BN

محمد حسین ہنزل


کچھ باتیں سبع مُعلقات اور امراۃ القیس کی


نسب پرستی،شمشیرزنی ،گھڑسواری، قبائلی رقابتیں اورجنگ وجدل کی طرح شعرگوئی بھی عربوں کی گھٹی میں پڑی تھی۔ ایک مشہور عربی مقولے (الشعر دیوان العرب) میں شعرکو عربوں کی زندگی کا رجسٹر کہا گیا ہے کیونکہ اشعار میں عر ب اپنی زندگی کے سبھی پہلوئوں کا احاطہ کیاکرتے تھے۔اسلام کی آمدسے پہلے عربی شاعری کو جاہلی شاعری کہا جاتاتھا ۔عربی ادب و شاعری کے ساتھ جن لوگوں کا تھوڑا بہت علاقہ رہا ہومیرا یقین ہے کہ ان کومشہورعربی قصیدوں ’’ سبع معلقات‘‘ کے بارے میں ضرورجانکاری ہوئی ہو گی۔ ہمارے ہاں دینی مدارس کے نصاب( درس نظامی) میں جہاں عربی ادب
اتوار 10 مارچ 2019ء

سیانے کہتے ہیں…

جمعرات 07 مارچ 2019ء
محمد حسین ہنز ل
سیانے پٹھان کہتے ہیں کہ ’’ا حمق جب حماقت پر اتر آتاہے تو مخالف کااتنا نہیں بگاڑتاجتنا نقصان وہ خود کو پہنچادیتاہے‘‘۔ پاکستان دشمنی کے سلسلے میں بھارتی وزیراعظم نریندرا مودی نے بھی وہی احمقوں والا گیم کھیل کراپنے ملک کی وقعت کاجنازہ نکال دیا ۔ پلوامہ حملے کا وجہ وقوع (Cause of occurence) کو نظر انداز کرنے کی بجائے مودی صاحب کو اس حملے کے بنیادی سبب کو سمجھناچاہیے تھا کہ آخر کیوں کشمیر میں بیس سال کے نوخیز نوجوان بارودی جیکٹ پہن کر بھارتی افواج کو اپنے سمیت اڑانے پر تُلے ہوئے ہیں؟ مودی صاحب کواگر بھارتی
مزید پڑھیے


’’ پاک بھارت کشیدگی اور مودی ‘‘

اتوار 03 مارچ 2019ء
محمد حسین ہنز ل
جنگیں دراصل دوصورتوں میں لڑی جاتی ہیں۔پہلی صورت میں لڑنے والی جنگوں کو ہم ناگزیر صورتحال سے جنم لینے والی جنگیں کہہ سکتے ہیں۔مثال کے طور پرحالات اضطراری بن جاتے ہیں،دشمن حملہ آور ہو جاتا ہے یوں دشمن کے اقدام سے نمٹنے کی خاطر ایک ملک کو چاروناچار جنگ کی آگ میں کودنا پڑتا ہے جبکہ دوسری صورت میں لڑنے والی جنگوں کاسبب ناگزیر حالات نہیں ہوتے بلکہ اس کے پیچھے مطلق رعونت اور عیاشی کارفرما ہوتی ہے۔ایسی جنگوں کی نوبت جب آتی ہے تو پھر طبل جنگ بجانے والے کسی معقول دلیل کو خاطرمیں لاتے ہیں ،نہ ہی کسی
مزید پڑھیے


مادری زبانوں کا عالمی دن

جمعرات 21 فروری 2019ء
محمد حسین ہنز ل
ہر انسان کی فطری زبان اس کی اپنی مادری زبان ہوتی ہے۔ مادری زبان ہی میں انسان اپنامافی الضمیر کا اظہار کسی بھی دوسری زبان کے مقابلے میں بہتر کر سکتا ہے۔ ماں کی زبان حقیقت میں خواب وخیال کی زبان ہوتی ہے، اسی لئے علم نفسیات اور لسانیات کے ماہرین اس بات پر اصرار کرتے ہیں کہ بچوں کو ایسی زبان میں تعلیم دینی چاہیے جس میں وہ خواب دیکھتے ہوں۔ ان ماہرین کا یہ دعویٰ بھی طویل تجربات کے بعد سچ ثابت ہوا ہے کہ جس بچے کو اپنی مادری زبان میں تعلیم حاصل کرنے کے مواقع
مزید پڑھیے


آہ! پروفیسر ارمان لونی

پیر 11 فروری 2019ء
محمد حسین ہنز ل
پروفیسرابراہیم ارمان لونی کو ہمیشہ کیلئے ہم سے جدا کردیاگیا،اناللہ واناالیہ راجعون۔کیا خوش طبع وخوش رنگ انسان اورکمال کے شاعر تھے۔ بجاکہاہے فرنود عالم صاحب نے کہ''ارمان!تْو زمیں زاد نہ ہوتے تو ستارہ ہوتے ''۔ارمان لونی کی جدائی نے نہ صرف مجاورانِ ادب کو آٹھ آٹھ آنسو رلادیا بلکہ ان کی غیرطبعی موت نے پوری قوم کو دکھی کردیا۔ مجھے یقین ہے کہ اْن کے بہیمانہ قتل کے بعد سوشل میڈیا پرگردش کرنے والے اس ویڈیو کلپ نے بھی ہرکسی کو جھنجھوڑکے رکھ دیاہوگا جس میں چارپائی پر ابدی نیند سوئے ہوئے ارمان سے ان کی ضعیف مگر باہمت ماں
مزید پڑھیے



افغان طالبان: پس چہ باید کرد

جمعرات 07 فروری 2019ء
محمد حسین ہنز ل
اپنی تاریخ کی طویل جنگ لڑنے کے بعد بالآخر امریکہ نے افغانستان سے انخلاکافیصلہ کرلیا ۔امریکہ کو بہرحال ایک دن ضرور نکلناتھا لیکن ڈونلڈ ٹرمپ کی جلد بازی نے امریکی سسٹم کو ایسا کرنے پر شاید وقت سے پہلے مجبور کردیا کہ بس جناب، بہت ہوگیا…اتنا ہی کافی ہے۔دوحہ میں چھ روزہ مذاکرات کے نتیجے میں جہاں امریکہ نے افغانستان سے ڈیڑھ سال کے اندر اپنی افواج کے انخلا پر حامی بھرلی ہے وہاں طالبان نے بھی افغان سرزمیں کو داعش اور دوسری عسکریت پسند تنظیموں کا محفوظ پناہ گاہ نہ بننے اور امریکہ کے خلاف استعمال نہ ہونے
مزید پڑھیے


محسود قتل کیس : ایک نیا موڑ

پیر 28 جنوری 2019ء
محمد حسین ہنز ل
پچھلے سال تین جنوری کو سہراب گوٹھ (کراچی) کے ایک ہوٹل سے لاپتہ ہونے والے خوبرو قبائلی نوجوان نقیب اللہ محسود کے مارنے کی خبر تیرہ جنوری کو ایس ایس پی راو انوار اینڈ کمپنی نے بریک کی۔خبر میں قوم کو بتایا گیا کہ نقیب اللہ محسود تین اور دہشتگردوں سمیت پولیس مقابلے میں مارا گیا او ر ان کے قبضے سے بھاری اسلحہ بھی برآمد کرلیاگیاہے ۔انہی دنوں وائس آف امریکہ کو انٹرویو دیتے ہوئے پولیس مقابلوں کے مذکورہ سپیشلسٹ رائوانوار نے الزام لگایا کہ’’ نقیب اللہ محسود نے دہشتگردی کی تربیت میران شاہ سے حاصل کی تھی اور
مزید پڑھیے


کاکاجی صنوبر حسین مومندکی یاد میں

هفته 26 جنوری 2019ء
محمد حسین ہنز ل
آج ایک ایسی شخصیت کے کردار وافکار پر لکھنے کا ارادہ کیاہے جسے بدقسمتی سے ہم نے بھلا دیاہے ۔ جس کی برسی ہرسال کی طرح امسال بھی خاموشی سے گزرگئی اور کسی کو کانوں کان خبر نہیں ہوئی ۔جی ہاں میں کاکاجی صنوبر حسین مومند کی بات کررہاہوں جنہوں نے انگریز سامراج کے خلاف مزاحمت کو اپنی زندگی کافریضہ سمجھتے ہوئے نہ صرف اپنی تقریر وتحریر کے ذریعے اسے للکاراتھا بلکہ عملی جدوجہد کے ذریعے بھی انہوں نے ان غاصبوں سے ٹکرلینے کی ٹھان لی تھی۔کاکاجی صنوبر حسین نے 1897ء کو پشاور سے چند کلومیٹردور مومندکے علاقے کژہ
مزید پڑھیے


دو آپشن

منگل 08 جنوری 2019ء
محمد حسین ہنز ل
مولانائے روم فرماتے ہیں کہ لومڑی کی بزدلی اگرچہ ضر ب المثل ہے لیکن جس لومڑی کی پشت پر شیر کا ہاتھ ہو تو وہ اپنی فطری بزدلی کے باوجود اس قدر باہمت بن جاتی ہے کہ چیتوں کے ریوڑ سے بھی خائف نہیں ہوتی ۔مولانا فرماتے ہیں کہ یہی حال اللہ تعالیٰ کے خاص بندوں کا بھی ہوتاہے کہ وہ ہر قسم کی خستہ حالی ، شکستہ تن اور بے سر وسامانی کے باوجودغیراللہ کے خوف اور طمع میں مبتلا نہیں ہوتے ہیں۔ایسے لوگ کبھی بھی باطل سے خوف زدہ نہیں ہوتے چاہے باطل کتنا ہی طاقت اور
مزید پڑھیے


مولانا آزاد… عہد رفتہ کاروشن ستارہ

اتوار 30 دسمبر 2018ء
محمد حسین ہنز ل
قائداعظم محمد علی جناح ،علامہ محمد اقبال اور لیاقت علی خان جیسے عظیم لوگ ہمارے محسن اور رہنماتھے ۔ بیشک یہ عہد ساز شخصیات ہمارے عہد رفتہ کے روشن ستارے ہیں۔بڑی خوش آئند بات ہے کہ ہمارے ہاں ہرسال ان قابل رشک شخصیات کو سرکاری اور عوامی سطح پر یاد بھی کیا جاتاہے اوران کے حق میں بہت کچھ لکھا بھی جاتاہے ۔ لیکن بعض اوقات میں اپنے آپ سے یہ سوال کرتا ہوں کہ کیا برصغیر پاک وہند کی تاریخ میں فقط یہی دوتین شخصیات ہمارا سرمایہ ہیں یا اس سلسلے میں ہمارے پاس روشن ستارے اور بھی
مزید پڑھیے