BN

سینیٹر(ر)طارق چوہدری


منفرد پاکستان


پاکستان دنیا کے نقشے پر ایک منفرد حقیقت ہے،دوستوں پر آنے والے ہر برے وقت میں بھروسے کے قابل،مضبوط سہارا اور دشمنوں پر طاری رہنے والی مستقل دہشت۔جس کا بھید کھلے نہ وضاحت ہو۔مسلمان ملکوں پر دشمن کی طرف سے مسلط کردہ جنگ کی صورت میںمضبوط حلیف اور آپس کے تنازعات میں منصف ،بااعتماد ،مصالحت کنندہ اور ثالث۔ تحریک پاکستان کے دوران گول میز کانفرنس میں شرکت کے لیے جاتے ہوئے قائد اعظم محمد علی جناح نے مصر میں مختصر بیان کیا،مصر اور فلسطین کے علماء نے ان سے ملاقات کی۔ علماء ہند کی طرح ان کا بھی موقف تھا
اتوار 25 جولائی 2021ء مزید پڑھیے

’’پھلاہی والے‘‘چوہدری ظفر اقبال

اتوار 18 جولائی 2021ء
سینیٹر(ر)طارق چوہدری
سجاد حیدر کا دم غنیمت ہے ، تحریکِ انصاف ضلع فیصل آباد کے دائمی صدر اور سدا بہار شخصیت کے ساتھ کہ ان کی صدارت کو کبھی زوال آیا،نہ ان کی بہار نے خزاں جھیلی ،سجاد حیدر کی وجہ سے پرانے دوستوں کی خوشی ،غم کی خبریں بروقت مل جاتی ہیں اور بعض بھولے وعدے بھی بروقت یاد دلایا کرتے ہیں، اس لیے کئی موقعوں پر وعدہ خلافی سے بچ نکلے، گذشتہ اتوار ان کا فون آیا، یہی کوئی سہ پہر چار بجے ، پوچھا آپ گھر پر ہیں؟ ہاں ، گھر پہ ہوں۔ ٹوبہ ٹیک سنگھ جانے کے لیے
مزید پڑھیے


طالبان کی پیش قدمی

اتوار 11 جولائی 2021ء
سینیٹر(ر)طارق چوہدری
عالمی ذرائع ابلاغ جو پاکستان کے خلاف پراپیگنڈہ کا حصہ ہیں ان کا دکھ سمجھ میں آنے والی بات ہے لیکن پاکستان کے اندر بھی ایک طبقہ ایسا ہے جو بظاہر بڑا لبرل ،غیرجانبدار اور وسیع الظرف بننے کا ڈرامہ رچاتاہے لیکن اگر کہیں پاکستانی عوام کی خوشی کا کوئی پہلو نظر آئے تو ان کے دل میں درد اور سینے میں جلن ہونے لگتی ہے۔ آج کل یہی نام نہاد لبرل دانشور اس بات پر ’’پِس‘‘ گھول رہے ہیں کہ افغانستان میں طالبان کی پیش قدمی پر پاکستانی عوام خوشی اور جوش وخروش کا اظہار کیوں کررہے ہیں؟ کیا
مزید پڑھیے


Strategic depth

اتوار 04 جولائی 2021ء
سینیٹر(ر)طارق چوہدری
دفاع کے لئے مطلوب جغرافیائی وسعت اور گہرائی‘ افغانستان کے حوالے سے سٹریٹجک ڈیتھ کی اصطلاح پہلے پہل 1980ء کی دہائی میں نیشنل ڈیفنس یونیورسٹی کے استاد جنرل مرزا اسلم بیگ نے استعمال کی جو ضیاء الحق کی شہادت کے بعد پاکستان کی بری فوج کے سربراہ مقرر ہوئے۔1965ء کی جنگ کے دوران پاکستان کے مسافر بردار اور بعض جنگی طیارے بھی ایران کے مختلف ہوائی اڈوں پر منتقل کر دیے گئے تھے تاکہ نہ صرف یہ طیارے محفوظ رہیں بلکہ اپنے ہوائی اڈے بلا تردد دفاعی اور جنگی ضرورتوں کے لئے بآسانی دستیاب ہوں۔ ایران کی دوستی اور ہمسائیگی
مزید پڑھیے


افغانستان ۔ وسیع البنیاد حکومت

اتوار 27 جون 2021ء
سینیٹر(ر)طارق چوہدری
ہندوستان کی ریاست کپورتھلہ کے مستری محمد صدیق تحریک آزادی کا منفرد ، قابل ذکر اور معروف کردار تھے، آزاد منش ، درویش ،مولانا ابوالکلام آزاد بھی ان کے قریبی دوست بلکہ بڑی حد تک عقیدت مند تھے، کپورتھلہ کے سکھ راجہ اور اسکے مسلمان وزیراعظم بھی مستری صاحب کے قدردانوں میں تھے ، مستری صاحب کا قریب جنگل میں بسیرا تھا، چھوٹی سی جھونپڑی، جھونپڑی سے دور بڑی سڑک پر انہوں نے جلی حروف میں بورڈ لگا رکھا تھا، دائرہ ٔ امن وسلامتی۔یعنی ان کی جھونپڑی دائرۂ امن وسلامتی تھی، بورڈ کے نچلے حصے میں لکھا تھا، میں کسی
مزید پڑھیے



امریکہ…آنے میں قدم اور تھے

اتوار 20 جون 2021ء
سینیٹر(ر)طارق چوہدری
صدرپاکستان غلام اسحاق خان افغانستان میں افغان مجاہدین کے مابین اقتدار کے لیے خانہ جنگی پر بڑے مضطرب اور پریشان تھے،پاکستان کے مقتدر حلقے گلبدین حکمت یار اور احمد شاہ مسعود کے مابین خوفناک جنگ کے نتیجے میں افغانستان کو تقسیم ہوتا دیکھ رہے تھے،صدر پاکستان نے سینیٹر فریداللہ کو بلا بھیجا ،فریداللہ قبائلی علاقہ جات سے منتخب سینیٹر تھے،قبائلی ممبران میں سب سے اعلیٰ تعلیم یافتہ اور صائب الرائے،قبائل اور افغانستان کے بارے میں ان کا علم اور تجربہ بہت وسیع تھا،ان کی عادات،خیالات اور روایات کو اچھی طرح سمجھتے تھے،صدر پاکستان نے افغانستان میں حکومت اور فوج نہ
مزید پڑھیے


روس کے بعد امریکہ

اتوار 13 جون 2021ء
سینیٹر(ر)طارق چوہدری
وہ کہانی سب نے سن رکھی ہے کہ ایک پہاڑی ندی کے کنارے بکری کا بچہ پانی پی رہا تھا، اسی کنارے تھوڑے فاصلے پر پیاسا شیر بھی پیاس بجھانے آپہنچا ، جب پی چکا تو اس کی نظر بکری کے بچے پر پڑی ، بگڑکے بولا، او!بزغالہ (بکری کا بچہ) دیکھتے نہیں، میں پانی پی رہاہوںاور تم اسے گدلا کررہے ہو۔ بچے نے معصومیت سے جواب دیا، اے جنگل کے بادشاہ سلامت، پانی تو آپ کی طرف سے بہہ کر آرہا ہے تو میں اسے گدلا کیسے کرسکتا ہوں۔ شرمندہ ہونے کی بجائے شیر ڈانٹ کے بولا، پچھلے برس
مزید پڑھیے


روس کے بعد امریکہ

اتوار 06 جون 2021ء
سینیٹر(ر)طارق چوہدری
گزشتہ بیالیس(42) برس سے افغانستان کا مسئلہ ہمارے لئے ’’ہتھیلی کے چھالے‘‘ کی طرح ہے۔ افغانستان اور پاکستان کا رشتہ چچا زاد بھائیوں کی طرح ہے‘ حسن اتفاق سے جو ایک دوسرے کے ہمسائے بھی ہیں‘ ایسے ہمسایہ جن کی چھتیں ملی ہوئی اور صحن کی دیوار سانجھی ہے۔ ایک کے گھر مصیبت آئے تو ایک دوسرے کو نہ صرف چھت مہیا کرتی بلکہ روٹی بھی بانٹ کر کھانی ہوتی ہے، ایک بھائی کے گھر آگ لگے تو وہ آگ پرائی نہیں اس لئے بھی کہ دونوں چھتیں اکٹھی ہیں، درمیان میں ایک باریک پردہ ہے‘دونوں گھر ایک ساتھ جلیں گے،
مزید پڑھیے


اسرائیل ریاست نہیں پراکسی!

پیر 24 مئی 2021ء
سینیٹر(ر)طارق چوہدری
صہیونیوں کا اسرائیل مملکت ہے نہ ریاست، یہ عالمی طاقتوں کی پراکسی ہے یعنی پہلے برطانیہ اور اب امریکہ کے خفیہ مقاصد کے لئے کرایے کے غنڈے اور قاتل ہیں۔ روس اور برطانیہ نے دوسری عالمی جنگ کے بعد زہر میں بجھے اس تیز دھار خنجر کو مسلمانوں کے سینے میں اتارنے کے لئے فلسطین میں لا بسایا۔ سازش اور محسن کشی ابتدائے دن سے ان کی جبلت میں شامل ہے‘ ان کی اپنی تاریخ اور قرآن کریم کی مستحکم گواہی اس کی روشن دلیل ہے۔ اسرائیل زہریلا خنجر ہے ،بازوئے قاتل نہیں ،یہ خطرناک مگر بے جان ہتھیار پہلے
مزید پڑھیے


عبدالقیوم

اتوار 16 مئی 2021ء
سینیٹر(ر)طارق چوہدری
خوش رو‘ خوش پوش‘ سنجیدہ اور باوقار عبدالقیوم سے دوستی‘ رفاقت ‘رشتے داری‘ جس میں 56 برس سے کوئی وقفہ آیا‘ رخنہ پڑا نہ اونچ نیچ دیکھی‘ بڑی آہستگی اور سہولت سے چوتھی نسل میں منتقل ہو چکا‘سوموار3مئی 21 رمضان المبارک کو اچانک ایک بے رنگ پر دہ حائل ہو گیا ہے‘جس میں پردے کے ادھر ہم سب رہ گئے اور دوسری طرف وہ اکیلا چلا گیا‘ کہاں؟ جہاں سے کوئی لوٹ کے واپس نہیں آتا مگر جدائی کا یہ وقفہ دائمی ہے نہ ابدی پھر بھی اتنا تکلیف دہ کہ سب کے دلوں کو درد و غم سے بھر
مزید پڑھیے








اہم خبریں