BN

مجاہد بریلوی


شرم اِن کو مگر نہیں آتی


لاک ڈاؤن کے سبب گزشتہ چار دن سے گھر پر ہوں۔ تواتر سے اسکرینوں کو دیکھنا مجبوری ہے۔سابقہ اور موجودہ حکمرانوں کو جس میں وزرائے اعلیٰ ،گورنر،وزرائے اعظم ،صدور ،وزیر ،مشیر شامل ہیں ۔چہرے پر مسکراہٹ لائے بغیر ،سوکھے چہروں سے عوام سے اپیل کرتے نظر آرہے ہیں کہ خدارا،اپنے گھرو ں سے نہ نکلیں۔دوست احباب سے دور رہیں۔ساتھ میں جو ٹِکر چل رہے ہیں،اُن میں عوام کو احتیاطی تدابیر بتائی جارہی ہیں کہ ہر گھنٹے بعد 20سیکنڈ تک صابن سے ہاتھ دھوئیں۔ جس چیز کو ہاتھ لگائیں حتیٰ کہ موبائل فون ،اُسے بھی صاف کرتے رہیں۔گھروں میں
بدھ 25 مارچ 2020ء

مُلّا کبھی کابل کے حکمراں نہیں رہے…(آخری قسط)

بدھ 18 مارچ 2020ء
مجاہد بریلوی
اس سے پہلے کہ اپنے اس بیانئے کو جو گزشتہ کالموں میں تاریخی حوالوں سے دیتا رہا ہوں، کہ مُلّا کبھی کابل کے تخت پر نہیں بیٹھے ،ساتھ میں اس بات کی بھی وضاحت کردی تھی اور اس کے لئے سند کے طور پر شاعر ِ مشرق علامہ اقبال کے اس شعر کا بھی حوالہ دیا تھا کہ ملا کی اذاں اور ہے،مجاہد کی اذان اور یہ درست کہ ڈاکٹر نجیب کی حکومت کے خاتمے کے بعد افغان مجاہدین کی ایک دہائی تک حکومتیں آتی جاتی رہیں۔ ۔ ۔ اوریہ بھی درست کہ طالبان کا خود ساختہ امیر
مزید پڑھیے


مُلّا کبھی کابل کے حکمراں نہیں رہے……(2)

هفته 14 مارچ 2020ء
مجاہد بریلوی
پہلے تو اس بات کی وضاحت کرتا چلوں کہ جب میں یہ کہنے کی جسارت کرتا ہوں کہ کابل پر کبھی مُلّاؤں کی حکومت نہیں رہی تو اس کے لئے میں عالم ِ اسلام کے سب سے بڑے شاعر شاعرِ مشرق حضرت علامہ اقبال کے اس شعر کا حوالہ دینا چاہتا ہوں جس میں علامہ کا فرمانا تھا : الفاظ و معانی میں تفاوت نہیں لیکن مُلا کی اذاں اور،مجاہد کی اذاں اور جو کہ پورا کا پورا افغان ملاؤں پر پورا اترتا ہے۔ ۔ ۔ یہ درست ہے کہ افغان مجاہدین کابل میں روس کی پشت پناہی سے
مزید پڑھیے


مُلّا کبھی کابل کے حکمراں نہیں رہے…(1 )

بدھ 11 مارچ 2020ء
مجاہد بریلوی
29فروری کو دوحہ میںجب امریکی افغان امور کے ماہر زلمے خلیل زادے اور افغان طالبان کے نمائندے مُلا برادر تالیوں کی گونج میں دوحہ معاہدے پر دستخط کررہے تھے۔ ۔ ۔ تو انہیں اس وقت اس بات کا پورا یقین تھا کہ وہ پہلی فلائٹ سے مستقبل میں حکمرا نی کا خواب دیکھنے والے ملا برادر اور ان کے تمام سرکردہ کالی پگڑیوں میں اسلام آباد پہنچیں گے ۔اور پھر اسلام آباد سے ہماری وزارت خارجہ کے بابوؤں کے بابو شاہ محمود قریشی کی ہمراہی میں دوسری فلائٹ سے کابل اتریں گے۔اور گھنٹو ں میں کابل
مزید پڑھیے


دوحہ ایکارڈ ،ٹرمپ کارڈ…(2)

هفته 07 مارچ 2020ء
مجاہد بریلوی
ٹرمپ کا خیال تھا کہ دوحہ ایکارڈ اُس کی کامیابی کے لئے ترپ کا پتہ ہوگا۔مگر اب خود اُس کے الٹے گلے پڑگیا ہے۔ ۔۔ ذرا پہلے 29فروری کو ہونے والے معاہدے پر چلتے ہیں۔ معاہدے میں کہا گیا ہے کہ دستخط کرنے کے 135دنوں میں امریکہ اپنی فوج کی تعداد 8600تک لے جائے گا۔جبکہ دیگر اتحادی ممالک بھی اپنی افواج کی تعداد میںکمی لائیں گے۔ اگر ایسا ہوجاتا ہے تو امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ کے لئے نومبر2020میں ہونے والے امریکی صدارتی انتخابات کی مہم میں یہ کہنا ممکن ہوگا کہ انہوں نے ماضی میں کئے گئے اپنے وعدوں پر عمل کیا۔اس
مزید پڑھیے



دوحہ ایکارڈ،ٹرمپ کارڈ… (1)

بدھ 04 مارچ 2020ء
مجاہد بریلوی
ابھی دوحہ میں امریکہ کے افغان امور کے سربراہ زلمے خلیل زاد اور افغان طالبان کے نائب امیر اور ملُا برادر کے درمیان ہونے والے معاہدے کی سیاہی سوکھی بھی نہ تھی کہ اس گھمبیر ،گنجلک ،خونی مسئلے سے جڑے فریق ایک ایک کرکے اس کے مقابل آنا شروع ہوگئے۔کابل ،تہران اور اسلام آباد کی سرکاروں کو دور رکھ کر۔ ۔ ۔ دوحہ میں گزشتہ سات سال سے جو کھچڑی پک کر تیار ہوئی ۔ ۔ ۔ سب سے پہلے تو اُس کی ٹائمنگ بڑی اہم ہے۔ کہ امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ نے امریکہ میں ہونے والے انتخابات
مزید پڑھیے


گمبٹ کا ایدھی

بدھ 26 فروری 2020ء
مجاہد بریلوی
شام کے آخری پہر ۔۔۔ جب ہم دن بھر کی مشق سخن اور نوکری کی مشقت جھیلنے کے بعد۔۔ کراچی کے سمندر سے لگے ایک ہوٹل میں محفل ِ ہاؤ ہو میں مصروف تھے کہ تواتر سے موبائل فون کا ایک نہ ختم ہونے والا سلسلہ شروع ہوگیا۔۔۔ ایک عرصہ ہوا کہ شام کے آخری پہر سے رات کے آخری پہر تک موبائل کو سائلنس یعنی خاموش ہی رکھا ہو ۔ ۔ ۔ کہ گھر ہو یا دفتر سسکتی یا سنسنی خیز خبریں ہی ملتی ہیں۔ مگر جب گمبٹ سے ایک معتبر آواز نے درخواست کی کہ ڈاکٹر رحیم بخش
مزید پڑھیے


ذرا پھر لندن سے۔۔۔ 2

بدھ 19 فروری 2020ء
مجاہد بریلوی
مہینہ دو چھوڑ کر چند دن کے لئے لندن کیا آگیا ۔ ۔ ۔ کہ کراچی پریس کلب کی عندلیبوں نے وہ آہ و زاریاں کیں کہ لندن کے شدید سرد موسم میں بھی وہ کانوںکو گرما رہی ہیں۔ کہا جارہا ہے کہ ادھر تو نوکریوں کے لالے پڑے ہوئے ہیں۔فاقے پڑ رہے ہیں ۔ اورخود اسکرین سے باہر ہونے کے باوجود لندن کے پبوں اور پارکوں کی رنگینیوںکے قصے ،کہانیاں سنا کر سینوں پر دال مونگ رہے ہیں۔اس لئے سوچا تو یہی تھا کہ لندن سے دوسرا کوئی love letterنہیں بھیجوں گا پھر عادت علت کا کیا جائے
مزید پڑھیے


ذرا پھر لندن سے

بدھ 12 فروری 2020ء
مجاہد بریلوی
ہیتھرو ایئرپورٹ پر جب حسب ، روایت بیرسٹر صبغت اللہ قادری اور اُن کی بیگم کریتا کے انتظار میں تھا ۔ ۔ ۔ سالِ گزشتہ جب فیض ؔ میلے میں شرکت کے لئے آمد ہوئی تو امارات کی فلائٹ بھی ہماری قومی ایئر لائن کی طرح تین گھنٹے کی تاخیر سے پہنچی۔ ۔ ۔ مگر ہفتے کی شب نہ صرف فلائٹ آدھے گھنٹے پہلے پہنچی بلکہ لمبی قطار اور امیگریشن کے ہاتھوں سے گذرنے میںچند منٹ ہی لگے مگر ہاں۔ ۔ ۔ اسلام آباد میں بیٹھے کپتان وزیر اعظم عمران خان کو خبر ہو کہ اُن کی حکومت کے
مزید پڑھیے


میں حیراں ہوں وہ ذکرِوادیِ کشمیر کرتے ہیں

هفته 08 فروری 2020ء
مجاہد بریلوی

سِکّہ بند،ترقی پسند شاعرِ عوام حبیب جالبؔ کی شاعری کے بارے میں کہا کرتے تھے کہ عوام میں مقبول تو ہے مگر۔ ۔ ۔ یہ فیض ؔ صاحب کی طرح مستقبل میں زندہ نہیں رہے گی۔ پروپیگنڈے کا نام دے کر ان کے بارے میں ہمارے مارکسسٹ نقاد کہا کرتے تھے کہ۔ ۔ ’’بس یہ جلسے جلوسوں میں عوام کا خون گرمانے کی حد تک ہے ‘‘۔ ۔ ۔ اور پھر یہ اگر رہی بھی تو اُن کے گذر جانے کے سال دو سال بعد تک ۔ آج جالبؔ صاحب کے انتقال کو کوئی تین دہائی ہونے کو آرہی ہے۔اُن
مزید پڑھیے