BN

ہارون الرشید



رات بھر ہوا کہانی کہتی رہی


چاند نور بکھیرتا، رہا ستارے قریب آگئے، اتنے قریب کہ گویا چھوئے جا سکتے ہیں۔ ریگزار سے آنے والی ہوا رات بھر کہانی کہتی رہی۔ ایک شاعر کی حیثیت سے اسد رحمن کو بہت کم لوگ جانتے ہیں جو جانتے ہیں‘ وہ بھی ان کے اس شعر کی بدولت ‘جو ضرب المثل ہو گیا ہے۔ بخت کے تخت سے یکلخت اتارا ہوا شخص تو نے دیکھا ہے کبھی جیت کے ہارا ہوا شخص پنجاب یونیورسٹی سے اردو، انگریزی اور قانون کی تعلیم پانے والا آدمی، میانوالی کے قصبے پپلاں کے نواح میں سرسبز کھیتوں میں بسر کرتا ہے۔ کھجوروں کے وسیع و عریض باغ
پیر 24 جون 2019ء

بیتے ہوئے کچھ دن ایسے ہیں

هفته 22 جون 2019ء
ہارون الرشید
کاہے کا ملال، کس بات کا رنج ؟ آدمی خطاکار ہے ، غلطیاں تو سرزد ہوں گی ہی ۔ ظاہر نہیں ، پروردگار آدمی کا باطن دیکھتاہے ۔ حکم اسی پر لگایا جائے گا۔ انماالاعمال بالنیات۔ کراچی کی یاد آئی تو آتی چلی گئی۔ ساحلِ سمندر سے ادھر ایک کشادہ گھر ۔ اس کی شاندار لائبریری میں وجاہت و وقار کا ایک مجسمہ ۔ پہلی نظر میں ایسا لگا کہ عہدِ قدیم کا کوئی کردار زندہ ہو گیا ہے اور حیرت و استعجاب سے اپنے اردگرد پھیلی ہوئی دنیا کو دیکھتا ہے ۔ اس لکھنے والے پر اعتراض ہے کہ وہ
مزید پڑھیے


جس طرح تارے چمکتے ہیں اندھیری رات میں

جمعه 21 جون 2019ء
ہارون الرشید
کیا یہ زندگی جینے کے قابل ہے ؟ جی ہاں ، جی ہاں ، یہ زندگی جینی چاہئیے ۔ امکانات اور نعمتوں سے بھری ہوئی ۔ اس دھرتی پر ایسے لوگ بھی آباد ہیں ، جن سے ملاقات ، جن کی یاد بھی جی میں اجالا کر دیتی ہے ۔ ڈاکٹر طاہر مسعود کی کتاب میں وہ مجسّم ہو گئے ہیں ۔ مرنے والوں کی جبیں روشن ہے اس ظلمات میں جس طرح تارے چمکتے ہیں اندھیری رات میں ڈاکٹر طاہر مسعود سے پہلی ملاقات چالیس برس پہلے ہوئی تھی ۔ یہ 1979ء کے سرما کا آغاز تھا ۔ کراچی
مزید پڑھیے


کس کی توہین کے ہم درپے ہیں؟

جمعرات 20 جون 2019ء
ہارون الرشید
ناکامی برباد نہیں کرتی‘ خود فریبی تباہ کرتی ہے۔ قربانی کے بکرے تلاش کرنے کا عمل‘ ہوش کے ناخن لیجیے ‘ کس کی توہین کے ہم درپے ہیں؟ اپنے اور اپنی قوم کے؟ کرکٹ کے شائقین کو ذہنی اذیت پہنچانے کا ذمہ دار کون ہے؟ کھلاڑی‘ چیف سلیکٹر، کپتان ’ کوچ‘ بورڈ کے چیئرمین جناب احسان مانی اور دوسرے افسر یا جیسا کہ اپوزیشن لیڈر کہتے ہیں ‘وزیر اعظم عمران خاں؟ اس کار خیر میں حسب توفیق سبھی نے حصہ ڈالا ۔اس ناچیز کی رائے میں سب سے زیادہ ذمہ دار ہمارے ٹی وی چینل ہیں۔ عامر خاکوانی کی طرح ماہرانہ رائے
مزید پڑھیے


دوست آئے وقتِ دفن

اتوار 16 جون 2019ء
ہارون الرشید
حیات کی سب سے بڑی حقیقت ہی ہماری نگاہوں سے اوجھل رہتی ہے۔ پھر اچانک وہ ہمیں آ لیتی ہے۔ مٹھیوں میں خاک لے کر دوست آئے وقت ِدفن زندگی بھر کی محبت کا صلہ دینے لگے رحمت علی رازی چلے گئے ۔یادوں کا ایک ہجوم ہے اور دل کا وہ حال کہ بیان کرنا مشکل ۔ ایسے میں ہمیشہ فاروق گیلانی مرحوم یاد آتے ہیں۔ صاف ستھرے اور سلیقہ مند تو ہمیشہ سے تھے‘آخر کو ایسے تابناک ہو گئے کہ سبحان اللہ ۔سی ایس ایس کے امتحان کا ہنگام تھاکہ ان سے ملاقات ہوئی۔ پھر وہ دن‘ کل شام کی طرح یاد
مزید پڑھیے




یہ آپ نے کیا کیا؟

جمعه 14 جون 2019ء
ہارون الرشید
محمد بن سیرین ؒ کے ہمیشہ یاد رکھے جانے والے اقوال میں سے ایک یہ ہے : دین سب سے زیادہ قیمتی ہے ۔ دیکھ لیا کرو، کس سے لے رہے ہو ۔ آپ کس سے لیتے ہیں ؟ جنابِ وزیرِ اعظم ، کس کی سنتے اور مانتے ہیں؟ کون کون آپ کے اتالیق ہیں؟ سوچے سمجھے بغیر اظہارِ خیال اور وہ بھی ایسے نازک موضوع پر ، آپ نے یہ کیا کیا؟ انتخابی مہم کے دوران آپ نے لا تعداد وعدے کیے تھے ۔ آئی ایم ایف کیا، کسی بھی ملک سے آپ قرض نہ مانگنے جائیں گے۔ بیرونِ
مزید پڑھیے


فیصلے آسمان پہ ہوتے ہیں

جمعرات 13 جون 2019ء
ہارون الرشید
یہ مکافاتِ عمل کی دنیا ہے ۔ نتائج سے کسی کو مفر نہیں ۔ کبھی کوئی بچا نہیں۔ حکم اللہ کا ہے ، بندوں کا نہیں ۔ زمین پر نہیں ، فیصلے آسمان پہ ہوتے ہیں ۔ وہ دن یاد آتے ہیں ،عمران خاں جب شریف خاندان کا معتوب تھا، بے نظیر بھٹو اور آصف علی زرداری کا بھی ۔ راول جھیل کے مقابل یہ بنی گالہ کے شاندار مکان کی ایک شام تھی ۔ اس نے مجھے بتایا کہ بے نظیر بھٹو اور آصف علی زرداری شوکت خانم ہسپتال کا افتتاح کرنا چاہتے تھے ۔ اس نے انکار
مزید پڑھیے


اللہ کا انتظار

بدھ 12 جون 2019ء
ہارون الرشید
اس انگریز خاتون نے پاکستانی قوم کو سمجھ لیا تھا، اپنی کتاب کا عنوان یہ رکھا تھا، Waiting for Allah،اللہ کا انتظار۔ تھے تو آبا وہ تمہارے ہی مگر تم کیا ہو ہاتھ پہ ہاتھ دھرے منتظر فردا ہو ہم ایک انوکھی قوم ہیں۔ دنیا بھر میں مغالطے ہوا کرتے اور پروان چڑھتے ہیں، ان سے مگر چھٹکارا پانے کی سعی بھی کی جاتی ہے۔ ہم مغالطوں کی پرورش وپرداخت کرتے ہیں، آبیاری فرماتے ہیں۔ مغرب نے اللہ کا انکار کر دیا ہے۔ اصل اور دائمی حیات کو تج دیا ہے، جو حقیقی ،دائمی اور لا محدود ہے۔ بھارت کو بالاتری کا بخار چڑھا
مزید پڑھیے


ماں جی

پیر 10 جون 2019ء
ہارون الرشید
پاک فضائیہ کے سبکدوش افسر ملک خداداد خان کی یہ تحریر شاید اکثر نے پڑھی ہو۔ دل کو چھو لینے والی یہ عبارت ایک بار پھر پڑھ لیجیے گا ،کچھ تحریریں ایسی ہوتی ہیں جو بار بار پڑھی جا سکتی ہیں۔ ان کی اہمیت اور تاثر کبھی کم نہیں ہوتا۔ ’’ہمیں اماں جی اس وقت زہر لگتیں جب وہ سردیوں میں زبردستی ہمارا سر دھوتیں۔ لکس ، کیپری ، ریکسونا کس نے دیکھے تھے …. کھجور مارکہ صابن سے کپڑے بھی دھلتے تھے اور سر بھی- آنکھوں میں صابن کانٹے کی طرع چبھتا ... اور کان اماں کی ڈانٹ سے لال
مزید پڑھیے


دودھ پینے والے مجنوں

اتوار 09 جون 2019ء
ہارون الرشید
زندگی انشراحِ صدر میں ہوتی ہے ، مخمصے میں نہیں ۔ یکسوئی ، قرآنِ کریم قرار دیتاہے کہ اللہ کے بہترین بندے یکسو ہوتے ہیں ۔ بیتے مہ و سال کے کتنے ہی دلگداز منظر جی میں جاگ اٹھے ہیں ۔ یادیں ہیں کہ ہجوم کرتی چلی آتی ہیں ۔اللہ اسے برکت دے، اب وہ گمنامی کی گرد میں گم ہو چکا لیکن اس کی اور اس کے فرزند کی تصویر ہمیشہ حافظے میں رہے گی ۔سی ایم ایچ راولپنڈی کی راہداری میں اپنے کڑیل مگر بری طرح زخمی بیٹے کو سہارا دیتے ہوئے وہ کسی دوسرے وارڈ یا
مزید پڑھیے