BN

عارف نظامی


کب تک کوئی بوجھ برداشت کرے؟


نوے کی دہائی کے آخر میں محترمہ بے نظیر بھٹو کی سربراہی میں وفاقی حکومت اور پنجاب میں بطور وزیراعلیٰ میاں نواز شریف کے درمیان شدید محاذ آرائی پاکستان کی سیاست کا سیاہ باب ہے۔ اس وقت میاں نوازشریف کو عسکری قیادت کی دامے درمے سخنے حمایت حاصل تھی اس پر مستزاد یہ کہ اسٹیبلشمنٹ کے اداروں اور مہروں نے پاکستان کی پہلی خاتون وزیر اعظم کے خلاف انتظامی طور پر اور پراپیگنڈا کے محاذ پر طوفان برپا کر رکھا تھا ، مرکز کے خلاف ’’چالوں‘‘ کا نہ ختم ہونے والا سلسلہ تھا، محترمہ وزیراعظم ہونے کے باوجود اسٹیبلشمنٹ پلس
هفته 24 اکتوبر 2020ء

مہنگائی حکومت کی بڑی دشمن!

بدھ 14 اکتوبر 2020ء
عا رف نظا می
جیسے جیسے اپوزیشن کی تحریک چلانے کی ڈیڈلائن قریب آ رہی ہے، سیاسی ٹمپریچر بڑھتا جا رہا ہے، حکومت اوراپوزیشن کے درمیان شدید قسم کی مخاصمت جو شاید ہی پہلے کبھی اس انتہا کو پہنچی ہو، کے اثرات معیشت پر بھی پڑنے شروع ہو گئے ہیں۔ ملک بھر میں مہنگائی نے لوگوں کا جینا دوبھرکردیا ہے،چینی،آٹا، گھی، دالوں، سبزیوں، گوشت، انڈوں حتیٰ کہ ضرورت کی ہر شے کی قیمتیں آسمانوں پر پہنچ چکی ہیں لیکن حکومت کا حال یہ ہے کہ مرض بڑھتا گیا جوں جوں دوا کی۔ پاکستان کی معیشت جو کئی دہائیوں سے بظاہر اوپن مارکیٹ کے اصولوں
مزید پڑھیے


نفسانفسی کے سوا کچھ نہیں!

پیر 12 اکتوبر 2020ء
عا رف نظا می
"میں جمہوریت ہوں، اپوزیشن ڈاکو"۔ یہ منتخب جمہوری وزیراعظم جناب عمران خان کا تازہ فرمان ہے۔ خان صاحب نے اسلام آباد میں آل پاکستان انصاف لائرز فورم کے سیمینار سے خطاب کرتے ہوئے سیاستدانوں کو بیروزگاروں کا ٹولہ قرار دیا۔ وزیر اعظم کے مطابق آئی ایس آئی کے سابق سربراہ لیفٹیننٹ جنرل ظہیر الاسلام کی طرف سے استعفیٰ مانگنے پر نواز شریف خاموش رہے تھے کیونکہ جنرل صاحب کو ان کی چوری کا علم تھا۔ وزیراعظم کا یہ کہنا بلاواسطہ طور پر فوج کو سیاست میں گھسیٹنے کی کوشش ہے۔ فوج کا کام سیاست میں ملوث ہونا نہیں بلکہ اپنا
مزید پڑھیے


اللہ جمہوریت کے مستقبل پر رحم فرمائے!

هفته 10 اکتوبر 2020ء
عا رف نظا می
پکڑ دھکڑ اور تھوک کے حساب سے اپوزیشن کے خلاف انکوائریوں اور مقدمات کے علاوہ حال ہی میںپی ٹی آئی کے ایک متنازعہ شخص کی جانب سے بغاوت کی ایف آئی آر درج کرانے کے منظرنامے میں وزیراعظم کی یہ خواہش کہ وہ ایسا پاکستان چاہتے ہیں جو عالمی طاقت بن کر ابھرے ،بڑی نیک خواہش ہے اور کون پاکستانی ذی شعور ہو گا ،جو اس سے اختلاف کرے گا لیکن زمینی حقائق یہ ہیں کہ تحریک انصاف کے دوسال سے زائد عرصے کے دور حکومت میں صورتحال خراب سے خراب تر ہوتی چلی گئی ۔ عالمی بینک
مزید پڑھیے


غداری کے سرٹیفکیٹ، مسائل کا حل؟

بدھ 07 اکتوبر 2020ء
عا رف نظا می
آئی پی ایس او ایس کے حالیہ سروے کے مطابق ہر پانچ میں سے چار پاکستانیوں نے ملک کی سمت کو غلط قرار دیا ہے، ریسرچ کمپنی کے اس سروے میں ایک ہزار افراد نے حصہ لیا جن میں سے56 فیصد نے آئندہ 6 ماہ میں ملکی معیشت خراب ہونے کا خدشہ ظاہر کیا۔سروے کے مطابق عدم اطمینان ظاہرکرنے والوں کی شرح 69 فیصد جبکہ اطمینان والوں کی شرح 31 فیصد نظر آئی۔ یہ سروے ملکی حالات کی صحیح تصویر کشی کر رہا ہے یا نہیں اور اس پر کس حد تک اعتبار کیا جا سکتا ہے یہ ایک الگ
مزید پڑھیے



وہ دن کب طلوع ہوگا؟

پیر 05 اکتوبر 2020ء
عا رف نظا می
جب سے اپوزیشن کی آل پارٹیز کانفرنس کا انعقاد ہوا ہے ’’بھارتی ایجنٹ‘‘ میاں نواز شریف کو وطن واپس لانے کا حکمران جماعت کا مطالبہ زور پکڑتا جا رہا ہے۔ وزیراعظم عمران خان کا واکھیان ہے کہ نواز شریف کے بھارت سے رابطے پوری طرح عیاں ہو گئے ہیں، پاکستان کے دشمن پھولے نہیں سما رہے کہ نواز شریف مودی سے ڈکٹیشن لے رہا ہے۔ حکمران جماعت کے ترجمان بیک زبان ہو کر کہہ رہے ہیں کہ ’’بھگوڑے‘‘ سابق وزیراعظم کو واپس لا کر مجرموں کے کٹہرے میں کھڑا کر یں گے۔ وزیراعظم اوران کے حواری ایسے بلند بانگ دعوے
مزید پڑھیے


دسترس سے باہر۔۔۔۔۔

هفته 03 اکتوبر 2020ء
عا رف نظا می
خوب چرچا ہے کہ وزیراعظم عمران خان چلی کے سابق ڈکیٹیٹر آگسٹو پینوشے Pinochet Augusto جواب ا س دنیا میں نہیں رہے کی طرح میاں نو از شریف کو ہر حال میں واپس لانے کے لیے پر عزم ہیں۔ ایسا لگتا ہے کہ خان صاحب کے مشیر جن کی تعداد ضرورت سے کہیں زیادہ ہے ان کو طفل تسلیاں اور نواز شریف کو واپس لانے کے حوالے سے طرح طرح کی تاویلیں دے رہے ہیں۔ ان کے دلائل یا توان کی کم علمی پر مبنی ہو تے ہیں یا دانستہ طور پر خان صاحب کی آنکھوں میں
مزید پڑھیے


خوب کھیلا!

پیر 28  ستمبر 2020ء
عا رف نظا می
آل پارٹیز کانفرنس کے انعقاد کی دیر تھی کہ سیاستدانوں کے نت نئے انکشافات نے عجیب افراتفری کا سماں پیدا کر دیا ہے۔ الزامات، جوابی الزامات کی بھرمار ہے اور ہر کوئی فوجی قیادت کے قریب ہونے اور دیرینہ تعلقات کا دم بھر رہا ہے، بعض کا تو دعویٰ ہے کہ آرمی چیف جنرل قمر جاویدباجوہ سے ان کے خاندانی، ذاتی یا قلبی تعلقات ہیں۔ یہ تمام نفسانفسی پیدا کرنے کے مرکزی کردار شیخ رشید ہیں۔ لگتا ہے کہ ایک سوچے سمجھے منصوبے کے تحت اپوزیشن کو ایکسپوز کیا جا رہا ہے، سب سے پہلے تو یہ انکشاف ہوا کہ
مزید پڑھیے


ملاقاتوں سے طلاطم

هفته 26  ستمبر 2020ء
عا رف نظا می
دوسال کے جمود کے بعد فوجی قیادت اور اپوزیشن کے درمیان براہ راست ملاقاتیں بہت سے سیاسی سوال اٹھا رہی ہیں ۔ یک نہ شد دوشد کے مترادف شیخ رشید جو درفطنیاں چھوڑنے کے ماہر ہیں ، فوج کے بارے میں غیرذمہ دارانہ گفتگو کرتے ہوئے انہوںنے انکشاف کیا شہبازشریف اور ان کے ساتھیوں کی عسکری قیادت سے ایک نہیں 2 ملاقاتیں ہوئی ہیں، دونوں میں وہ شامل تھے ۔ پہلی ملاقات جس میں گلگت بلتستان کے حوالے سے گفتگو ہوئی شہبازشریف اور میں نے ایک ہی میز پر کھانا کھایا۔ وزیرریلوے نے یہ بھی دعویٰ کیا کہ پہلی
مزید پڑھیے


اے پی سی ہو ہی گئی!

بدھ 23  ستمبر 2020ء
عا رف نظا می
اپوزیشن جماعتوں کے جس اتحاد کا حکومت مخالف جماعتوں کو شدت سے انتظار تھا وہ بالآخر اتوار کو پاکستان ڈیموکریٹک موومنٹ کے نام سے معرض وجود میں آ گیا۔ ایسا اتحاد اپوزیشن کی صفوں میں عدم تعاون اور غیرسیاسی قوتوں کی کاوشوں کی بنا پر نہیں بن پا رہا تھالیکن مشکلیں اتنی پڑیں کہ آساں ہو گئیں۔ میاں نوازشریف، آصف زرداری، بلاول بھٹو اور چھوٹے صوبو ں کی قومیت پرست جماعتوں کے پاس اس کے سوا کوئی چارہ کار ہی نہیں تھا۔ اپوزیشن جماعتوں کو ایک صفحے پر لانے کا کریڈٹ میاں نوازشریف، آصف زرداری، بلاول بھٹو اور مولانا فضل
مزید پڑھیے