Common frontend top

محمد صغیر قمر


کعبہ کس منہ سے جائو گے؟


چشم تصور میں دیکھ رہا ہوں کہ جدہ کے بین الاقوامی ہوائی اڈے پر ہر دومنٹ کے بعد عازمین حج کی پروازیں اتر رہی ہیں۔سفید احرام میں لپٹے مرد وزن تلبیہ پڑھ رہے: لَبَّیْکَ، اَللّٰہُمَّ لَبَّیْکَ، لَبَّیْکَ لَا شَرِیْکَ لَکَ لَبَّیْکَ، إِنَّ الْحَمْدَ وَالنِّعْمَۃَ لَکَ وَالْمُلْکَ، لَا شَرِیْکَ لَکَ ہر طرف مومنوں کا ہجوم ہے،سب کے لبوں پر اللہ کی کبریائی ہے اور یہ لپک لپک کر اپنی منزل کی طرف رواں دواں ہیں۔جدہ سے بسوں اور گاڑیوں کے قافلے جوق در جوق حرم مکی کی طرف جارہے ہیں۔شمع حرم کے گرد زائرین پروانوں کی طرح طواف کر رہے ہیں۔ان میں
بدھ 12 جون 2024ء مزید پڑھیے

زمین پھٹی نہ آسمان گرا!

پیر 10 جون 2024ء
محمد صغیر قمر
زمین پھٹی نہ آسمان گرا،طوفان برپا ہوئے نہ پتھر برسے۔ہماری آنکھوںکے سامنے ہمارے بچوں کے چیتھڑے اڑا دیے گئے۔بہنوں کی ردائیں تارتار کر دی گئیں،مائوں کے سامنے ان کے جگر گوشے موت کی وادیوں میں اتر گئے۔ بستیاں تاراج ہو گئیں،کھیت کھلیان اجڑ گئے۔ وہ پکارتے رہے،التجائیں کرتے رہے لیکن ہم چپ رہے، تماشائی بنے رہے۔ہم اپنی توپیں، میزائیل اور راکٹ پالش کرتے رہ گئے۔ اسرائیل جیسی ایک مختصر ریاست نے اسلامی دنیا کے ستاون ملکوں کے عوام ،حکمرانوں اور فوجوں کو ناکوں چنے چبھوادیے۔ہم نے جلوس نکالے،نعرے لگائے،اسرائیل کو بددعائیں دیں لیکن اللہ نے ہماری ان دعائوں کو
مزید پڑھیے


آزادکشمیر؟

جمعه 17 مئی 2024ء
محمد صغیر قمر
آخر کار آزادکشمیر میں وہ ہو گیا جس جانب اس کالم نگار نے گزشتہ بر س مئی میں انہی صفحات میں اشارہ کیا تھا۔آزادکشمیر کا موجودہ خطہ یہاں کے باسیوں نے۱۹۴۷۔۱۹۴۸ میں اپنے زور بازو سے آزادکر پاکستان کاحصہ بنایا تھا۔یہاں کے لوگ بامروت،مہمان نواز اور جری تو ہیں ہی لیکن تاریخ بتاتی ہے کہ اگر انہیں محبت اور مروت کے جواب میں نفرت کا سامنا ہوگا تو یہ ہمیشہ سے شدید ری ایکشن کرتے رہے ہیں۔آزادکشمیرمیں گزشتہ انتخابات میں تحریک انصاف سب سے بڑی پارلیمانی جماعت کی حیثیت سے اقتدار میں آئی تھی۔دوسال کے مختصر عرصے میں
مزید پڑھیے


دو چہرے

جمعه 10 مئی 2024ء
محمد صغیر قمر
ایک مسلمان کیا کر سکتا ہے؟جب اس کے شہروں پر آتش و آہن کی بارش جاری ہو،اس کا گھر تباہ کیا جا رہا ہو اوربچے اس آگ میں جل رہے ہوں؟ہمارے دانش فروش دور کی کوڑی لاتے ہیں اور سمجھاتے ہیں کہ ایسے میں صبر سے کام لینا چاہیے ورنہ سب کچھ تباہ ہو جائے گا۔اس بات کو بھی مان لیا جائے توکیا یہ ممکن ہے کہ بدمعاش آپ کو چھوڑ دیں گے؟جن کے ذہن میں یہ فتور ہے کہ پچھلے سال ۷ اکتوبر کو حماس اسرائیل پر حملہ آور نہ ہوتی تو اسرائیل اتنا ردعمل نہ دکھاتا،وہ اب یہ
مزید پڑھیے


رعونت پر خاک

جمعرات 02 مئی 2024ء
محمد صغیر قمر
جنگیں کسی مسئلے کا حل نہیں ہوتیں لیکن پسپائی بھی مسائل کا حل نہیں۔ حیرت اس پر ہے کہ ملکوں پر چڑھائی صرف امریکا ہی کی خواہش کیوں رہتی ہے ؟ ویٹو کا نا معقول ’’ حق ‘‘ رکھنے والے باقی ممالک ہوس ملک گیری کا شکار کیوں نہیں ہوتے۔ اس دنیا کے امن کا اصل ذمہ دارصرف امریکا ہی کیوں بن جاتا ہے۔ ستمبر ۱۸۹۸ء میں سوئٹزر لینڈ کے شہر باسلے میں بزرگ یہودی دانشوروں نے عالمی یہودی ریاست کا منصوبہ پیش کیاتھا۔ ان کاخیال تھا کہ ایک سو برس کے بعدو ہ پوری دنیا کے وسائل پر قبضہ
مزید پڑھیے



بھارتی انتخاب اور مسلمان

بدھ 24 اپریل 2024ء
محمد صغیر قمر
دنیا کی نام نہاد ’’بڑی‘‘ جمہوریت‘‘ کے ہاں اس برس انتخابات کا عمل شروع ہو چکا ہے اور 4 جون تک یہ عمل جاری رہے گا۔ان انتخابات کے نتائج کیا ہوں گے؟اس بارے میں قبل ازوقت کچھ نہیں کہا جاسکتا لیکن مسلم آبادی کے حوالے سے بھارت کی تمام سیاسی جماعتوں کاطرز عمل بالکل واضح اور دوٹوک ہے۔بھارت میں مسلمانوں کی آبادی اس وقت انڈونیشیا کے بعد سب سے زیادہ ہے۔بھارت میں رائے عامہ کے سروے اوپنیین پول(Opinon pole ) کے مطابق2024ء میں بھارتی مسلمان دس وجوہ سے جان بوجھ کرپسماندہ رکھے گئے ہیں یااچھوت تصور کیے جاتے ہیں۔ بھارت میں
مزید پڑھیے


عہدِ کم ظرف

هفته 20 اپریل 2024ء
محمد صغیر قمر
نائن الیون کے دو مینارے اور مسلمان حکمران مسلمانوں کے نصیبوں پر گرے تھے کہ دنیا کا ہر مسلمان زیر عتاب آ گیا ۔جب کہ عالم اسلام کے حکمران اپنے ہی عوام کے در پے آزار ہو گئے ۔ امریکا کی انسان دشمن پالیسیوں کے مقابل آواز بلند کرنے والے قابل گردن زدنی ٹھہرے اور امریکا کی ہاں میںہاں ملانے والے سر خرو ‘سر بلند اور دل پسند ۔ جموں و کشمیر میں ایک معرکہ برپا ہے جسے اس کے مکینوں نے بھارت کی مسلط کردہ کھلی جنگ کے عوض قبول کیا ۔ نہتے اور بے بس اہل
مزید پڑھیے


اے بسا کہ آرزو!

بدھ 17 اپریل 2024ء
محمد صغیر قمر
مشرق وسطیٰ میں صلیبی جنگ میں نئی شدت آ چکی ہے ۔وہ لڑائی جو امریکہ نے نائن الیون کے بعد افغانستان میں شروع کی تھی اور جسے بعد میں عراق تک وسعت دے دی گئی ‘ اب امریکی گماشتے اسرائیل کے ذریعے وہ جنگ باقی کو بھی اپنی لپیٹ میں لے رہی ہے ۔گزشتہ چھ ماہ کے دوران پینتیس ہزاربے گناہ فلسطینی شہری اس جنگ کا لقمہ بن چکے ہیں‘ہزاروں زخمی ہیں‘شہر ‘قصبے اور دیہات ملبے کا ڈھیر بنا دیے گئے ۔اسرائیل کی اس ننگی جارحیت میں امریکہ بھی عریاں ہو کر سامنے آ گیا ہے ‘لیکن کسی کی مجال
مزید پڑھیے


ہجوم مومناں!!

پیر 08 اپریل 2024ء
محمد صغیر قمر
یہ ۱۹۹۰ء کے ابتدائی ایام کا واقعہ ہے۔مقبوضہ کشمیر میں بیداری کی نئی لہر جنم لے چکی تھی ۔ اس نئی لہر میں نیا رنگ داخل ہو ا تھا۔ لہو کا رنگ ‘ جو اس سے قبل کشمیر کی تحریک میں نہیں تھا ۔ صدیوں سے چرب دست اور تر دماغ کشمیری رزم آرائی سے دور رہے جب بلی بھی تمام راستے مسدود پاتی ہے تو پنجے مارتی ہے ۔کچھ ایسا ہی اہل کشمیر کے ساتھ ہوا ۔ یہ وہ زمانہ تھا جب پوری ریاست ایک نئے عزم اور ولولے کے ساتھ غلامی کی زنجیریں توڑنے کے لیے اٹھ
مزید پڑھیے


بابائے گوجری

جمعه 22 مارچ 2024ء
محمد صغیر قمر
آزادی کے خواب اپنی آنکھوں میں سجھائے بابائے گوجری بھی چلے گئے۔ وہ ایک درد سے بھرا انسان تھا،جس کے رگ و ریشے سے کشمیر کے زخم پھوٹتے تھے،مندمل ہوتے تھے اور بابا جی انہیں کھرچ کر پھر تازہ کر دیتے تھے۔ بابائے گوجری رانا فضل حسین کا درد وہی جان سکتا ہے جس کے سینے میں وطن کی جدائی کا گھائو گہرا ہو اور آزادی کی پیاس جس کی روح کو بے کل رکھتی ہو ۔میرا ان سے درد مشترک کا رشتہ رہاہے ۔مقبوضہ راجوری میں میرے اجداد کی قبریں ہیں اور پیر بڈیسر پہاڑ کے اس
مزید پڑھیے








اہم خبریں