عبدالرفع رسول


دہلی میں مسلم کش فسادات پھوٹ پڑے


دہلی سے مسلمانوںکے حوالے سے مسلسل خوفناک خبریں آرہی ہیںاورہندوں غنڈے پولیس کے ساتھ مل کرمسلمان بستیوں کو آگ لگارہے ہیں اوران کی املاک کووسیع پیمانے پرنقصان پہنچارہے ہیں۔ 24فروری 2020ء سوموارکی شام کوعین اس وقت جب ٹرمپ دہلی ائیرپورٹ پراتررہے تھے ہندئووں نے مسلمانوں پرحملے شروع کردیئے جن میں تادم تحریرایک درجن مسلمان شہیدہوگئے۔دہلی میں دریائے جمنا کے دوسری جانب واقع شمال مشرقی علاقوں میں شہریت کے متنازع ترمیمی قانون کے خلاف احتجاج کرنے والوں پربی جے پی ،آرایس ایس کے غنڈوں اوردہلی پولیس نے ہلہ بول دیا اوردہلی پولیس کی بھرپورمددانہیں حاصل تھی دلی کے مسلم اکثریتی علاقوں
بدھ 26 فروری 2020ء

ٹرمپ کادورہ بھارت

منگل 25 فروری 2020ء
عبدالرفع رسول
امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ24فروری سوموارکو دو روزہ دورے پر بھارت پہنچ گئے ہیں۔ وہ احمد آباد میں موٹیر اسٹیڈیم گئے جہاں انہوں نے ایک بڑے جلسہ عام سے تقریرکی امریکی صدر کا تاج محل کا دورہ بھی شیڈول ہے۔گجرات کے اسٹیڈیم میں مودی نے ٹرمپ کی تعریفوں کے پل باندھے اورانڈیابھارت لانگ لیوکے نعرے لگا لگا کر مودی کامنہ خشک ہوگیا۔جبکہ اسلامک ٹیررازم کانام لے کربھارت کواسے نجات دلانے کے لئے ٹرمپ کاردعمل بھی مودی کی امیدوں کے مطابق رہا۔ ٹرمپ کے دورہ بھارت کوسمجھنے کے لئے یہ بات پیش نظررکھنی چاہئے کہ امریکہ بھارت کوخطے کاتھانیداربنانے کے لئے اسکے ساتھ
مزید پڑھیے


ٹرمپ کی آمد پر کشمیری عوام پر مزید پابندیاں

پیر 24 فروری 2020ء
عبدالرفع رسول
ٹرمپ کے دورہ بھارت پرمودی کے ایک وزیرنے ہندئووں کوہدایات جاری کردیں کہ پاکستان زندہ بادکانعرہ دینے والے کشمیریوںکی زبان کاٹ ڈالو۔ بی جے پی کے ایک لیڈر شری رام سینا کے سیکریٹری نگا سوامی نے پاکستان کی حمایت میں نعرے لگانے والے کشمیری طلبا ء کی زبانیں کاٹ کر لانے والوں کے لئے 3لاکھ روپے انعام کا اعلان کیا ہے۔19فروری 2020 بدھ کو ایک پروگرام میں اس کاکہناتھاکہ کشمیرکے ان طلباء زبانوں کو کاٹ کر لائیں ، جوپاکستان کانعرہ لگاتے ہیں توشری رام سینا انہیں ہر زبان کے بدلے 1لاکھ روپیہ نقدانعام دے گی۔اھرٹرمپ کے دورہ بھارت سے
مزید پڑھیے


ٹرمپ کے دورہ بھارت پر امریکی کمیشن کی رپورٹ

اتوار 23 فروری 2020ء
عبدالرفع رسول
یہ الگ بات ہے کہ امریکہ کا مذہبی آزادی کے حوالے سے خوداپنا ریکارڈ کتنابہتر ہے اورافغانستان سے عراق اوردیگرخطوں میں وہ مذہب اسلام کے ماننے والوں کے ساتھ کس طرح خون کی ہولی کھیل رہاہے مگر اس کے باوجود امریکہ اور دنیابھرمیں مذہبی آزادی کویقینی بنانے کے لئے ایک کمیشن کے تحت رپورٹس بھی مرتب کرتاہے اوراپنی ضرورت کے مطابق وقتاََفوقتاََصدابھی بلندکرتارہتاہے ۔آج کل بھارت میں جس طرح مسلمانوں کی مذہبی آزادی چھینی جارہی ہے اس پرامریکہ کے اسی کمیشن کی طرف سے نریندی مودی کے ہندو اتوا پر مبنی نظریے کے خوفناکی پر بھارت کو شدید تنقید و
مزید پڑھیے


بھارت کب تک حقائق سے آنکھیں چراتارہے گا؟

جمعه 21 فروری 2020ء
عبدالرفع رسول
کشمیرپرجس طرح عالمی ذرائع ابلاغ فوکس کئے ہوئے ہے، جس طرح یورپی پارلیمنٹ میں یہ موضوع اٹھایا گیا ہے ،جس پیمانے پردنیاکے ہیومن رائیٹش کمشنز کی رپورٹس آ رہی ہیں اور کشمیر کے اندر سے بھی مقامی ہیومن رائٹس کمیشن کی طرف سے رپورٹس آ رہی ہیں، اس سے یقینادنیاکے فہمیدہ طبقوں میںبھارت کی ملٹری اور سیاسی قیادت اخلاقی اعتبارکھوچکی ہے۔یہی وجہ ہے کہ بھارت کشمیرسے متعلق وہ کوئی بات سننانہیںچاہتااوروہ ہراس ملک اورہراس شخصیت کے بیان اوراس کے ریمارکس کومستردکرتاہے جوکشمیراورکشمیریوں کی صورتحال پربھارتی جبرکی مذمت کرتاہے۔ سوموار17فروری 2020ء کو بھارتی حکام نے دلی پہنچنے پر لیبر پارٹی کی
مزید پڑھیے



جناب سیکریٹری جنرل: کشمیری حل چاہتے ہیں

منگل 18 فروری 2020ء
عبدالرفع رسول
اقوام متحدہ جنرل سیکریٹری انٹونیو گوترس 16فروری اتوار کو تین روزہ دورے پر اسلام آباد پہنچے ہیں۔انکے دورے کامقصدپاکستان کوافغان مہاجرین کی خدمت پر خراج تحسین پیش کرناتھا ۔جنرل سیکریٹری کے دورہ اسلام آبادکے دورے کے موقع پرسری نگرسے مظلوم کشمیریوں کی طرف سے ان کے نام خط لکھاگیاجوضروران تک پہنچ جائے گا۔اس مکتوب میں مقبوضہ کشمیرمیں ہورہی انسانی حقوق کی پامالیوں کی طرف توجہ مبذول کراتے ہوئے مسئلہ کشمیر کے حل کی ضرورت پر زور دے کرکہا گیا ہے کہ جناب سیکریٹری جنرل کشمیری حل چاہتے ہیںاوربس ۔ مکتوب میں کہا گیا ہے کہ مسئلہ کشمیر کئی دہائیوں سے
مزید پڑھیے


کشمیر اورچناکلے ایک جیسے ہیں

پیر 17 فروری 2020ء
عبدالرفع رسول
14فروری 2020ء جمعہ کی صبح گیارہ بجے پاکستان کی قومی اسمبلی کے مشترکہ اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے ترک صدر جناب رجب طیب اردوان نے کشمیرپر کھل کر بات کرتے ہوئے اہل کشمیرکے مسئلہ حق خودارادیت پرترکی کے دو ٹوک حمایت کااعلان کرتے ہوئے کہاکہ کشمیر ترکی کے لئے ایسا ہی ہے جیسا پاکستان کے لئے ہے۔ترک صدر نے بھارت کے یکطرفہ اقدامات کو کشمیری بھائیوں کی تکلیف میں اضافے کا موجب قرار دیتے ہوئے کہا کہ مسئلہ کشمیر کا حل جبری پالیسیوں سے نہیں بلکہ انصاف سے ممکن ہے۔ انہوں نے ببانگ دہل کہا کہ ترکی کے نزدیک
مزید پڑھیے


پھانسی کے پھندوں سے ڈرایا نہیں جا سکتا

جمعرات 13 فروری 2020ء
عبدالرفع رسول
کشمیرکاہرشہیدتحریک آزادی کشمیر کے ناقابل فراموش ہیرو زاور ایک ایسے روشن چراغ کے مانندہے کہ جواپنی شہادت سے قبل اپنی لوسے بے شمارچراغ روشن کرجاتا ہے۔ یہی وجہ ہے کہ 2020ء تک سرزمین کشمیرپربھارتی جبروقہر کے باعث ایک کے بعد ایک چراغ گل ہوتاچلاجارہاہے لیکن یہ چراغ ختم نہیں ہورہے۔اگرچہ کشمیرکے ہرشہیدکی شہادت کی الگ الگ کہانی ہے لیکن سب ایک ہی عظیم مقصد ’’کشمیرکی آزادی ‘‘کے لئے اپنے جانوں کانذرانہ پیش کرچکے ہیں۔ چندیوم قبل تہاڑ جیل کے سابق آفیسر سنیل گپتا نے اپنے ایک ٹی وی انٹرویومیں کہا کہ افضل گورو سے جینے کا حق صرف اور
مزید پڑھیے


افضل گورواورمقبول بٹ شہیدکی باقیات ؟ (2)

بدھ 12 فروری 2020ء
عبدالرفع رسول
یہ حقیقت ہے کہ افضل کی پھانسی کا غیر منصفانہ اور جلد بازی میں اٹھائے جانے والابھارت کایہ ایک ایساا قدام تھاکہ جسے کشمیری کبھی بھول نہیں پائیں گے ۔بلاشبہ افضل کی شہادت سے ایسے ہزارانجم پیداہوئے جواپنے پیدائشی مقصد سے کبھی دستبردارنہیں ہونگے کیوںکہ گوروکواچانک پھانسی دیئے جانے سے انہیں یقین آگیاکہ کشمیریوں کے لئے انصاف نام کی کوئی چیزموجودنہیں۔اگراس امرمیں کسی کوکوئی ابہام تھاتو2016ء کی فقیدالمثال عوامی ایجی ٹیشن نے اسے دورکردیا۔افضل کے مقدمے کی سماعت کے دوران انصاف کے تقاضوں کا کبھی خیال ہی نہیں رکھا گیا ۔انہیںایک ایسے حملے اورایک ایسی کارروائی میں ملوث ٹھرایاگیا جوسراسرمشکوک
مزید پڑھیے


افضل گورواورمقبول بٹ شہیدکی باقیات ؟

منگل 11 فروری 2020ء
عبدالرفع رسول
سانحات کی تلخی، کڑواہٹ، سختی اور درشتگی سے کوئی انکارنہیںلیکن قاتل کومعلوم نہیں ہوتاکہ جسے وہ بے تقصیرقتل کرتاہے تواس کا لہوایساپکاراٹھتاہے کہ قاتل چھپ نہیں سکتا ۔اگرکسی کواس میں شک وریب ہے تووہ افضل گوروکے قتل اورپھراس کے لہوکی پکارسننے کے لئے سری نگرکے لال چوک میں کھڑاہوجائے۔اسے پتاچلے گاکہ گورو کی پھانسی کشمیر کازکے لئے عہد نو کا دیباچہ ثابت ہوئی اورانکے جوڈیشل قتل سے کشمیرمیںتازہ دم ولولہ اورفکروسخن کا سامان فراہم ہوا۔ شہدائے کشمیر نے بھارتی استعمار سے آزادی کا خواب دیکھا اور اسی خواب کو شرمندہ تعبیر کرنے کیلئے میدان عمل کا راستہ اختیار کیا اور بالآخر
مزید پڑھیے