Common frontend top

ڈاکٹر احمد سلیم


صدائے العطش!


پانی زندگی ہے لیکن گرمیوں میںپانی کی ضرورت اوراہمیت ہم پر زیادہ شدت سے آشکارہ ہونے لگتی ہے۔ سنجیدگی سے غورکریںتو پاکستان کودریش مسائل میںاہم ترین ( معاشی مسائل سے بھی زیادہ) چیلنج ’’ پانی کی شدید کمی‘‘ ہے۔ جانے کیوںاس بارے میں نہ توکوئی سیاسی پارٹی سنجیدگی دکھاتی ہے نہ کوئی پالیسی بیان ہمیں نظر آتا ہے حالانکہ یہ زندگی اور موت کا مسئلہ ہے۔ ویسے تو اللہ تعالیٰ نے پاکستان کو بارشوں کے ساتھ ساتھ کئی بڑے دریائوں اور بڑے بڑے گلیشیئرز کی نعمت سے بھی نوازا ہے ۔ لیکن ہماری شدید بد قسمتی ہے کہ اس نعمت
پیر 01 مئی 2023ء مزید پڑھیے

درپیش مسائل ا ور ترجیحات!

پیر 17 اپریل 2023ء
ڈاکٹر احمد سلیم
گزشتہ ہفتے جمعرات اور جمعہ کی درمیانی شب جنوبی لبنان کے علاقے سے ۳۴ راکٹ اسرائیل پر داغے گئے۔ اسرائیل کے مطابق ان میں سے پچیس کو تباہ کر دیا گیا لیکن پانچ اسرائیل پر گرے ، جس کے نتیجے میں کم از کم دو اسرائیلی مارے گئے۔ یہ راکٹ کس تنظیم نے داغے یہ تو معلوم نہیں لیکن اس سے قبل اسرائیلی دو روز سے مسجد اقصیٰ پر حملہ آور تھے اور بظاہر یہ راکٹ حملے دراصل مسجد اقصیٰ کی ہونے والی بے حرمتی کا رد عمل تھے۔ ان حملو ںکے فوراََ بعد اسرائیل نے لبنان پر گولہ باری
مزید پڑھیے


سالگرہ مبارک ، لیکن!

پیر 10 اپریل 2023ء
ڈاکٹر احمد سلیم
آج دنیاوی لحاظ سے پاکستان کی سب سے مقدس دستاویز کی سالگرہ ہے۔ ہم تمام سیاستدانوں اور حکمرانوں سے ہمیشہ 73 کے آئین کے حوالے اور اس آئین کی سربلندی کے لیے جد و جہد کے وعدے اور دعوے سنتے ہیں۔ کوئی پارٹی اس آئین کی خالق ہونے کی دعویدار ہے تو کوئی اس آئین کی حفاظت کی ذمہ داری اپنے کاندھوں پر اٹھانے کی ۔ عوام بیچاری پہلے بھی خاک میں بیٹھی تھی اور اب بھی وہیں ہے۔ بھارت اور پاکستان کو ایک ساتھ آزادی ملی۔ بھارت میں آزادی کے دو برس بعد ہی، 26 نومبر 1949ء کو بھارت
مزید پڑھیے


یہ کس کا پاکستان ہے؟

پیر 03 اپریل 2023ء
ڈاکٹر احمد سلیم
ویسے تو یہ الفاظ کہ پاکستان تاریخ کے مشکل ترین دوراہے پر کھڑا ہے اور اسے بڑے بحران کا سامنا ہے ، سیاسی بیانات لگتے ہیںاور ہم پر کچھ زیادہ اثر نہیں ڈالتے کیونکہ ہم بچپن سے ہی سیاستدانوں کی تقاریر میں یہ فقرے سنتے آئے ہیں۔ نہ سیاستدان اور حکمران تبدیل ہوئے اور نہ پاکستان کا راستہ ۔ بلکہ شاید پاکستان کسی راستے پر چلا ہی نہیں اور اب تک اسی دوراہے پر کھڑا سوچ رہا ہے کہ کدھر کو جائے۔ لیکن آج کی تاریخ میں ہم اگر پاکستان کے حالات کا جائزہ لیں تو معلوم ہوتا ہے کہ
مزید پڑھیے


اسلامی دنیا کے لیے بڑی خبر!

پیر 27 مارچ 2023ء
ڈاکٹر احمد سلیم
رواں ماہ عالمی سیاسی منظر نامہ میں خاص طور پر مسلم دنیاکے لیے سب سے اہم خبر تو دو طاقت ور اسلامی ممالک کے بارے میں آئی ہے۔ ایران اور سعودی عرب نے چینی مدد سے مذاکرات کے بعد یہ اعلان کیا ہے ان دونوں ممالک، جو کئی دہائیوں سے ایک دوسرے کے کھلے حریف تھے ، مخالفت کا راستہ چھوڑ کر دوستی اور تعاون کے راستے کو اپنانے کا فیصلہ کیا ہے اور دونوں ممالک دو ماہ کے اندر اندر سفارتی تعلقات بھی بحال کریں گے۔ یاد رہے کہ دونوں ممالک میں 2016ء سے سفارتی تعلقات نہیں ہیں۔ یہ
مزید پڑھیے



رمضان المبارک: پاکستان بمقابلہ کفار کے دیس۔

پیر 20 مارچ 2023ء
ڈاکٹر احمد سلیم
رمضان المبارک چند دنوں کی دوری پر ہے۔ ہر برس کی طرح ہم ذہنی طور پر تیار ہیں کہ ملک میں پہلے سے موجود مہنگائی میں ایک دم ہوشربا اضافہ ہو گا۔ کھانے پینے کی عام اشیأ جیسے پیاز، آٹا ، سبزیاں پھل ایک دم کئی گنا مہنگے ہو جائیں گے۔ اسلامی جمہوریہ پاکستان کے تاجر، گرانفروش اور ذخیرہ اندوز رمضان المبارک کا جشن منائیں گے اور حکومت اشیأ خوردنوش کے رعائتی قیمتوں پر دستیاب ہونے کا دعویٰ کریگی۔ اس سلسلے میں مقامی حکومتیں ریٹ لسٹیں بھی جاری کریں گی۔ ویسے تو یہ لسٹیں سارا سال روزانہ جاری کی جاتیں
مزید پڑھیے


عورت مارچ : عورت کے حقوق پر ڈکیتی!

بدھ 08 مارچ 2023ء
ڈاکٹر احمد سلیم
گزشتہ کچھ برسوں سے مارچ کے مہینے کا آغاز ہوتے ہی پورے پاکستان خاص طور پر بڑے شہروں میں عورت مارچ کو لے کر ایک بحث کا آغاز ہو جاتاہے۔ اس برس بھی ایسا ہی ہوا ہے اور عورت مارچ والے آٹھ تاریخ کو لاہور میں عورت مارچ کرنا چاہ رہے ہیں جس کی اجازت دینے سے لاہور کی ’’عورت ڈپٹی کمشنر ‘‘ نے بہت سی ’’درست وجوہ‘‘ کی بنا پر انکار کر دیا ہے۔ قوی امکان ہے کہ ’’مبینہ عورت مارچ‘‘ کے منتظمین ہائی کورٹ کے ذریعے کسی نہ کسی طرح آزاد یٔ اظہار کے نام پر اس مارچ
مزید پڑھیے


جاوید اختر کی باتوں کا برا کیا منانا!

پیر 27 فروری 2023ء
ڈاکٹر احمد سلیم
کمرشل فلم کا کامیاب گیت نگار یا کہانی کار ہونے کا مطلب اچھا ادیب شاعر یا دانشور ہونا بالکل بھی نہیں ہوتا۔ کمرشل فلموں میں تو ’’کتنے آدمی تھے کالیا‘‘ اور ’’ ڈان کا انتظار تو گیارہ ملکوں کی پولیس کر رہی ہے ‘‘ بھی ہٹ ہو جاتا ہے۔ جاوید اختر کے قلم سے نکلے ان معروف فلمی جملوں کی کوئی ادبی حیثیت ہے؟ سنجیدہ ادیب اور دانشور ہونے کے لیے صاحب قلم کی شاعری اور تحریروں میں کوئی نظریہ اور زندگی میں نظریاتی جدو جہد کا ہونا ضروری ہوتا ہے ۔ جیسے ایک دانشور یا ادیب جانتا ہے کہ
مزید پڑھیے








اہم خبریں