BN

سعد الله شاہ


پولیو : عمر بھر کی معذوری!


ہم ہیں پھولوں جیسے بچے ہم ہیں سب کو پیارے اپنے دم سے گھر ہے روشن ہم ہیں آنگن تارے آنگن آنگن تارے میرے پیارے قارئین!مندرجہ بالا مکھڑا بچوں کے ایک رنگ رنگ پروگرام آنگن آنگن تارے۔ کے ٹائٹل سانگ کا ہے جسے آغا ذوالفقار خاں نے پی ٹی وی سے پیش کیا تھا۔ امجد بوبی نے اس کی کمپوزیشن کی تھی اور ارم حسن نے پہلی مرتبہ گایا اور اس کے بعد عمیر ضیا اور حدیقہ کیانی نے بھی اسے دہرایا۔مجھے وہ سب ننھے منے بچے ایک ایک کر کے یاد آ رہے ہیں۔ یہ 1992ء کی بات ہے اب تو وہ بچے
هفته 24 اکتوبر 2020ء

ووٹ کو عزت صرف مشرف نے دی

جمعه 23 اکتوبر 2020ء
سعد الله شاہ
توڑ ڈالے ہیں جو دریا نے کنارے سارے کوئی دیکھے گا تہہ آب نظارے سارے نظر انداز کیا میں نے بھی دنیا کو اور دنیا نے بھی قرض اتارے سارے دریا اپنے کناروں میں بہتا اچھا لگتا۔ جب یہ بپھر جائے تو اپنے ہی کنارے توڑ دیتا ہے اور دوسروں کے لئے بھی تباہی کا باعث بنتا ہے۔ گرنا تو اسے پھر بھی سمندر میں ہوتا ہے’’میں تو دریا ہوں سمندر میں اتر جائوں گا’’کہہ کر احمد ندیم قاسمی نے وحد الوجود کی جانب ہی اشارہ کیا ہے۔ میں تو مگر دریا تک ہی بات محدود رکھوں گا۔ یہ دریائے سندھ ہے جس کی
مزید پڑھیے


Life witachout Limits

جمعرات 22 اکتوبر 2020ء
سعد الله شاہ
پھول خوشبو کے نشے ہی میں بکھر جاتے ہیں لوگ پہچان بناتے ہوئے مر جاتے ہیں جن کی آنکھوں میں آنسو، انہیں زندہ سمجھو پانی مرتا ہے تو دریا بھی اتر جاتے ہیں میرے پیارے قارئین! آج سیاست پر ہرگز بات نہیں ہوگی کیونکہ میں ان لوگوں کے حوالے سے کچھ تحریر کرنے جارہا ہوں جو واقعتاً زندہ لوگ ہیں انسان کو انسان سمجھتے ہوئے اس کے دکھ درد کا احساس رکھتے ہیں۔ جن کی آنکھوں کا پانی مرا نہیں ہے۔ اصل میں یہی لوگ اس قوم کا اثاثہ ہیں جی میں سمندری میں ہونے والے سیمینار کا تذکرہ چھیڑوں گا جو عتیق الرحمن
مزید پڑھیے


چاند پر پلاٹ

پیر 19 اکتوبر 2020ء
سعد الله شاہ

مجھ کو میری ہی اداسی سے نکالے کوئی

میں محبت ہوں محبت کو بچا لے کوئی

میں سمندر ہوں مری تہہ میں صدف ہے شاید

موج در موج مجھے آ کے اچھا لے کوئی

آج تو ہم نے سیا ست پربات نہیں کرنی۔ آج نفرت نہیں بلکہ محبت کی بات ہو گی۔ وجہ یہ کہ میرے سامنے ایک ایسی انوکھی اور دلچسپ خبر ہے کہ جس نے سب کو حیران کر دیا کہ جھنگ کے ایک رانجھے نے بیوی کے لئے چاند پر پلاٹ خرید لیا ہے۔ یعنی بیوی کے ساتھ محبت ہو تو ایسی ہو اور یہ پہلا شخص ہے کہ جس نے
مزید پڑھیے


کچھ نہ کچھ ہو رہا ہے

جمعرات 15 اکتوبر 2020ء
سعد الله شاہ
کسی کی نیند اڑی اور کسی کے خواب گئے سفینے سارے اچانک ہی زیر آب گئے ہمیں زمیں کی کشش نے کچھ اس طرح کھینچا ہمارے ہاتھ سے مہتاب و آفتاب گئے ٹائٹینک نے Titanicکے ڈوبنے کا منظر تو آپ سب نے دیکھا ہو گا۔وہ اگرچہ فلم ہے پھر بھی ہولناکی دیکھی نہیں جاتی۔ میں آپ کو اداس نہیں کرنا چاہتا۔اخبار تو مجھے پڑھنا پڑتا ہے اور کافی کچھ دیکھنا ہوتا ہے کہ اگر آپ پڑھ کر کالم نہیں لکھتے تو آپ کو بھی کوئی نہیں پڑھتا۔زیادہ پڑھ پڑھ کر آنکھیں تھک جاتی ہیں۔ آنکھوں کے سامنے دھند سی آنے لگی ہے شاید آنکھیں
مزید پڑھیے



مہنگائی کے خلاف جنگ اور مشکلات

بدھ 14 اکتوبر 2020ء
سعد الله شاہ
بے ربط کر کے رکھ دیے اس نے حواس بھی جتنا وہ دور لگتا ہے اتنا ہے پاس بھی میں سوچتا ہوں اس کی رسائی کے بعد کا کچھ کچھ میں خوش ہوا ہوں تو کچھ کچھ اداس بھی اس بات میں عجیب ایمائیت ہے کہ ایک گندے انڈے نے سارے انڈے خراب کردیئے یا پھر گندے انڈوں میں اچھا انڈا بھی خراب ہوگیا۔ مسئلہ تو یہ ہے ہی نہیں۔ مسئلہ یا تشویش یہ ہے کہ چوزوں تک نوبت ہی نہیں آئی۔ ہمارے حواس پر مخدوش فردا سوار ہے کہ اب بنے گا کیا۔ یہ ایک انار سو بیمار والے محاورے سے بھی آگے
مزید پڑھیے


سیاسی ‘سوشل اور ادبی چائے

پیر 12 اکتوبر 2020ء
سعد الله شاہ
محفل سے اٹھ نہ جائیں کہیں خامشی کے ساتھ ہم سے نہ کوئی بات کرے بے رخی کے ساتھ اپنا تو اصل زر سے بھی نقصان بڑھ گیا سچ مچ کا عشق مر گیا اک دل لگی کے ساتھ معزز و محترم قارئین:ڈاکٹر نے سیاسی تحریر سے پرہیز بتایا ہے اس لئے آج ذرا چٹ پٹی اور کٹھی میٹھی باتیں ہونگی مگر یہ دانشمندی کی جھلکیاں ہونگی جنہیں Intellectual flashes کہتے ہیں۔ مگر سیاست میں بھی یہ دلچسپ مرحلہ آیا ہے کہ بغاوت کیس میں ن لیگی رہنما خود گرفتاری دینے کے لئے شاہدرہ تھانہ پہنچ گئے اور پولیس انہیں گرفتار کرنے سے انکاری
مزید پڑھیے


لاک ڈائون کے بعد پہلا مشاعرہ

هفته 10 اکتوبر 2020ء
سعد الله شاہ
ہم کہ چہرے پہ نہ لائے کبھی ویرانی کو کیا یہ کافی نہیں ظالم کی پشیمانی کو جس میں مفہوم کوئی نہ کوئی رنگ غزل یار جی آگ لگے ایسی زباں دانی کو کیوں نہ آج ذرا زبان و ادب کی بات ہو جائے کہ مجھے ایک مشاعرہ کا حال بھی بیان کرنا ہے کہ لاک ڈائون کے طویل دورانیے کے بعد حلقہ ارباب ذوق کے بعد یہ دوسری ادبی تقریب تھی جو انتہائی نفیس الطبع شاعر علی صدف نے اپنے دولت خانے پر برپا کی تھی۔سچی بات یہ کہ ہم تو ترس گئے تھے سخن آرائی اور غزل سرائی کو مشاعرہ پر مستزاد
مزید پڑھیے


دو آتشہ کالم

بدھ 07 اکتوبر 2020ء
سعد الله شاہ
دل سے کوئی بھی عہد نبھایا نہیں گیا سر سے جمال یار کا سایہ نہیں گیا ہاں ہاں نہیں ہے کچھ بھی میرے اختیار میں ہاں ہاں وہ شخص مجھ سے بھلایا نہیں گیا تو جناب! دل پر کس کو اختیار ہے وہ بے بس ہے اگر کسی کے لیے بے قرار ہے۔ آپ کس کس پر قدغن لگائیں گے کہ فلاں ابن فلاں کو چھوڑ دو۔ آپ د ل کو تسخیر کرنے کا ہنر سیکھیں۔ وہی جو جگر نے کہا تھا جو دلوں کو فتح کرلے وہی فاتح زمانہ۔ لوگ تو حالات و واقعات کے باعث دل گرفتہ ہیں۔ کوئی دردمندی‘
مزید پڑھیے


الیکشن حلقۂ ارباب ذوق 2020ء

منگل 06 اکتوبر 2020ء
سعد الله شاہ
دربہاراں گل نوخواستہ سبحان اللہ جلوہ آرا ہے وہ بالواسطہ سبحان اللہ ایسا ہنستا ہوا چہرہ کہیں دیکھا ہی نہ تھا کہہ دیا میں نے بھی بے ساختہ سبحان اللہ اس غزل کا کمال یہ ہے کہ ردیف سبحان اللہ ہے تو ہر شعر پر ثواب کا امکان تو ہے میرے بہت ہی پیارے قارئین!آج میں سیاست کو مس نہیں کروں گا کہ ابھی کل حلقہ ارباب ذوق کے تازہ الیکشن ہوئے ہیں تو مجھے حق ادب ادا کرنا ہے۔ پاک ٹی ہائوس میں ہونے والے یہ الیکشن اس کافی ہائوس ہی کی طرح تاریخی اہمیت کے حامل ہیں۔ ہر سال یہاں رونق لگتی
مزید پڑھیے