BN

سہیل اقبال بھٹی


پکچر ابھی باقی ہے


وزیراعظم عمران خان نے4نومبر 2019کو ببانگ دہل اعلان کیا تھاکہ حکومت پاکستان کی کوششوں اور ترک صدر کی کمال مہربانی سے کارکے رینٹل پاور پلانٹ کمپنی کیساتھ عالمی ثالثی عدالت میں جاری تنازع افہام وتفہیم سے حل کرلیا گیاہے۔ اب پاکستان کو1ارب 20کروڑ ڈالر جرمانہ ادا نہیں کرناپڑے گا۔قرضوں کے بوجھ تلے دبے وطن عزیز کیلئے یقینا اچھی خبر تھی۔ تاہم نیب اور پاکستانی کی خفیہ ایجنسی نے کارکے کمپنی کی جانب سے پاکستانی حکام کو دی جانے والی رشوت کے ثبوت حاصل کرلئے تھے جس کے باعث کارکے کمپنی کو لینے کے دینے پڑنے والے تھے ۔ کارکے
جمعرات 22 اکتوبر 2020ء

سادگی صرف دعوؤں تک ؟

جمعرات 08 اکتوبر 2020ء
سہیل اقبال بھٹی
بلاامتیاز کڑا احتسابـ‘میرٹ‘ـشفافیت اورکفایت شعاری کو پروان چڑھانے کے لئے اگست 2018ء سے انقلابی کاوشوں کا آغا ز ہوا۔ وزیراعظم نے واضح کیا کہ میرٹ ‘ـشفافیت اور کفایت شعاری کی پاسداری کے سواکوئی اور آپشن نہیں‘تاکہ وطن عزیر کو معاشی دلدل سے نکال کر نئے پاکستان کے خواب کو عملی تعبیر دی جاسکے۔ نیب نے سیاستدانوں‘بیوروکریٹس اور صنعتکاروں کے گرد شکنجہ کستے ہوئے تحقیقات اور گرفتاریوں کا سلسلہ شروع کیا۔ حکومت نے سرکاری دفاترمیںمرغن کھانوں کے بجائے چائے بسکٹ اور وزیراعظم آفس کے لان میں اربوں روپے مالیت کی لگژری گاڑیوں کی نیلامی کا عمل شروع کرکے کفایت
مزید پڑھیے


ہنوز تبدیلی دور است؟

جمعرات 01 اکتوبر 2020ء
سہیل اقبال بھٹی
وزیراعظم عمران خا ن نے حکومت کو درپیش چیلنجز اور عوامی مشکلات حل کرنے کیلئے ماہر افراد پر مشتمل کئی کمیٹیاں اور ٹاسک فورس قائم کیں‘جنہیںحالیہ بحرانوں سے نمٹنے کیساتھ آئندہ 10برس تک پلان پیش کرنے کی ہدایت کی گئی۔ کمیٹیوں اور ٹاسک فورسز کے کئی اجلاس منعقد ہوچکے مگرعوام کی مشکلات اور حکومت کودرپیش چیلنجز ختم ہونے کے بجائے مسلسل بڑھ رہے ہیں۔ٹاسک فورس میں شامل ہونے والے افراد‘ وزیراعظم اور قوم کی امنگوں پر تاحال پورا نہیں اترے، مگر اعلیٰ حکومتی عہدوں پر فائز ہونے میں ضرور کامیاب ہوگئے ہیں۔ وزیراعظم نے مستقبل میں گندم بحران سے نمٹنے
مزید پڑھیے


سماجی تبدیلی آخر کب؟

جمعرات 24  ستمبر 2020ء
سہیل اقبال بھٹی
دکھ ‘ کرب اور اضطراب میں مبتلا عوام کی نگاہیںٹی وی سکرینوں پر جمی ہیں ۔ جانے کب نیوزچینلز پر بریکنگ چلنے لگے کہ دن دیہاڑے قانون کی آنکھوں میں دھول جھونک کر بذریعہ کھیت فرار ہونے والا درندہ صفت عابدملہی بالآخر گرفتار کرلیاگیا ہے۔نیوز چینلز کے محنتی اورجفاکش رپورٹر روزانہ فالو اپ فائل کررہے ہیں مگر ہر روز ہیڈلائن میں یہی خبر چلتی ہے کہ اتنے دن گزرگئے درندہ صفت عابدملہی گرفتار نہ کیا جاسکا۔لاہور کے اس دلخراش واقعے کے بعد ملک کے دیگر علاقوں میں انسانی شکل میں گھومتے بھیڑیوں کے جنسی واقعات ‘ پولیس کی
مزید پڑھیے


حل نکالو ؟

جمعرات 10  ستمبر 2020ء
سہیل اقبال بھٹی
پاکستان تحریک انصاف کی حکومت قانون وانصاف کی پاسداری اوراصلاحاتی ایجنڈے کے باعث اقتدار کی مسند پر براجمان ہوئی۔ وزیراعظم عمران خان نے مختلف شعبوں میں اصلاحات کیلئے ٹاسک فورس قائم کیں۔ ڈاکٹر عشرت حسین کی سربراہی میں قائم ہونیوالی اصلاحاتی کمیٹی کا کردار سول سروس ریفارمز اور کھربوں روپے خسارے سے دوچار کمپنیوں میں اصلاحات کے باعث سب سے اہم ٹھہرا۔ ڈاکٹر عشرت حسین 2006سے مسلسل سول سروس ریفارمز کیلئے کوشاں ہیں مگر یہ ریفارمز اتنی پیچیدہ ثابت ہوئی ہیں کہ دلکش پریزنٹیشن سے آگے معاملہ بڑھنے کا نام نہیں لے رہا۔ یہ ضرور ہے کہ وفاقی وزیر علی
مزید پڑھیے



یہ معاملہ کوئی اور ہے

جمعرات 03  ستمبر 2020ء
سہیل اقبال بھٹی
ملکی وعوامی مفاد کے تحفظ اور لوٹی گئی قومی دولت کی وصولی کے لیے برسرپیکاروفاقی حکومت کڑے امتحان سے دوچار ہے۔ عوامی مفاد اورلوٹی گئی دولت کی وصولی کیلئے ہرلمحہ غیرمتزلزل عزم کا اظہار کرنے والے پانچ دس نہیں پورے 517ارب روپے وصول کرنے میں ہچکچاہٹ کا شکار ہیں۔اربوں روپے ڈوبنے کا بیانیہ اختیار کرکے 208ارب روپے معاف کروانے والی حکومتی ٹیم میں صف ماتم بچھی ہوئی ہے ۔پہلے میڈیا اور اپوزیشن نے قومی خزانہ پر ڈاکہ ڈالنے والا ہاتھ روکا تو اب سپریم کورٹ آف پاکستان نے ایک تاریخی اورمثالی فیصلہ دے کر تمام ’رنگ بازوں‘ کے عزائم خاک
مزید پڑھیے


ناتجربہ کاری سے تجربہ کاری تک؟

جمعرات 27  اگست 2020ء
سہیل اقبال بھٹی
کورونا کی انسانی زندگیوں اور معیشت پر تباہ کاریاںسمٹنے کیساتھ معیشت کا پہیہ بتدریج چلنا شروع ہوگیا ہے ۔ہرملک اور کمپنی خسارے سے نکلنے اور آگے بڑھنے کیلئے نئی حکمت عملی تیار کرنے میں مشغو ل ہے۔ ایسے حالات میں وطن عزیز کودرپیش عالمی اور ملکی سطح پر موجود سنگین مسائل نے پھر سے سراٹھانا شروع کردیا ہے۔وزیراعظم عمران خان کے دعوؤں کی روشنی میں قوم نے بہت سی توقعات وابستہ کررکھی تھیں مگر وزیراعظم نے حالیہ انٹرویوکے دوران ناتجربہ کاری اور سیکھنے کے عمل کا بیان دے کر عوام کو اضطراب سے دوچار کردیا ہے۔ رہی سہی کسر وسیم
مزید پڑھیے


اصلاحاتی عمل سے ذاتی مفاد تک !

جمعرات 20  اگست 2020ء
سہیل اقبال بھٹی
وزیراعظم عمران خان نے تبدیلی کے نام پر مینڈیٹ حاصل کرنے کے بعد دوسال قبل اصلاحات کابیڑا اٹھایا۔بہتر کارکردگی اور شفافیت اپنا کر سالانہ کھربوں روپے نقصان کو منافع میں بدلنے کا عزم کیا۔مختلف شعبوں میں اصلاحات کیلئے کئی کمیٹیاں قائم کیں۔ کمیٹیوں کی سفارشات حتمی مراحل میں داخل ہوچکیں جس کے تحت کئی ادارے اور کمپنیاں بند جبکہ سینکڑوں ملازمین گھر بھیج دئیے جائیں گے۔ کئی ادارے لیز پر غیرملکی کمپنیوں کے حوالے کرنے کی تیاری بھی کی جاچکی ۔ائیرپورٹس کو غیرملکی کمپنیوں کو لیز پر دینے کا سلسلہ بھی حتمی مرحلے میں داخل ہوچکا ہے۔ اہم ہوائی اڈوں
مزید پڑھیے


نقب زنی

جمعرات 13  اگست 2020ء
سہیل اقبال بھٹی
وزرا ء ‘ کارکن اورپڑھی لکھی کلاس وزیراعظم عمران خان کی دیانت کے گن گاتے نہیںتھکتی مگر قومی خزانے اور عوام سے وارداتوں کا سلسلہ کیوں نہیں تھم رہا؟عمران خان سے سب سے بڑی یہی امید تھی کہ قومی خزانے اور عوام کی جیبوں پر کوئی ڈاکا نہیں ڈال سکے گا ۔ مافیاز خان کی ٹیم تک رسائی کا سوچ بھی نہیں سکیں گے۔ لوٹ مار والوں کا عدالتوں میں کڑا احتساب ہوگا مگر خزانے کو نقصان پہنچانے والوں کے فوجداری مقدمات خلاف قانون کابینہ میں حل ہونا شرو ع ہوگئے ہیں ۔کیا حکومت نے رولز آف بزنس میں ترمیم
مزید پڑھیے


افسرشاہی اور بے حال عوام

جمعرات 30 جولائی 2020ء
سہیل اقبال بھٹی
وزیر اعظم کے معاون خصوصی شہزاد ارباب نے وزیراعظم کو وزارتوں کی کارگردگی سے متعلق رپور ٹ پیش کی ہے۔وفاقی کابینہ کی جانب سے ستمبر2019میں وفاقی حکومت کیلئے پرفارمنس مینجمنٹ سسٹم کی منظوری دی گئی تھی۔اس کا بنیادی مقصد سمت کے تعین کے ساتھ ڈلیوری پر توجہ مرکوز کرنا ہے ۔وزیر اعظم اور متعلقہ وزیر کی جانب سے مالی سال کی سہ ماہی کیلئے اہداف مقرر کیے گئے تھے۔پرفارمنس ایگریمنٹ کا دائرہ کار مکمل وفاقی حکومت تک پھیلانے سے پہلے ابتدائی طور پر اسے11وزارتوں پر آزمانے کا فیصلہ کیا گیا جس کا مقصد ماڈل سے متعلق سیکھنے اور اس میں
مزید پڑھیے