BN

عدنان عادل


پولیس اصلاحات کا سبز خواب


وزیر اعظم عمران خان کے انتخابی منشور میں ایک بڑا وعدہ یہ تھا کہ وہ پولیس کے نظام کی خرابیاں دُور کرکے اسے عوام کی خدمت کا ادارہ بنائیں گے۔ وہ اکثر خیبر پختونخواہ کی پولیس کا حوالہ دیا کرتے تھے جہاں تحریک انصاف کی صوبائی حکومت نے انکے بقول پولیس کو سیاسی اثر و رسوخ سے پاک کرکے ایک مثالی ادارہ بنادیا تھا ۔ تاہم گزشتہ دو برسوںسے وفا ق اور پنجاب میںانکی حکومت ہے لیکن وہ اب تک پولیس کی بہتری کے لیے کچھ بھی نہیں کرسکے۔ان کے دور میں پنجاب میں چار انسپکٹر جنرل پولیس مقرر کیے
بدھ 08 جولائی 2020ء

جنوبی پنجاب سیکرٹریٹ

اتوار 05 جولائی 2020ء
عدنان عادل
تحریک انصاف کی حکومت نے یکم جولائی سے بالآخر جنوبی پنجاب سیکرٹریٹ قائم کردیا ہے۔ ایڈیشنل چیف سیکرٹری کی سطح کا ایک سینئر افسراس سیکریٹریٹ کا سربراہ ہوگا۔ اٹھارہ اہم صوبائی محکموں کے اسپیشل سیکرٹری بہاولپور میں سیکرٹریٹ میں بیٹھیں گے اور ان محکموں سے متعلق اکثر و بیشتر فیصلے بہاولپور میں ہوجایا کریں گے۔ ایک ایڈیشنل انسپکٹر جنرل پولیس ملتان میں تعینات ہونگے جن کے پاس انسپکٹر جنرل ایسے اختیارات ہونگے۔ جنوبی پنجاب گیارہ ضلعوں پر مشتمل ہے جن میں بہاولپور‘ بہاولنگر‘ رحیم یار خان‘ڈیرہ غازی خان‘ راجن پور‘ لیّہ‘ مظفر گڑھ‘ ملتان‘لودھراں‘ خانیوال ‘وہاڑی شامل ہیں۔ ان تمام اضلاع
مزید پڑھیے


بجٹ منظوری کے بعد

بدھ 01 جولائی 2020ء
عدنان عادل
نئے مالی سال کے بجٹ کی منظوری سے پہلے میڈیا میں ایک سنسی خیزی کا ماحول تھا۔ قیاس آرائیاں زوروں پر تھیں کہ حکومت کو قومی اسمبلی میں بجٹ پاس کرانے کے لیے مطلوبہ ووٹ ملنا مشکل ہونگے۔ نتیجہ یہ ہوگا کہ عمران خان بطور وزیراعظم اپنے عہدہ پر قائم نہیں رہ سکیں گے کیونکہ بجٹ مسترد ہونے کو پارلیمانی طرز حکومت میں وزیر اعظم پر عدم اعتماد تصور کیا جاتا ہے۔ اپوزیشن اور حکومتی اتحادیوں دونوں نے حکومت کے خلاف ماحول بنانے میں اپنا اپنا کردار ادا کیا گو بجٹ منظور ہونے کے بعد پتہ چل گیا کہ شور
مزید پڑھیے


دِپسَینگ وادی میں کشیدگی

اتوار 28 جون 2020ء
عدنان عادل
چین اور بھارت کے درمیان مقبوضہ لداخ میں جوفوجی کشیدگی چل رہی ہے اُسکا دائرہ اب بھارت کے اہم فوجی اڈہ دولت بیگ اولڈی کے نواح میں واقع دِپسَینگ وادی تک پھیل چکا ہے۔ چین اور بھارت کی عارضی سرحد پر پین گونگ جھیل اور گلوان وادی کے بعد یہ تیسرا مقام ہے جہاں بھارت کو چین کے ہاتھوں پسپائی کا سامنا ہے۔د ِپسَینگ وادی لدّاخ کے بالکل شمال مشرقی کونہ میں ایک بہت ہی بلنداور انتہائی سرد مقام ہے ۔یہ علاقہ دفاعی اعتبار سے اس لیے اہم ہے کہ اس سے متصل شمال میں بھارت کا فوجی اڈہ دولت
مزید پڑھیے


بڑے شہروں کی اجارہ داری

بدھ 24 جون 2020ء
عدنان عادل
پاکستان میں اڑتالیس ہزار بڑے دیہات اور تقریباً چار سو چھوٹے شہر ہیں لیکن ان سب پر پانچ بڑے شہروں کی حکمرانی ہے۔ اسلام آباد‘لاہور‘ کراچی ‘پشاور اور کوئٹہ میں بیٹھے حکمرانوں نے تمام حکومتی اختیارات اورریاست کے مالی وسائل پر قبضہ کیا ہوا ہے۔ملک کے دو تہائی شہری دیہات اورقصبوں میں رہتے ہیں ‘وہ چند بڑے شہروں کے رحم و کرم پر زندگی گزار رہے ہیں۔ تازہ اعداد و شمار کے مطابق پاکستان کی آبادی بائیس کروڑ سے تجاوز کرچکی ہے۔ ملک کے انتظام و انصرام اور امن و امان کے قیام کے لیے وفاقی حکومت کے ساتھ ساتھ
مزید پڑھیے



غربت اور بیروزگاری

اتوار 21 جون 2020ء
عدنان عادل
معاشی ماہرین کا تخمینہ ہے کہ اس وقت پاکستان کی نصف آبادی غربت کا شکار ہے اور تقریباً ایک کروڑ دس لاکھ افراد روزگار سے محروم ہیں۔گزشتہ دو برسوں میں معاشی ترقی کی شرح سست پڑنے کی وجہ سے پچپن لاکھ افراد بے روزگار تھے لیکن پچھلے چار مہینوں سے کورونا وبا نے معاشی بحران کو مزید گھمبیربنادیا۔ اس کے نتیجہ میں صنعتی پیداوار میں کمی ہوئی‘ تجارت اور ٹرانسپورٹ کو مزید نقصان پہنچا تو بیروزگار افراد کی تعدا بھی دوگنا ہوگئی۔ظاہر ہے جب آمدن ختم ہوجائے یابہت کم رہ جائے تو غربت بھی بڑھتی ہے۔ کورونا ایک قدرتی آفت
مزید پڑھیے


گلوان وادی کی جنگ

بدھ 17 جون 2020ء
عدنان عادل
بہت سے موضوعات پاکستان کے لوگوں کے لیے بہت اہمیت کے حامل ہیں کیونکہ وہ ہماری بقا اور سلامتی سے تعلق رکھتے ہیں لیکن ان پر بات نہیں کی جاتی۔ مثلاً ہماری زندگی اور تہذیب کا انحصاربہت حد تک دریائے سندھ اورا سکے معاون دریاؤں سے ملنے والے پانی پرہے۔ لوگوں کوسندھ کے بارے میں تو کچھ معلومات ہیں لیکن اسکے معاون دریاؤں کا ذکر ہمارے تعلیمی نصاب کی کتابوں تک میں نہیں۔ خاص طور سے وہ دریا اور ندیاںجو دریائے سندھ کے بالائی‘ پہاڑی مقامات پر واقع ہیں۔ ایسا ہی ایک اہم معاون دریا گلوان ہے جو چین میں
مزید پڑھیے


ایک روایتی بجٹ

اتوار 14 جون 2020ء
عدنان عادل
وفاقی حکومت نے اگلے مالی سال 2020-21ء کاجو بجٹ پیش کیا ہے اس سے اندازہ ہوتا ہے کہ تحریک انصاف کی معاشی پالیسیوں میں کوئی جدت نہیں۔عوام نے جن امیدوں اور توقعات کے ساتھ عمران خان کو اقتدار دلوایا تھا ‘ بجٹ ان کا عکاس نہیں ہے۔گزشتہ دو برسوں میں اِس حکومت نے بھی سابقہ حکومتوں کی طرح روایتی ‘گھسے پٹے انداز کے بجٹ پیش کیے ہیں۔یہ بات اپنی جگہ کہ موجودہ حکومت نے کچھ اچھے کام بھی کیے ہیں جیسا کہ ملک کوبیرونی قرضوں کی نادہندگی سے بچا لیا‘ تجارتی خسارہ کم کیا‘ درآمدات کو کنٹرول کرلیا۔ بڑے منصوبوں
مزید پڑھیے


قرضوں کا بجٹ

بدھ 10 جون 2020ء
عدنان عادل
ایک بہت مشکل وقت میں وفاقی اور صوبائی حکومتیں اپنے نئے مالی سال کا بجٹ پیش کرنے والی ہیں۔ فروری سے شروع ہونے والی کورونا وبا نے عوام‘ حکومت اور معیشت سب ہی کو کچل کر رکھ دیا ہے۔ 1952ء کے بعد پہلی مرتبہ ملک کی معاشی ترقی منفی زون میں جا چکی ہے۔ اس وقت پہلا چیلنج یہ ہے کہ معیشت کی کشتی کو مکمل طور پر ڈوبنے سے کیسے بچایا جائے۔ سُن رہے ہیں کہ حکومت ایسا بجٹ پیش کرے گی جس میں نئے ٹیکس نہیں لگائے جائیں گے۔ اللہ کرے ایسا ہی ہو کیونکہ طویل نیم کرفیو
مزید پڑھیے


ٹڈی دل کی یلغار

اتوار 07 جون 2020ء
عدنان عادل
مشکلیں جب آتی ہیں تو چاروں طرف سے آتی ہیں۔مارچ کے مہینے میں ہم کورونا کی موذی وبا سے دوچار ہوئے جو روز بروز بڑھتی جارہی ہے اور ویکسین آنے تک پیچھا نہیں چھوڑے گی ۔یہ مصیبت کیا کم تھی کہ گزشتہ ماہ ٹڈی دل نے یلغار کردی۔ پاکستان کے باون اضلاع ٹڈی دل کی یلغار سے متاثر ہیں۔ تخمینہ ہے کہ کپاس اور مکئی کی فصلوں کا دس فیصد حصّہ ٹڈیوں کے لشکرہڑپ کرگئے ہیں۔ ٹڈیوں کے یہ لشکرمشرقی افریقہ‘ ایران‘ پاکستان اور بھارت تک پھیلے ہوئے ہیں۔ اس خطّہ میں ستّر سال بعد ٹڈی دل کا ایسابڑا حملہ
مزید پڑھیے