ڈا کٹر طا ہر رضا بخاری


سیفؔ ’’اندازِ بیاں‘‘ بات بدل دیتا ہے


کہتے ہیں کہ ایک بادشاہ کو ، کوئی خواب آیا۔ شاہی مُعَبِّر ، مُنَجِّم، ستارہ شناس اور زائچہ گر طلب کیے گئے ، بعد از طویل غوروفکر اور بحث و تمحیص--- بادشاہ سلامت کو مطلع کیا گیا کہ ، جہاں پناہ! آپ کی آنکھوں کے سامنے ،آپ کے سارے عزیز،دارِ فانی سے رخصت ہو نگے، اور اُن کے جنازے آپ اپنے کند ھوں پر اُٹھائیں گے ۔ بادشاہ نے خبر کو از حد منحوس اور بدشگون جانا ، پریشان ہوا اور غُصے میں شاہی مُعبّراور مُنّجم کو گرفتار کروا کے جیل میں ڈال دیا، اور ساتھ ہی شہر میں اعلان
پیر 13 جولائی 2020ء

مَن و دَست ودَامانِ اٰلِ رسول

جمعه 10 جولائی 2020ء
ڈا کٹر طا ہر رضا بخاری
شیخ شرف الدین ، جو اسلامی دنیا میں "شیخ سعدی" کے نام سے معروف ہیں،1184 ء میں شیراز میں پیدا ہوئے ، آپ،اپنے عہد کی نہایت معروف اور ایسی مایہ نازعلمی شخصیت تھے، جن کے کہے ہوئے اشعار، اقوال اور افکار... اسلامی علمی روایت کا اعزاز اور دینی حکمت و دانش کا افتخارٹھہرے۔اخلاقی تربیت اور تعمیر سیرت کے حوالے سے" گلستان و بوستان" کو بلندمقام میسر آیا۔تیرھویں صدی عیسوی کے آخر میں ، ملتان کے حاکم شہزادہ محمد خاں شہید نے اپنے والد غیاث الدین بلبن کی طرف سے ، شیخ سعدی کو دو مرتبہ ہند وستان آنے کی دعوت
مزید پڑھیے


جنہیں میں ڈُھونڈتا تھا---

پیر 06 جولائی 2020ء
ڈا کٹر طا ہر رضا بخاری
علامہ اقبال کو اپنے عہد کے جس نقشبندی بزرگ سے سب سے زیادہ عقیدت تھی، وہ شیر ربّانی حضرت میاں شیر محمد شرقپوری ؒ تھے،جن کا سلسلۂ طریقت13 واسطوں سے امام ربّانیؒ،حضرت مجدّد الف ثانیؒ سے متصل ہوتا ہے۔ حضرت میاں صاحبؒ1865ء میں، حضرت میاں عزیز الدین کے ہاں شرقپورشریف میں پیدا ہوئے، آپؒ کے وجود سعید کی برکتوں سے سرزمین پنجاب میں اعلا ئے کلمۃُ الحق اور احیائے سنتﷺ کے عظیم کارنامے سر انجام پائے۔انیسویں صدی کے رُبع آخر سے لیکر بیسویں صدی کے نصف اوّل تک ، حضرت میاں صاحبؒ اور آپ ؒ کے خلفا نے آپؒ کے
مزید پڑھیے


’’سرمایۂ ملّت کانگہباں‘‘

جمعه 03 جولائی 2020ء
ڈا کٹر طا ہر رضا بخاری
علامہ اقبال ؒ کو امام ربّا نیؒ ، حضرت مجدّد الف ثانیؒ، شیخ احمد سر ہندیؒ سے از حد عقیدت و محبت تھی، ان کا خیال تھا کہ سلاسل تصوف میں زیادہ تر سکونی(Static) ہیں، جبکہ نقشبندی سلسلہ حرکی"Dynamic"ـاور حضرت مجدّد الف ثانی سلسلہ نقشبندیہ کی اس حرکیّت " Dynamical" کا نقطۂ کمال ہیں۔ حضرت امام ربانیؒ سے،اقبالؒ کے روحانی تعلق اور لگائو کا یہ عالم تھا کہ جب ان کے ہاں جاوید اقبال کی ولادت ہوئی ، تو انہوں نے منّت مانی کہ وہ بڑا ہوگا تو اس کو حضرت امام ربانیؒکی بارگاہ میں پیش کرونگا۔ چنانچہ29 جون1934ء
مزید پڑھیے


جب زمین ہلا کر رکھ دی جائیگی----

پیر 29 جون 2020ء
ڈا کٹر طا ہر رضا بخاری
گزشتہ روز 92ایچ ڈی ،ٹی وی کے ہفتہ وار ’’نورِ قرآن‘‘ میں سورۃ الزلزال کے مضامین پر علماء نے گفتگو فرمائی، تو کتابِ ہدایت کی آفاقیت اور نورانیت کا آفتاب مزید ضوریز اور نور افشاں ہوتا دکھائی دیا۔"کووِیڈ19ـ" نے بلا شبہ روئے زمین کو لرزہ بر اندام کیا ہوا ہے ۔ خوف اور خطرہ ہر شخص پر مسلط ہے، لوگ کورونا کے دُکھوں سے آزردہ اور اس کے لگائے لگے زخموں سے پثر مردہ ہیں، خدافراموش معاشرے بڑی بے باکی اور بے حیائی سے زمین کے گوشے گوشے اور قریے قریے کو جس طرح اپنی نافرمانیوں اور گناہوں سے آلودہ
مزید پڑھیے



ملفوظاتی ادب--- ’’دُعا و قضا ‘‘

جمعه 26 جون 2020ء
ڈا کٹر طا ہر رضا بخاری
سقراط کو افلا طون سے بہتر کوئی شاگرد نصیب ہوانہ ہی افلاطون کو سقراط سے بہتر کوئی استاد ملا، سقراط کے حسین افکار کو، افلاطون نے جس خوبصورتی سے قلمبند کیا، اس پر دنیا کا فکر و فلسفہ ہمیشہ فخر کرتا رہے گا، تقریباً ایسی ہی صورتحال سلطان المشائخ حضرت خواجہ نظام الدین اولیاؒء اور ان کے معروف و معتبر عقیدت مند امیر حسن علاء سجزی المعر وف خواجہ حسن دھلوی کی ہے، جنہوں نے اپنے شیخ کے افکار ، احوال اور ملفو ظات کو جس حُسن و خوبی کے ساتھ جمع کیا وہ متصوفانہ ادب کا گنج گراں
مزید پڑھیے


وطن ِ مَا لُوف ---- ’’جڑانوالہ‘‘

پیر 22 جون 2020ء
ڈا کٹر طا ہر رضا بخاری
طویل عرصے بعد شاہ جی صاحب کی آمد پر دو دن جڑانوالہ رہنے کاموقع میسر آیا۔ سرِشام گھر کے باہر ، بیٹھ کر ۔۔۔ مقامی گاڑیوں اور موٹر سائیکلوں سے اُڑتی خاک اور اُٹھتے دھوئیں کو رگ و پے میں اُتارتا رہا،اسی کو تو " وطنِ مالوف" کہتے ہیں ، یعنی جس کی اُلفت انسان کے قلب و نظر میں پیوست ہو ، جس کی خا ک کے زروں کی خوشبو بھی آدمی کے مشامِ جاں کو معطر کرے، یہی مٹی کی محبت ہے، جس کے لیے لوگ بعض اوقات بڑی بڑی قربانیاں بھی دے دیتا ہے۔70ء کے عشرے میں
مزید پڑھیے


’’مسئلہ فدک‘‘ ----اور گولڑ ہ شریف کا موقف

جمعه 19 جون 2020ء
ڈا کٹر طا ہر رضا بخاری
ابتلاء کا دور ہے ۔انسانی آبادیاں پریشان اور کوچہ وبازار ویران--- ’’احباب ‘‘ہیں کہ ہاتھوں سے نکلتے جارہے ہیں۔ گذشتہ ایک ہفتہ میں صاحبزادہ پیر کبیر علی شاہؒ ، صاحبزادہ سیّد فاروق القادریؒ ،مولانا عبدالتواب صدیقی ؒ،صاحبزاد محمد تاجور نعیمیؒ، خاک میں کیا صورتیں ہوں گی کہ پنہاں ہو گئیں رجوع اللہ ،توبہ اور استغفار کی بجائے ہم ہیں کہ ’’انتہا پسندانہ رویّوں‘‘اور تشدّد آمیز لہجوں کی ترویج اورابلاغ میں پورے زور سے سرگرم ِ عمل ہیں۔ قومی تاریخ کے اس نازک مرحلے پر محراب ومنبر اور مدرسہ وخانقاہ نے یقینا یہ کریڈٹ سمیٹا کہ کٹھن اورمشکل حالات میں دینی لیڈر
مزید پڑھیے


’’کورونا‘‘۔۔۔وقتِ دُعا ہے

پیر 15 جون 2020ء
ڈا کٹر طا ہر رضا بخاری
یونیورسٹی آف ہیلتھ سائنسز کے وائس چانسلر کا کہنا ہے کہ " کورونا" کی موجودہ لہر تشویشناک حد تک خطر ناک ہے۔ مزید یہ کہ تیس فیصد لوگوں میں اس کی علامات ظاہر ہی نہیں ہوتیں،جو کہ اور بھی زیادہ خطرناک ہے ، اس لیے کہ کورونا کے "کیئر ئیر" کو از خود بھی اس کا پتہ نہیں چلتا، وینٹی لیٹر، جس کو کورونا کے علاج میں سب سے مفید سمجھا جاتاہے، پر بھی ننانوے فیصد مریضوں کی اموات ہورہی ہیں، انہوں نے کہا کہ آئی سی یو میں ایک مریض کا انتقال ہوتا ہے ، تو پورے وارڈ
مزید پڑھیے


’’رجالُ الغیب‘‘ ۔۔۔۔اور کوویڈ19

جمعه 12 جون 2020ء
ڈا کٹر طا ہر رضا بخاری
’’رجالُ الغیب‘‘وہ مردانِ کار اور بند گانِ خاص ہیں، جو مصیبت میں لوگوں کے کام آتے، دُکھی انسانیت کا سہارا بنتے، درماندہ قافلوں کی راہنمائی اور حاجت مندوں کی حاجت روائی کا اہتمام، بغیرکسی غرض کے کرتے ہیں۔انہیں " اولیائے مستورین" اور " عبادُ اللہ " بھی کہا جاتا ہے ،’’ رجالُ الغیب‘‘کا اپنا ایک وسیع جہاں اور پوشیدہ نظام ہے،جس کو سمجھنا عام آدمی کے بس میں نہیں ، ان"رجالُ الغیب" کے مختلف مناصب، مقامات اور درجات ہیں، جن میں غوث،قطب، ابدال،اوتاد، افراد، ابرار بطور خاص اہم ہیں، جو اپنے اپنے دائرہ کار کے مطابق ذمّہ داریاں سر انجام
مزید پڑھیے