BN

ہارون الرشید



اللہ کا انتظار


اس انگریز خاتون نے پاکستانی قوم کو سمجھ لیا تھا، اپنی کتاب کا عنوان یہ رکھا تھا، Waiting for Allah،اللہ کا انتظار۔ تھے تو آبا وہ تمہارے ہی مگر تم کیا ہو ہاتھ پہ ہاتھ دھرے منتظر فردا ہو ہم ایک انوکھی قوم ہیں۔ دنیا بھر میں مغالطے ہوا کرتے اور پروان چڑھتے ہیں، ان سے مگر چھٹکارا پانے کی سعی بھی کی جاتی ہے۔ ہم مغالطوں کی پرورش وپرداخت کرتے ہیں، آبیاری فرماتے ہیں۔ مغرب نے اللہ کا انکار کر دیا ہے۔ اصل اور دائمی حیات کو تج دیا ہے، جو حقیقی ،دائمی اور لا محدود ہے۔ بھارت کو بالاتری کا بخار چڑھا
بدھ 12 جون 2019ء

ماں جی

پیر 10 جون 2019ء
ہارون الرشید
پاک فضائیہ کے سبکدوش افسر ملک خداداد خان کی یہ تحریر شاید اکثر نے پڑھی ہو۔ دل کو چھو لینے والی یہ عبارت ایک بار پھر پڑھ لیجیے گا ،کچھ تحریریں ایسی ہوتی ہیں جو بار بار پڑھی جا سکتی ہیں۔ ان کی اہمیت اور تاثر کبھی کم نہیں ہوتا۔ ’’ہمیں اماں جی اس وقت زہر لگتیں جب وہ سردیوں میں زبردستی ہمارا سر دھوتیں۔ لکس ، کیپری ، ریکسونا کس نے دیکھے تھے …. کھجور مارکہ صابن سے کپڑے بھی دھلتے تھے اور سر بھی- آنکھوں میں صابن کانٹے کی طرع چبھتا ... اور کان اماں کی ڈانٹ سے لال
مزید پڑھیے


دودھ پینے والے مجنوں

اتوار 09 جون 2019ء
ہارون الرشید
زندگی انشراحِ صدر میں ہوتی ہے ، مخمصے میں نہیں ۔ یکسوئی ، قرآنِ کریم قرار دیتاہے کہ اللہ کے بہترین بندے یکسو ہوتے ہیں ۔ بیتے مہ و سال کے کتنے ہی دلگداز منظر جی میں جاگ اٹھے ہیں ۔ یادیں ہیں کہ ہجوم کرتی چلی آتی ہیں ۔اللہ اسے برکت دے، اب وہ گمنامی کی گرد میں گم ہو چکا لیکن اس کی اور اس کے فرزند کی تصویر ہمیشہ حافظے میں رہے گی ۔سی ایم ایچ راولپنڈی کی راہداری میں اپنے کڑیل مگر بری طرح زخمی بیٹے کو سہارا دیتے ہوئے وہ کسی دوسرے وارڈ یا
مزید پڑھیے


اس وقت بھی؟

هفته 08 جون 2019ء
ہارون الرشید
ملک ایک بارہ سنگھا بن چکا،سارے سینگ جس کے جھاڑیوں میں پھنسے ہیں،اس پر بھی یہ عالم؟ بدپرہیزی اچھے بھلے صحت مند آدمی کو برباد کر سکتی ہے مریض اپنی مرضی منوانے پہ اگر تل جائے ؟ حکومت اور حزب ِ مخالف کی کشمکش قابلِ فہم ہے۔ غلبے کی جبلت ایسی ہی طاقت ور ہوتی ہے۔عدلیہ پہ ناگوار بحث بھی سمجھ میں آتی ہے۔ایک وفاقی وزیر اور صوبائی حکومت میں جاری بے سرو پا مباحثے کا مطلب کیا ہے؟آخر میں اس کے سوا کیا ہوگا کہ وزیر اعظم دونوں کو ڈانٹ پلائیں۔ سڈنی سے اطلاع یہ ہے کہ فوجی افسروں کے بارے
مزید پڑھیے


دلیل یا دھمکی؟

بدھ 05 جون 2019ء
ہارون الرشید
سب سے اہم یہ کہ دلیل نہیں ، فقط دھمکی دی جا رہی ہے ۔ اس سوال کا جواب کسی کے پاس نہیں کہ فیصلہ اگر سینئر ترین اور قابلِ اعتماد ججوں کو کرنا ہے تو دہائی کیوں ہے ، شور شرابا کیوں ، اعتماد کیوں نہیں ؟ عرب شاعر امرائو القیس نے ایک موقع پر کہا تھا : خبر ایسی آئی ہے کہ یقین ہی نہیں آتا ۔یہ بات سپریم کورٹ بار ایسو سی ایشن کے صدر امان اللہ کنرانی پہ یاد آئی ،دھمکیوں پہ دھمکیاں ، خوفناک انجام کی دھمکیاں ۔کیا یہ ایک قانون دان کی زبان ہے
مزید پڑھیے




آسمان کا فیصلہ

اتوار 02 جون 2019ء
ہارون الرشید
قسم ہے زمانے کی بے شک انسان خسارے میں ہے مگر وہ لوگ جو ایمان لائے اور صالح عمل کئے جنہوں نے حق کی نصیحت کی صبر کی نصیحت کی۔ اب یہ تو فرمانِ الٰہی ہے لہٰذا اصل الاصول ہے کہ وقت کی قہر مانیوں کے مقابل صرف وہ سرخرو ہوگا جو سچائی پہ قائم رہے گا،بلکہ پیہم صبر سے کام لے۔ صبر سے مراد کیا ہے ؟اگر خود قرآن حکیم سے ہی مدد مانگی جائے،جناب رسالت مآب کے ارشادات کو ملحوظ رکھا جائے اور تاریخ سے سیکھا جائے تو یہ ٹھنڈے دل سے تجزیہ ہے ، حکمت اور تدبیر ہے۔ فقط خاموشی اور
مزید پڑھیے


سوشل میڈیا کے شہسوار

هفته 01 جون 2019ء
ہارون الرشید
ان پہ حیرت ہے ‘ آن واحد میں جو کسی کو خطا کار ٹھہراتے ہیں ۔کسی کو آن واحد میں معصوم۔ جذبات اور جنون کے مارے‘ سوشل میڈیا کے شہ سوار۔!اور اب تو اللہ کے فضل سے ہمارے عظیم سیاسی لیڈر بھی۔ لگ بھگ تین عشرے قبل ایک ملک گیر سروے سے انکشاف ہوا کہ مسلم تاریخ خطیبوں کا سب سے بڑا موضوع ہے۔ قرار اورفروغ کے مثالی دور‘ عہد فاروقی کے قصے بہت کہے جاتے ہیں ‘بالکل صحیح اور درست‘مبالغہ آمیز اور کبھی تراشی کی گئی ان داستانوں کا خلاصہ یہ ہوتا ہے کہ شب بھر فاروق اعظمؓ مدینہ منورہ
مزید پڑھیے


بازی گر

جمعرات 30 مئی 2019ء
ہارون الرشید
وہ انقلابی ایجنڈا کیا ہوا ؟ ایٹمی دھماکے کے ہنگام وزیرِ اعظم نواز شریف نے جس کا اعلان کیا تھا ۔پولیس میں اصلاحات کا آغاز کیوں نہ ہو سکا ؟ ملک کو اپنے پائوں پر کھڑا کرنے کی بجائے بھیک مانگنے اور قرض پہ قرض لینے کا وہ سلسلہ کیوں جاری رہا، جس نے بالاخر ہمیں دلدل کو سونپ دیا ہے ۔ ہیں کواکب کچھ نظر آتے ہیں کچھ دیتے ہیں دھوکہ یہ بازی گر کھلا 1998ء کے دبئی شہر میں یہ مئی کا مہینہ تھا ۔1974ء میں پوکھران کے بعد ، بھارت نے دوسری بار ایٹمی دھماکر ڈالا تھا۔ٹیکسی میں سوار
مزید پڑھیے


فتنہ پرور

اتوار 26 مئی 2019ء
ہارون الرشید
غیر ذمہ دار ی ہے ، خودغرضی، مفاد پرستی اور ابن الوقتی ۔ خوئے انتقام ہے اور اس سے مغلوب لوگ ۔ لیڈر نہیں ، اکثر ان میں سے مسخرے ہیں ۔ اپنے کارناموں کی سزا بھگتنے والے ، اپنے انجام سے خوفزدہ ۔ آنے والے کل میں جنہیں عبرت کا نشان بننا ہے ۔ وہی پرانی کہاوت : تاریخ کا سبق یہ ہے کہ کوئی اس سے سبق نہیں سیکھتا ۔ جسٹس جاوید اقبال بظاہر عدمِ احتیاط کے شکارہوئے ۔ قانون کی رو سے کیا وہ جرم کے مرتکب بھی ہوئے ؟ قرآنِ کریم، سنت رسولؐ یعنی شریعت
مزید پڑھیے


مگر افسوس!

هفته 25 مئی 2019ء
ہارون الرشید
مگر افسوس کہ کم ہی لوگ سوچتے، کم ہی غور کرتے اور اس سے بھی کم اپنی اصلاح پہ آمادہ ہوتے ہیں ۔ زیاں بہت ہے ، خداکی کائنات میں زیاں بہت ۔ میڈیا کے باب میں اتنی بڑی غلطی حکومت کر چکی کہ تلافی اب سہل نہیں،الّا یہ کہ حماقت اور اس کے محرکات کا پوری طرح ادراک کر لیا جائے ۔ یہ سمجھ لیا جائے کہ ایسا کیوں ہوا ۔ تہیہ کر لیا جائے کہ طاقت نہیں، دلیل سے کام لیا جائے گا۔ کیا یہ ممکن ہے ؟ کیا ڈاکٹر فردوس عاشق اعوان ،نعیم الحق، افتخار درّانی اور یوسف
مزید پڑھیے