Common frontend top

BN

سعد الله شاہ


ہم بیٹھے ہیں آگ لگائو!


وقت اس سے اور بڑھ کر کیا برا آنے کو ہے آسمانوں سے تو بس اب اک ندا آنے کو ہے راستے مشرق پہ سارے بند کس نے کر دیئے اور کہا مغرب سے اب تازہ ہوا آنے کو ہے اقبال کو یاد کرتے ہیں کہ اس نے کس امید سے کہا تھا‘ مشرق سے نکلے ہوئے سورج کو ذرا دیکھ۔ ہمارا تو مگر قبلہ بھی مغرب بنا ہوا ہے۔ سورج کا مغرب سے نکلنا، چاہیے محاورے اور حقیقت کے خلاف ہے مگر ایسا ہی ہے کہ سورج وہی ہے جسے سلام کیا جائے۔ ہم بھی تو ماتھا ٹیک چکے ہیں۔ اب بات کالونی
منگل 31 جنوری 2023ء مزید پڑھیے

عمران کے الزامات اور ردعمل

پیر 30 جنوری 2023ء
سعد الله شاہ
مجھ سا کوئی جہان میں نادان بھی نہ ہو کر کے جو عشق کہتا ہے نقصان بھی نہ ہو کچھ بھی نہیں ہوں میں مگر اتنا ضرور ہے بن میرے شاید آپ کی پہچان بھی نہ ہو وہی کہ ایسا تو پھر ہوتا ہے ،مایوس کیوں ہوتے۔حوصلہ کرو پانیوں پر بہار اترے گی، ایک صورت وہاں بنا رکھنا وقت روکے تو میرے ہاتھوں پر اپنے بجھتے چراغ لا رکھنا میڈیا پر ایک واویلا مچا رکھا ہے کہ اسمبلیاں توڑنے کی غلطی گلے پڑ گئی کمال ہے تھوڑا سینک پہنچا تو بلبلا اٹھے، جب کسی مقصد کے لئے اقدام کیا جاتا ہے تو پھر اس
مزید پڑھیے


فواد چوہدری کا دفعتاً ہیرو بننا

اتوار 29 جنوری 2023ء
سعد الله شاہ
ہم کو خوش آیا ترا ہم سے خفا ہو جانا سر بسر خواب کا تعبیر نما ہو جانا اپنی خواہش تری یادوں میں بھٹکتی ہے کہیں جیسے گلدشت میں تتلی کا فنا ہو جانا پھولوں میں اڑتے ہوئے رنگ آپ نے بھی دیکھے ہوں گے۔فطرت کی اپنی مہک ہوتی ہے اور پھر سبزے کی طراحت ۔ان دنوں تو گلاب بھی خوب کھل رہے ہیں اور سیاست میں بھی گل کھلائے جا رہے ہیں۔یہ جہان اسباب کی بو قلمونی مجھے بہت کھینچتی ہے۔کہیں بھی یکسانیت اور جمود نہیں ہے۔نرگسیت کا شکار لوگوں کی نظر اس طرف نہیں جاتی۔ہائے ہائے شاخ در شاخ سبک سار ہوائوں
مزید پڑھیے


قرضوں کی سکیم یا سیاسی سکیم

جمعرات 26 جنوری 2023ء
سعد الله شاہ
یہ بھی تماشہ دیکھ لیا خاص و عام نے رسوا کیا ہے تونے مجھے سب کے سامنے لوگوں کو ہے یہ دکھ کہ نہیں کام کچھ کیا بے کار کر کے رکھ دیا مجھ کو تو کام نے آج کچھ درد مرے دل میں سوا ہوتا ہے، سیاست اور معاشرت پر بھی بات کریں گے مگر دل چاہتا ہے کہ کچھ تخلیقی صورت حال آپ سے شیئر کروں کہ کچھ فہم و فکر کی ریاضت بھی ہو جائے۔جیسے شبیہ ابر ہو پانی سے منعکس۔میں رو رہا تھا اور تھا وہ میرے سامنے صحرا کے عین بیچ تو سچ مچ سراب تھا میں بڑھ رہا
مزید پڑھیے


بے خبری

بدھ 25 جنوری 2023ء
سعد الله شاہ
سانسوں میں کوئی خوف بسا لگتا ہے ہر جسم مجھے سر سے جدا لگتا ہے مشکل میں ہوں میں اور ہوں خود سے الجھا ہونا میرا دیکھو تو سزا لگتا ہے ہم سب کو ایک غیر یقینی صورت حال کا سامنا ہے۔ معاشرہ بری طرح سے تقسیم ہو چکا ہے۔ کل کے دوست آج کے دشمن اور اسی طرح کل تک ایک دوسرے کو قابل گردن زدنی قرار دینے والے ایک دوسرے سے بغل گیر ہیں۔ وقت پر گدھے کوباپ بنانے والا محاورہ صرف محاورہ ہی نہیں کہ محاورے تو ہمارے عمل سے بنتے ہیں۔ مکاری‘ عیاری اور بزدلی طفیلی لوگوں کا شیوہ ہے۔
مزید پڑھیے



وزیراعلیٰ پنجاب اور تاریخ

منگل 24 جنوری 2023ء
سعد الله شاہ
مت ہمیں چھیڑ کہ ہم رنج اٹھانے کے نہیں زخم وہ دل پہ لگے ہیں کہ دکھانے کے نہیں زندگی اپنے مقدر کا ستم ہے ورنہ کتنے کردار ہیں جو اپنے فسانے کے نہیں بات تو کچھ ایسی ہی ہے۔ اپنی خواشہات پر نہ دربند ہوتے ہیں نہ کھلتے ہیں۔ پھر بھی ایک پیہم جستجو اور ان تھک سعی سے ایسا کچھ ہو بھی جائے تو بعید نہیں۔ خود ہی اک روز نکل آئے گا دیوار سے در۔ ہم وہ خودسر ہیں کہ اب لوٹ کے جانے کے نہیں۔ محسن نقوی کو نگران وزیراعلیٰ پنجاب بنا دیا گیا اور انہوں نے حلف بھی اٹھا
مزید پڑھیے


فرد‘ معاشرہ اور تواضع

پیر 23 جنوری 2023ء
سعد الله شاہ
یہ جو پرشکستہ ہے فاختہ، یہ جو زخم زخم گلاب ہے یہ ہے داستاں میرے عہد کی ،جہاں ظلمتوں کا نصاب ہے میری جان ہونٹ تو کھول تو ،کبھی اپنے حق میں بھی بول تو یہ عجیب ہے تری خامشی ہے یہ سوال ہے کہ جواب ہے موجودہ حشر سا مانیوں میں کسی کو کچھ نہیں سوجھتا۔ ایک بے حسی کی سی کیفیت ہے۔ ایسے لگتا ہے کہ جیسے لوگوں میں بولنے کی ہمت نہیں رہی۔ ہمارے دوست ملک سعید بہت فکر مند تھے ، ان کا کہنا تھا کہ ڈوبتی ہوئی معیشت کی وجہ سے کیا ہوئے جا رہا ہے۔ ان کی
مزید پڑھیے


جو نہیں جانتے وفا کیا ہے

هفته 21 جنوری 2023ء
سعد الله شاہ
پھول خوشبو کے نشے ہی میں بکھر جاتے ہیں لوگ پہچان بناتے ہوئے مر جاتے ہیں جن کی آنکھوں میں ہوں آنسو انہیں زندہ سمجھو پانی مرتا ہے تو دریا بھی اتر جاتے ہیں دنیا کا چلن کچھ ایسا ہی ہے۔قدم قدم پر مشاہدہ ہوتا ہے اور تجربہ بھی، مگر انسان مچھلی کی طرح پتھر چاٹ کر ہی واپس آتا ہے ویسے بھی منزلیں ان کا مقدر کہ طلب ہو جن کو، بے طلب لوگ تو منزل سے گزر جاتے ہیں۔ پیرزادہ قاسم نے کہا تھا میں ایسے شخص کو زندوں میں کیوں شمار کروں جو سوچتا بھی نہیں خواب دیکھتا بھی نہیں۔کہتے ہیں
مزید پڑھیے


عمران خان اور جماعت اسلامی

جمعرات 19 جنوری 2023ء
سعد الله شاہ
وہ بام عزو شرف سے گزر گیا ہوتا اگر وہ سچا نہ ہوتا تو ڈر گیا ہوتا یہ زہر اصل میں سقراط کو تھا آب حیات اگر وہ زہر نہ پیتا تو مر گیا ہوتا کسی کے دم سے عزت یاب ہونے والے اس بات کو نہیں سمجھیں گے۔اس بات کو وہی جانے گا، جو جان سے گزرجانے کا حوصلہ رکھتا ہو، روشنی بن کے اندھیروں میں اتر جاتے ہیں ہم وہی لوگ ہیں جو جاں سے گزر جاتے ہیں کبھی ہم نے عمران خان کے لئے کہا تھا سچ کی آواز میں آواز ملائو آئو شہر لب بستہ میں اک حشر اٹھائو آئو۔
مزید پڑھیے


اپنا تو اصل زر سے بھی نقصان بڑھ گیا

بدھ 18 جنوری 2023ء
سعد الله شاہ
چند لمحے جو ملے مجھ کو ترے نام کے تھے سچ تو یہ ہے کہ یہی لمحے مرے کام کے تھے دور ہیں حرص و ہوس سے تو کرم ہے اس کا دانہ رکھتے جو نظر میں تو کس دام کے تھے نہ ابتدا کی خبر ہے نہ انتہا معلوم سب کچھ عالم اخفا ہی سے ظاہر ہوتا ہے۔اسی لئے ایک بے کلی سی تو رہتی ہے مگر یہ سب فطرت کے زیر اثر ہے۔ سعد پڑھنا پڑی ہم کو یہ کتاب ہستی۔ باب آغاز کے تھے جس کے نہ انجام کے تھے۔ پتہ نہیں کیوں میر کا ایک شعر میرا شامل حال رہا
مزید پڑھیے








اہم خبریں