ڈا کٹر طا ہر رضا بخاری



۔۔۔وقتِ دعا ہے


سلطان المشائخ حضرت خواجہ نظام الدین اولیائؒ فوائد الفواد کی نویں مجلس میں فرماتے ہیں کہ مصیبیت کے نازل ہونے سے قبل دعا کرنی چاہیے، مصیبت جب اوپر سے نازل ہوتی اور دعا نیچے سے اوپر جاتی ہے، تو ہر دو کا فضا میں آمنا سامنا ہوتا ہے ، اگر دعا میں قوت اور طاقت ہو تو وہ مصیبت کو واپس لوٹا دیتی ہے اور اگر قوت نہ ہوتو پھر مصیبت نازل ہوجاتی ہے ۔ آپ مزید فرماتے ہیں کہ جب تاتاریوں نے 1221ء میں یلغار کی اور یہ مصیبت نیشاپور کے پاس پہنچی ، جِس کے نتیجے میں
پیر 06 اپریل 2020ء

مدارس دینیہ میں ’’تصوف‘‘ کی تدریس…(1)

پیر 30 مارچ 2020ء
ڈا کٹر طا ہر رضا بخاری
قومی اور بین الاقوامی سطح پر ’’دینی مدرسہ سسٹم‘‘ کو بے شمار چیلنجز درپیش ہیں۔ ایک طرف دہشت گردی اور انتہا پسندی کے تانے دینی مدارس سے منسلک کرنے کی کوشش کی جا رہی ہے‘ جبکہ دوسری طرف دینی مدارس کے فارغ التحصیل۔ دور حاضر میں دینی اور عصری تقاضوں سے عہدہ برآ ہونے کو تیار نہ ہیں۔ جدید عصری تناظر میں صاحبان محراب و منبر‘ اصحاب سجادہ و ارباب مسند تدریس کو اخلاص‘ محبت ‘ رواداری‘ انسان دوستی اور تحمل و برداشت جیسے جذبوں سے سرشار ہونے کی اشد ضرورت ہے‘ جس کے لئے ’’صوفیانہ انداز فکر و عمل‘‘
مزید پڑھیے


سرِ لا مکاں سے طلب ہوئی---

پیر 23 مارچ 2020ء
ڈا کٹر طا ہر رضا بخاری
غمگسار چچا اور وفا شعار رفیقہ حیات کے دنیا سے اُٹھ جانے کے بعد ،مکہ والوں کے تیور یک لخت بدل گئے ، شائستگی اور احترام کی بجائے بے مروتی اور سنگدلی غالب آگئی ،مکہ میں اسلام کے شجر طیبہ کے بار آور ہونے کے امکانات مشکل نظر آئے، توحضورﷺ نئے اُفق دریافت فرمانے کی طرف متو ّجہ ہوئے ،جس کے لیے فوری طور پر طائف کا سفر اختیار فرمایا ، طائف مکہ سے 120میل دور ایک خوشگوار اور پُر فضا پہاڑی مقام، جہاں کی آبادی خوشحال اور آسودہ حال تھی ، یہ علاقہ بنو ثقیف کی ملکیت تھا ،جن
مزید پڑھیے


در شبستان ِحرأ۔۔۔۔۔

پیر 16 مارچ 2020ء
ڈا کٹر طا ہر رضا بخاری
"غارحرأ" ۔۔۔ طلب وجستجو کی غار،" جبل نور" ۔۔۔ روشنی اور رحمت کا پہاڑ۔ مکہ معظمہ میں، بجانب شمال مشرق، تقریباً چار کلومیٹر کے فاصلے پر ، یہ خشک اور بے آب و گیاہ پہاڑ، جس کا راستہ کٹھن اور دشوار---کہ صحتمند اور طاقتور آدمی بھی ذراہمت ہی سے پہنچ پاتا، جہاں اظہارِ نبوت سے قبل، خلوت گزیں ہو کر ، حضور ﷺ، اللہ تعالیٰ کی عبادت کیا کرتے تھے،پتھر کی بڑی سِلوں سے بنے، اس غار کی لمبائی بارہ فٹ جبکہ چوڑائی اور اونچائی چھ فٹ ہے، اندر صرف ایک آدمی کے نماز پڑھنے ، بیٹھنے یا لیٹنے کی گنجائش
مزید پڑھیے


بہ کعبہ ولادت

پیر 09 مارچ 2020ء
ڈا کٹر طا ہر رضا بخاری
آج تیرہ رجب المرجب ہے‘ معتبر روایات کے مطابق آج سے تقریباً چودہ سو پینسٹھ سال قبل؟30عام الفیل‘ اظہار نبوت سے دس سال پہلے ‘ حرم کعبہ کے اندر ‘ آج‘ یعنی 13رجب کے دن‘ کعبہ کے متولی اور بنو ہاشم کے سردار حضرت ابو طالب کے ہاں ایک ایسی جلیل القدر ہستی اور عظیم المرتبت شخصیت کی ولادت ہوئی‘ جن کے اسلام کو نبی اکرم رسولِ محتشم ﷺ نے سب پر مقدم‘ جن کے علم کو سب سے افضل اور بُردباری میں سب سے بڑھ کر قرار دیتے ہوئے‘ اس کی عظمت اور فضیلت کا اعلان کیا۔ آپ کی
مزید پڑھیے




خوا جۂ خواجگان---غریب نوازؒ

پیر 02 مارچ 2020ء
ڈا کٹر طا ہر رضا بخاری
حضرت خواجہ غریب نواز،خواجہ معین الدین چشتیؒ کے 808ویں سالانہ عرس کی مرکزی تقریبات آج بیک وقت لاہور اور اجمیر شریف میں جاری ہیں ، لاہور میں منعقدہ اہم ترین تقریب ،آپ کے اُ س "حجرئہ اعتکاف"یا"چلّہ گاہ"کا غسل شریف ہے ، جہاں آپؒ کم وبیش ساڑھے سات سو سال قبل ، برصغیر میں تشریف فرما ہوتے ہوئے ، اوّلین حاضری دے کر ،اکتساب فیض کرکے ،دنیا کو اس دَر کی "گنج بخشیوں"کی طرف متوجہ کیا۔یہ "چلّہ " خواجۂ اجمیر کے لیے جہاں فیضِ رَبّا نی کا ذریعہ بنی وہیں آنے والے دور کے تقاضوں اور ضروریات کے حوالے سے
مزید پڑھیے


از رسالت در جہاں تکوینِ ما

پیر 24 فروری 2020ء
ڈا کٹر طا ہر رضا بخاری
گزشتہ روز 92ایچ ڈی ٹی وی پر ہفتہ وار لائیو پروگرام کا موضوع قرآنِ پاک کی سورہ الاحزاب کی معروف آیت نمبر 40تھی، جسکا عمود اور مرکزی نقطہ تو یہی تھا کہ عقیدہ ختم نبوت محض دینی اعتبار ہی سے نہیں بلکہ سیاسی، سماجی اور تہذیبی حوالے سے بھی از حد اہمیت کا حامل ہے اور اگر خدانخواستہ یہ بنیادی نقطہ اسلامی فکرو عمل سے نکل جائے تو شاید مسلمانوں کو اپنے الگ وجود اور تشخص کا جواز باقی رکھنا مشکل ہو جائے، یہی وجہ ہے کہ محض علماء یا دینی طبقات ہی نہیں بلکہ جدید فکر سے آراستہ… علامہ
مزید پڑھیے


’’سقیفہ بن ساعدہ‘‘

پیر 17 فروری 2020ء
ڈا کٹر طا ہر رضا بخاری
"سقیفہ"۔ سَقَفٌ سے ہے، جس کے معنی "سایہ دارجگہ "کے ہیں، یعنی ایسا سائبان ، چھَپریا سایہ دار جگہ۔۔۔ جہاں لوگ رسمی یا غیر رسمی طور پر اکٹھے ہو کر اپنے مختلف امور پر تبادلہ خیال کرتے ہوں، جیسے ہمارے دیہاتی یا دیسی ماحول میں "ڈیرہ"یا چوپال وغیرہ ، جہاں سرِشام ۔۔۔ یا سردیوں کی ایسی دھوپ اور چمکتے دنوں میں لوگدن میں بھی اکٹھے ہو جاتے اور نجی، ذاتی ، علاقائی اور قومی امور پر تبادلہ خیال کرلیتے ہیں، بالعموم قبیلہ/خاندان کے بزرگ یا سربراہ اپنے ہاں اس نوعیت کے مقام کا اہتمام ضرور کرتے۔ اسی طرح قبائلی نظام
مزید پڑھیے


’’ قُبّۃُ الصَّخْرَہْ ‘‘۔۔۔ طلائی گنبد

پیر 10 فروری 2020ء
ڈا کٹر طا ہر رضا بخاری
" قُبہ"عربی میں گنبد اور ٹیلے کو کہتے ہیں جبکہ "الصَخْرَہ"کے معنی "چٹان"کے ہیں ، بیت المقدس میں یہ ایک خوبصورت احاطہ ہے جسے عام طور پر "مسجد اقصیٰ"سمجھا جاتا ہے، حالانکہ یہ مسجد اقصیٰ نہیں ہے بلکہ " قُبّۃُ الصَّخْرَہ"ہے، جس کے سنہری گنبد کے نیچے وہ پتھریلی چٹان ہے ، جہاں سے نبی کریم ﷺ معراج پر تشریف لے کر گئے، اسی چٹان پر، جب نبی اکرم ﷺ براق پر سوار ہو کر، بلندی کی طرف روانہ ہوئے، تو یہ چٹان بھی وفور محبت میں اوپر بلند ہوئی، جس کو جبرائیلؑ نے اپنے ہاتھ سے پیچھے دھکیل
مزید پڑھیے


کرتار پور راہداری ۔۔۔"سنگل کوریڈور"

پیر 03 فروری 2020ء
ڈا کٹر طا ہر رضا بخاری
ضلع نارووال سے 17 کلومیٹر کے فاصلے پر ، تحصیل شکرگڑھ کے قریب، دریائے راوی کے کنارے، "کوٹھے پنڈ"نامی ایک معمولی سے گاؤں میں’’ گوردوارہ سری دربار صاحب کرتا پور‘‘ ، سکھ مذہب کا سب سے مقدس تاریخی مقام ہے، "سری "کا معنی "مقدس"۔ جبکہ "کرتار"کا معنی ہے"کرنے والا"۔ سکھوں کے ہر گُرو نے ایک نئی بستی آباد کی، کرتارپور کی یہ بستی سکھ مذہب کے بانی بابا گرونانک نے آباد کی، یہیں پر انہوں نے اپنی زندگی کے آخری سترہ سال گزارے، اور 1538ء میں، انہوں نے یہیں پر وفات پائی اور ان کی آخری رسومات عمل میں آئیں۔یہاں
مزید پڑھیے