BN

عدنان عادل



صحت کا بیمار نظام


یہ ہماری خوش قسمتی ہے اور کچھ بروقت احتیاطی اقدامات کا نتیجہ ہے کہ پاکستان میں کرونا کی وبا اتنی تیزی سے نہیں پھیلی جس برق رفتاری سے اس نے چین‘ یورپ اور امریکہ کے ترقی یافتہ ‘ امیر ممالک میں اپنے پنجے گاڑے یا ایران اور ترکی کو اپنی لپیٹ میں لیا۔ لیکن جب تک خطرہ اچھی طرح ٹل نہ جائے ہمیں احتیاطی اقدامات سے غافل نہیں ہونا چاہیے کیونکہ پاکستان میں نصف آبادی غریب اور ایک چوتھائی آبادی سفید پوش ہے ۔یہ لوگ بیمار ہونے کی صورت میں علاج معالجے کا بوجھ برداشت نہیں کرسکتے۔ عام آدمی تو
اتوار 29 مارچ 2020ء

کروناکا عذاب

بدھ 25 مارچ 2020ء
عدنان عادل
پوری دنیا کورونا وبا کے جس عذاب سے گزر رہی ہے وہ ایک جنگ ِعظیم سے کم نہیں۔چین سے شروع ہونے والی یہ جنگ دنیا کے ایک سو اسّی سے زیادہ ملکوں میں بیک وقت لڑی جارہی ہے۔یورپ کے امیر ملکوں کا حال پاکستان ایسے کم آمدن والے ملک سے بھی زیادہ خراب ہے۔ اٹلی اور اسپین ایسے ترقی یافتہ ملکوں میں سینکڑوں لوگ روزانہ موت کے منہ میںجا رہے ہیں‘ ہزاروںلوگ اس وبائی مرض میں مبتلا ہوچکے ہیں۔ امریکہ کے شہروں میں وبا پھیلتی جارہی ہے۔چند روز پہلے تک ایک ہزار سے زیادہ امریکیوں کو یہ مرض لاحق ہوچکا
مزید پڑھیے


تیل کا دھڑن تختہ

اتوار 22 مارچ 2020ء
عدنان عادل
عالمی منڈی میں خام تیل کا دھڑن تختہ ہوچکا ہے۔ گزشتہ دو ہفتوں میں دنیا میں خام تیل (پیٹرولیم) کی قیمت نصف سے بھی کم رہ گئی ہے اور اس میں مزید کمی کا امکان ہے۔ وجہ یہ ہے کہ بین الا قوامی منڈی میں تیل کا سیلاب آنے والا ہے۔ سعودی عرب نے اعلان کیا ہے کہ وہ یکم اپریل سے روزانہ تقریبا ًسوا کروڑ بیرل تیل عالمی مارکیٹ میں فروخت کرے گا یعنی پہلے کی نسبت چھبیس لاکھ بیرل اضافی تیل۔ متحدہ عرب امارات نے بھی اعلان کیا ہے کہ وہ اپریل سے تیس لاکھ کی بجائے چالیس
مزید پڑھیے


درویش دانشور

بدھ 18 مارچ 2020ء
عدنان عادل
ایک نناوے سال کا بوڑھا شخص جو ہڈیوں کا ڈھانچہ بن چکاہے‘ ا ٓرام کرسی پر نیم دراز ہے۔وہ دو ہفتے سے خاموش تھا۔ آج خوب باتیں کررہا ہے۔ تیمار داری کے لیے آئے احباب سے پوچھ رہا ہے کہ مجھے یہ بتائیں کہ پاکستان اتنی ترقی کیوں نہیں کرسکا جتنی اسے کرنی چاہیے تھی‘ مثلاً یورپ کے ملکوں کی طرح آگے کیوں نہیں بڑھ سکا؟ اسکے عزیز اور احباب اس کے آس پاس بیٹھے ہمہ تن گوش ہیں۔بزرگ سوال کررہا ہے کہ ہمارا تعلیمی نظام کیسے بہتر ہوسکتا ہے؟ وہ کہتا ہے کہ ’ اگر کوئی طالبعلم
مزید پڑھیے


افغانستان کا مستقبل

اتوار 15 مارچ 2020ء
عدنان عادل
ایک ایسا ملک جس کی معیشت نہ ہونے کے برابر ہو‘ روزگار کے ذراءع نہ ہوں ‘ بیشتر افرادجدید تعلیم اور ہنر سے آراستہ نہ ہوں ‘پسماندہ قبائلی معاشرت ہو ‘ لوگوں کے درمیان نسلی اور لسانی اختلافات شدید دشمنی کی حد تک ہوں ‘ جنگ و جدل کی صدیوں پرانی روایات ہوں اس ملک کا کیا مستقبل ہوسکتا ہے;238; اس وقت افغانستان میں لوگوں کے دو بڑے پیشے ہیں ۔ ایک‘ افیون کی کاشت اور اس سے ہیروئن کی تیاری ۔ دوسرے‘ ٹیکس فری اشیا ء کی سرحد پار اسمگلنگ جسے وہ تجارت کا نام دیتے ہیں ۔ افغانستان
مزید پڑھیے




پانی کا بھیانک مستقبل

بدھ 11 مارچ 2020ء
عدنان عادل
پانی کا بحران ہمارے سر پہ کھڑا ہے لیکن بحیثیت ِقوم ہمیں اس کا ادراک نہیں۔ ملک میں میٹھے پانی( جو کھارا نہ ہو) کی قلت ہے‘ گھریلو استعمال کے لیے بھی اور زراعت کی غرض سے بھی۔ قیام پاکستان سے اب تک ہماری آبا دی میں چھ گنا سے زیادہ اضافہ ہوچکا ہے۔ البتہ میٹھے پانی کی دستیابی تقریباًاتنی ہے جتنی بہتّر سال پہلے تھی۔یُوں آبادی بڑھنے کے باعث ملک میں پانی کی اوسطاًفی آدمی دستیابی چھ گُنا کم ہوگئی ہے۔ اگلے دس برسوں میں پاکستان کی آبادی میں سات آٹھ کروڑ کا اضافہ ہوجائے گا۔ سوچیے ‘ اُس
مزید پڑھیے


طالبان‘ امریکہ معاہدہ

اتوار 08 مارچ 2020ء
عدنان عادل
انتیس فروری کو قطر کے دارالحکومت دوحا میںبین الا قوامی سیاست کی ایک نئی تاریخ رقم ہوئی ۔ امریکہ اورافغان طالبان کے درمیان معاہدہ پر دستخط ثبت ہوئے۔ اس عہد نامہ کے اثرات وسط ایشیا اور جنوبی ایشیا کی سلامتی اور علاقائی سیاست پرہی نہیں بلکہ پوری دنیا پر مرتب ہوں گے۔ امریکہ اور طالبان کے درمیان معاہدہ کے دو بنیادی نکات ہیں۔ ایک نکتہ یہ ہے کہ امریکہ افغانستان سے اپنی فوجیں بتدریج نکال لے گا۔ دوسرے‘ طالبان اپنے ملک کی زمین کو کسی امریکہ مخالف تنظیم جیسے القاعدہ یا داعش کو استعمال نہیں کرنے دیں گے۔ دیگر شقیں
مزید پڑھیے


شمسی توانائی کا حصول تیز کریں

جمعرات 05 مارچ 2020ء
عدنان عادل
قدرت نے ہمیں دھوپ کی بے پایاں نعمت سے نوازا ہے مگر ہم اس سے استفادہ نہیں کررہے۔سورج کی روشنی سے بجلی بنانے کی ٹیکنالوجی بہت ترقی کرچکی ہے اور دن بدن اَرزاںہوتی جارہی ہے۔ اس سے نہ تو آلودگی پھیلتی ہے نہ اسے پٹرولیم کی طرح درآمد کرنے پرزرمبادلہ خرچ کرنا پڑتا ہے۔ دنیا بھر کے ممالک تیزی سے شمسی توانائی کے منصوبے لگا رہے ہیںلیکن پاکستان اس میدان میںچیونٹی کی طرح رینگ رینگ کر چل رہا ہے حالانکہ دھوپ سے بجلی بنانے کے لیے پاکستان ایک بہت موزوںملک ہے‘ اسکے جنوبی علاقوں میں اوسطاً روزانہ آٹھ گھنٹہ سورج
مزید پڑھیے


بھارت‘ امریکہ تعلقات

اتوار 01 مارچ 2020ء
عدنان عادل
چین کی بڑھتی ہوئی طاقت کے سامنے بند باندھنے کی غرض سے امریکہ اور بھارت تزویراتی‘اسٹریٹجک اتحادی ہیں۔ امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ کا بھارت کا حالیہ دو روزہ دورہ اسی اتحا د کو مزید مضبوط و مستحکم بنانے کی سمت ایک اور قدم تھا۔ اس دورہ میں صدر ٹرمپ نے بھارت کو جدید ترین امریکی اسلحہ بیچنے کا اعلان کیا ‘ انہوں نے بھارتی ریاست کی جانب سے مسلمانوں اور دیگر اقلیتوں کے خلاف اقدامات اور انسانی حقوق کی خلاف ورزیوں کو بالکل نظر انداز کرتے ہوئے بھارت کے ہندو انتہا پسند وزیراعظم نریندرا مودی کو ایک غیرمعمولی رہنما قرار
مزید پڑھیے


پن بجلی کی ضرورت

بدھ 26 فروری 2020ء
عدنان عادل
توانائی کا بحران پاکستان کی معیشت کو دیمک کی طرح چاٹ رہا ہے۔ ایک تو ضرورت کے مطابق بجلی دستیاب نہیں ۔ملک میں پانچ کروڑ لوگ بجلی سے محروم ہیں۔ دوسرے‘اسکی قیمت اتنی زیادہ ہے کہ عوام کا بھرکس نکل گیا ہے‘ صنعتکاروں کے لیے کارخانے چلانا مشکل ہوگیا ہے۔ صنعتی پیداوار میں اضافہ ُرک گیا ہے‘برآمدات میں اضافہ نہیں ہورہا۔جب تک سستی بجلی دستیاب نہیں ہوتی‘ پاکستان کی معیشت ہچکولے کھاتی رہے گی۔ آج ہمارا ملک بجلی کے معاملہ پر جس پریشانی کا شکار ہے یہ گزشتہ چار عشروں کی غفلت اور غلط ترجیحات کا نتیجہ ہے۔اسوقت پاکستان اپنی توانائی
مزید پڑھیے