BN

ڈاکٹر طاہر مسعود

خان صاحب! ذرا سنبھل کے

جمعه 22 جون 2018ء

بنی گالہ میں ناراض کارکنوں کا اجتماع ہم نے ویڈیو پر دیکھا، عید کا تیسرا دن تھا۔ عمران خان علیم خان کے چارٹرڈ طیارے پر عمرہ کر کے لوٹے تھے اور ادھر وہ کارکنان تحریک انصاف کے جو انصاف پر مبنی معاشرے کے قیام کے لیے عمران خان کے جلسوں میں پچھلے بیس برسوں میں دریاں بچھاتے اور دھرنوں کو آباد کرتے آئے تھے۔ اب کے عمران خان زندہ باد کہنے نہیں، یہ شکایت لیے آئے تھے کہ کپتان! ٹکٹ انہیں ملے جو شریک سفر نہ تھے۔ عمران سیاہ چشمے میں انہیں تسلی دیتے رہے کہ ہم ریویو (نظرثانی) کریں
مزید پڑھیے


ایک بے نام سی طلب کے سوا

هفته 16 جون 2018ء

اگر تارڑ صاحب کو یہ تکلیف ہے کہ ان کے قلم کا کوئی خریدار نہیں تو یہ دکھ ہمیں بھی ہے۔ مگر تارڑ صاحب اور ہمیں ‘ دونوں کو قطعی اندازہ نہیں کہ جو قیمت لگے گی اور اس کے عوض یہ عین ممکن ہے کہ ہم بھی بڑے فارم ہائوس کے مالک بن جائیں جس میں خوش رنگ پرندے ہمہ وقت چہچہاتے ہوں اور رات گئے تک خوش باش دوستوں کی محفلیں جمتی رہیں جس میں قومی سیاست دانوں کی حماقتیں اور ان کے بھول چوک کے لطائف سنائے جائیں اور ان پر قہقہے پڑتے رہیں۔ لیکن قلم کو
مزید پڑھیے


معاملہ ہر کام میں دیر کردینے کا

جمعرات 14 جون 2018ء
دفعتاً یہ خیال بجلی کی تیزی سے ہم پہ نازل ہوا کہ ہمیں اپنی صحت پہ توجہ دینی چاہیے۔ اپنے سراپے کا جائزہ لیا تو کھلا کہ پیٹ آگے کو نکل آیا تھا، وزن بھی بڑھ گیا تھا، کثرت سگریٹ نوشی ہے۔ چہرے پہ جھائیاں سی پڑ گئی تھیں۔ صحت کی اہمیت سے انکار تو ہمیں کبھی نہیں رہا۔ اپنے ملاقاتیوں سے بھی تواتر سے ہم کہتے رہے کہ ایک مدت تک اس ناچیز کی رائے تھی کہ دنیا میں وقت سے زیادہ قیمتی شے کوئی نہیں۔ وقت ایک بار گزر جائے تو پلٹ کر نہیں آتا اور یہ سمجھنا
مزید پڑھیے


پرامن بقائے باہمی برائے انسان و حیوان

اتوار 10 جون 2018ء
نئے گھر میں ہمارا سابقہ پہلے ان کاکروچوں سے پڑا جو کمروں اور باتھ روموں میں نہایت دیدہ دلیری سے ادھر ادھر بھاگتے پھر رہے تھے۔ چونکہ میں بقائے باہمی کے سنہری اصول پہ یقین رکھتا ہوں اور ہر جاندار کو جینے کا حق دینے کا دل سے قائل ہوں اس لیے میں نے ان کاکروچوں کی سرگرمی کا ذرا نوٹس نہ لیا۔ لیکن میری بیوی حقیقت پسند واقع ہوئی ہے اس کا نقطہ نظر یہ تھا کہ مالک مکان نے ایک خطیر کرائے کے عوض مکان پر رہنے کا حق صرف ہمیں منتقل کیا ہے اس لیے اس میں
مزید پڑھیے


داستانِ الم دراز نہیں

هفته 09 جون 2018ء
رئوف کلاسرا ایک صاحب دل، صاحب کردار صحافی ہیں، مطالعے کے رسیا، کتابوں کے عاشق۔ اس لیے مجھے اچھے لگتے ہیں۔ آج کل وہ معرکۂ ریحام و عمران کی داستان میں اپنے تجربات و مشاہدات رقم کرنے میں مصروف ہیں۔ داستان کی خوبی یہ ہوتی ہے داستان گو لطف سخن اس طرح دراز کرتا ہے کہ پڑھنے والوں کی دلچسپی اور تجسس بڑھتے جاتے ہیں اور داستان شیطان کی آنت کی طرح پیچ در پیچ الجھتی اور کچھ سلجھتی آگے اور آگے کو چلتی چلی جاتی ہے۔ داستان کا دوسرا وصف اس کا مرکزی نکتہ ہوتا ہے جس کے گرد
مزید پڑھیے


یہ بھی کیا کوئی کتاب ہے؟

جمعه 08 جون 2018ء
کوئی نہیں جانتا کہ جو چار اطراف ہنگامہ آرائی ‘ شورو غوغا اور اتھل پتھل ہے اس کی تہہ سے اچھل کر کیا نکلے گا اور گنبد نیلو فری رنگ بدلے گا بھی یا سب کچھ ویسا ہی اسی حالت میں رہے گا جیسا کہ ہے۔ اب سے نہیں صدیوں سے وہی ظلم و استحصال کا پرانا‘ فرسودہ نظام‘ وہی نابرابری اور عدم مساوات‘ وہی حیلہ پرویزی اور وہی بے بسی اور ناطاقتی عوام کی جو کروڑوں میں ہیں مگر سطح سمندر پر ابھر کر مٹ جانے والے بلبلوں کی طرح فنا پذیر اور غیر اہم۔ ایسا کیوں ہے؟ کیا
مزید پڑھیے


جینا سب کے لیے

جمعرات 07 جون 2018ء
کیسے ہوتا ہے یہ سب کے لیے جینا/ خود کو چھوڑ کر خود کو نظر انداز کر کے دوسروں کے دکھوں کو سمیٹ لینا، محسوس کرنا ان کے آنسوئوں کو پونچھنا اور پی جانا اپنے نمکین آنسوئوں کو ایسے ہی آتا ہے ایسے ہی سیکھتا ہے دوسروں کے لیے کیسے جیا جاتا ہے جب ہم دوسروں کے لیے سوچتے ہیں تو دوسرے ہمارے لیے ہمارے بارے میں فکر مند ہوتے ہیں یہی ایک چیز ہے جو کم ہے جس کے سبب ہم ختم ہوتے جاتے ہیں دوسروں کی فکرمندی سے ہم جی اٹھتے ہیں اپنے اور دوسروں کے اندر ہمارا جینا دوسروں کے لیے ہمارا اپنا جینا بن جائے تو امر ہو جاتی ہے یہ زندگی اچھی بھی تو ہو جاتی ہے اے خدا! ہمیں سکھا دے بتا دے کیسے ہوتا ہے یہ کام کیسے ہم جی سکتے
مزید پڑھیے


امید بہار مگر اک ذرا آہستہ

اتوار 03 جون 2018ء
تبدیلی دبے پائوں آتی ہے۔ ایسی تبدیلی جو دیرپا اور دور رس ہو۔ انقلاب دھوم دھڑکے سے آتا ہے۔ تخت کو گرا کے اور تاج کو اچھال کے آتا ہے۔ ایک جہاں کو تہہ و بالا کر کے اور ایک نظام کے بیخ و بُن کو اکھاڑ کے آتا ہے لیکن زندگی کے معمول پہ آتے ہی اس انقلاب کو بھی گھن لگ جاتا ہے اور حکومت و اقتدار کی لذت ‘ انسانوں کو محکوم بنانے کی ہوس ہی دیکھے گئے خواب کا شیرازہ بکھیر دیتی ہے اور آخر آخر کو پتا چلتا ہے کہ ایک ظالم کی جگہ دوسرے
مزید پڑھیے


سعی و عمل سے تبدیلی

جمعرات 31 مئی 2018ء
واقعہ تو یہ ہے کہ ہم انتخابات سے ڈسی ہوئی قوم ہیں۔ ملک کے پہلے عام انتخابات کے نتیجے میں ملک ہی ٹوٹ گیا۔ دوسرے عام انتخابات ہوئے تو گیارہ سالہ فوجی آمریت مسلط ہو گئی اور منتخب سابق وزیر اعظم کو پھانسی دے دی گئی۔ تیسرے انتخابات غیر جماعتی بنیادوں پر ہوئے مگر نہ اسمبلی چل سکی نہ وزیر اعظم‘ دونوں کو گھر بھیج دیا گیا پھر مسلسل چار انتخابات ہوئے اور چاروں بار حکومتوں کا دھڑن تختہ کر دیا گیا۔ یہ سب کچھ بار بار کیوں ہوا؟ تاکہ عام آدمی اور اس کے ووٹ کی حکمرانی قائم نہ
مزید پڑھیے


عجب اک ’’سانحہ‘‘ سا ہوگیا ہے!

اتوار 27 مئی 2018ء
ایک دن پہلے کے اخبار میں تصویر چھپی کہ لندن کے میئر صاحب جو خیر سے پاکستانی ہیں‘ بس سٹاپ پر کھڑے بس کے انتظار میں سوکھ رہے ہیں۔ ان کے قریب ہی ایک اور مسافر بھی اس انتظار میں میئر صاحب کے شریک ہے۔ اخبار نے کیپشن میں لکھا ہے کہ یہ صاحب ان کے ووٹر ہیں۔ گویا آج کی انگریزی زدہ اردو میں ہم یہ کہیں گے کہ ووٹ لینے والے میئر صاحب اور ووٹ دینے والے ووٹر صاحب دونوں ایک پیج یا ایک ہی صفحے پر ہیں۔ میئر صاحب کی ایک امتیازی حیثیت تو یہی ہے کہ
مزید پڑھیے