنگھائی تعاون تنظیم کے ممبر ممالک کے سربراہان مملکت کا سالانہ اجلاس رواں ماہ کی تین اور چار تاریخ کو قازقستان میں ہوا جس میں پاکستان کی نمائندگی ہمارے وزیر اعظم نے کی۔ شنگھائی تعاون تنظیم کا قیام ، 1996 میں چین کے ایما اور روس کے تعاون سے بننے والی تنظیم ’’ شنگھائی فائیو‘‘ کے بطن سے 15 جون 2001 کو ہوا۔ بیلاروس کی شمولیت کے بعد اب اس کے ممبر ارکان کی تعداد بشمول انڈیا اور پاکستان دس ہو چکی ہے جن میں چین اور روس کے علاوہ ایران، قازقستان ، کرغزستان ، تاجکستان اور ازبکستان شامل ہیں۔
پیر 15 جولائی 2024ء مزید پڑھیے

امریکہ یا چین؟

منگل 09 جولائی 2024ء
ڈاکٹر احمد سلیم
روائتی طور پر پاکستان امریکہ (اور مغرب) کا حلیف سمجھا جاتا تھا جبکہ بھارت اور روس کے مابین قریبی دوستانہ تعلقات تھے۔ سویت یونین کے عالمی منظر سے ہٹنے اور پھر عالمی شطرنج میں ایک بار پھر ’’روس‘‘ کے اہمیت اختیار کر نے اور ساتھ ساتھ چین کی جانب سے امریکہ کی ’’واحد عالمی سوپر پاور‘‘ کی پوزیشن کو چیلنج کرنے کے بعد دنیا کے حالات پیچیدہ بھی ہو گئے ہیں ۔ افغانستان میں پاکستان دوست حکومت کے قیام اور کم از کم ایک سائیڈ کا بارڈر مکمل محفوظ ہونے کا خواب بس خواب ہی رہ
مزید پڑھیے


ہمارے سپیشل پرسن!

پیر 01 جولائی 2024ء
ڈاکٹر احمد سلیم
معذور افراد کے لے آجکل ’’ سپیشل پرسن‘‘ کا لفظ استعمال کیا جاتا ہے۔ معذور ی کا مطلب ہے کہ کوئی فرد کچھ کرنے سے قاصر ہے۔ یہ ’’کچھ‘‘ کوئی جسمانی کام بھی ہو سکتا ہے اور ذہنی بھی۔ جسمانی معذوری تو نظر آ جاتی ہے ذہنی معذور ی یا دوسرے الفاظ میں ’’ ذہنی طور پر سپیشل پرسنز‘‘ کے بارے میں مشکل یہ ہے کہ ان میں سے اکثر نہ تو اپنے آپ کو ذہنی معذور سمجھتے ہیں اور نہ ہی انکے گھر والے انکی ’’ خاص ضرورتوں ‘‘ کو سمجھنے اور ماننے کو تیار ہوتے ہیں۔ بدقسمتی سے
مزید پڑھیے


مودی سرکار اور پاکستان!

پیر 24 جون 2024ء
ڈاکٹر احمد سلیم
نریندر مودی نے ایک بار پھر الیکشن میں کامیابی حاصل کر کے رواں ماہ کی 9 تاریخ کو تیسری مرتبہ بھارت کے وزیر اعظم کی حیثیت سے حلف اٹھا لیا ہے۔ جواہر لعل نہرو کے بعد مودی جی دوسرے بھارتی لیڈر ہیں جنہوں نے لگاتار تیسری مرتبہ بھارت کا وزیر اعظم منتخب ہونے کا شرف حاصل کیا ہے۔ ایک جانب تو ان کے گزشتہ دور حکومت کے آخری سال میں بھارتی معیشت کی ترقی کی رفتار 8.2 فیصد رہی جبکہ گزشتہ دس برسوں میں بھارت دنیا کی پانچویں بڑی معیشت بن کر ابھرا ہے دوسری جانب مودی سرکار نے
مزید پڑھیے


قربانی!

پیر 17 جون 2024ء
ڈاکٹر احمد سلیم
لفظ ’’ قربانی‘‘ کا مادہ عبرانی زبان کے لفظ ’’ قوربان‘‘ سے نکلا ہے جس کے معنی ہیں۔ کسی ( یعنی خدا) کے نزدیک ہونے کے لیے کچھ پیش کرنا۔ سریانی زبان میں اس کے لیے لفظ ’’ قربانا‘‘ استعمال ہوتا تھا جس سے مراد لی جاتی تھی کہ خدا کی قربت حاصل کرنے کے لیے کوئی جانور یا قیمتی چیز پیش کرنا ۔ ان زبانوں سے یہ لفظ عربی میں آیا۔ عربی میں اس کا مقبول مطلب اللہ تعالیٰ کی خوشنودی اور انعام پانے کی غرض سے کوئی جانور قربان کرنا ہے ۔ سب سے اہم قربانی حضرت ابراہیم
مزید پڑھیے



چھ روزہ جنگ کے نتائج!

پیر 10 جون 2024ء
ڈاکٹر احمد سلیم
جدید تاریخ اور بین الاقوامی تعلقات پر نظر رکھنے والا کوئی بھی طالب علم اس بات سے انکار نہیں کر سکتا کہ آج کا دن یعنی ۱۰ جون عالمی سیاست اور خاص طور پر مسلمانوں اور عرب ممالک کی سیاست کے لیے اہم ترین دین تھا۔ مسلمانوں کی موجودہ زبوں حالی اور عالمی معیشت پر صیہونی غلبے کی بنیاد آج کے دن رکھ دی گئی تھی جب دس جون 1967 کو چھ روزہ عرب اسرائیل جنگ کا خاتمہ تین بڑے عرب ممالک، مصر، اردن اور شام کی شکست پر ہوا تھا۔ جنگ کے نتیجے میں اسرائیل گولان کی پہاڑیوں، اردن
مزید پڑھیے


3جون کا منصوبہ!

پیر 03 جون 2024ء
ڈاکٹر احمد سلیم
آج کے دن یعنی تین جون 1947 کو تقسیم ہند اور پاکستان کے قیام کا اصولی فیصلہ ہوا تھا جسے تاریخ میں ’’ تین جون کے منصوبے ‘‘ یا ’’ لارڈ مائونٹ بیٹن پلان ‘‘ کے نام سے یاد کیا جاتا ہے۔ دو اور تین جون کی درمیانی شب، کانگریس اور مسلم لیگ کے رہنمائو ں نے لارڈ مائونٹ بیٹن سے ملاقات کی ۔ ان ملاقاتوں میں مسلم لیگ سے برصغیر کے مسلمانوں کے رہنمائو ں کے طور پر قائد اعظم محمد علی جناح، لیاقت علی خان اور سردار عبدالرب نشتر، ہندوئوں کے نمائندہ کی حیثیت سے جواہر لعل نہرو،
مزید پڑھیے


زراعت کو صنعت کا درجہ اور جدت دیں!

پیر 27 مئی 2024ء
ڈاکٹر احمد سلیم
کسانوں کو گندم کا جو بھی ریٹ مل رہا ہو ہم اس بات سے انکار نہیں کر سکتے کہ پاکستان ایک زرعی ملک ہے۔یہ الگ بات ہے کہ دنیا کی بہترین زرخیز زمین اور کسی وقت دنیا کا سب سے بڑا نہری نظام رکھنے کے باوجود ہم نے اپنے بچوں کو کورس کی کتب میں پڑھایا تو ضرور کہ پاکستان ایک زرعی ملک ہے لیکن حقیقی طور پر کبھی زراعت کو حقیقی اہمیت نہیںدی ۔ آج حالات اس نہج پر پہنچ چکے ہیں کہ خریدار ہو تو گندم نہیںہوتی اور اب اگر گندم ہے تو خریدار نہیں۔ جس طرح
مزید پڑھیے


ہمارا ’’استاد‘‘

پیر 20 مئی 2024ء
ڈاکٹر احمد سلیم
کہنے کو استاد قوم کے معمار ہیں لیکن ہمارے معاشرے کی بدقسمتی اور تلخ حقیقت یہ ہے کہ قیام پاکستان سے اب تک جو پیشے سب سے زیادہ معاشی اور معاشرتی بد حالی کا شکار ہیں ان میں سے ایک ٹیچنگ ہے اور جو ادارہ سب سے زیادہ تنزلی کا شکارہے وہ محکمہ تعلیم ہے۔ ہمیں تو یہی معلوم نہیں کہ طالب علموں کو ’’پڑھانا‘‘ کیا ہے اور ’’سکھانا‘‘ کیا ہے۔ ہمارے یہاں اب کسی بڑے ادارے کے اچھے استاد کا تصور بھی کریں تو ذہن میں ایک ایسے شخص کی تصویر بنتی ہے جو کچھ
مزید پڑھیے


تعلیمی ایمرجنسی اور استاد کی عزت!

پیر 13 مئی 2024ء
ڈاکٹر احمد سلیم
گزشتہ دنوں اسلام آباد میں ایک تقریب سے خطاب کرتے ہوئے وزیر اعظم صاحب نے ملک میں ’’ تعلیمی ایمرجنسی‘‘ نافذ کرنے کا اعلان کیا ہے۔ ویسے تو تعلیم ایک صوبائی معاملہ ہے لیکن انہوں نے یہ کہتے ہوئے کہ یہ ایمرجنسی تمام ملک کے لیے ہو گی اعلان کیا کہ ملک کے اڑھائی کڑوڑ سے زیادہ بچے جو بنیادی تعلیم کی نعمت سے محروم ہیں انہیں سکولوں میں داخل کر کے تعلیم کے زیور سے آراستہ کیا جائے گا۔ یونیسف کی ایک رپوٹ کے مطابق پاکستان کے دس برس کی عمر کے بچوں میں سے ستر فیصد سادہ تحریر
مزید پڑھیے








اہم خبریں