BN

سعد الله شاہ



بلاول کی لات اور صورت حالات


مجھ سا کوئی جہاں میں نادان بھی نہ ہو کرکے جو عشق کہتا ہے نقصان بھی نہ ہو خوابوں سی دلنواز حقیقت نہیں کوئی یہ بھی نہ ہو تو درد کا درمان بھی نہ ہو یہ اشعار بلاول کی تقریر سن کر ذہن میں آئے کہ وہ وقت آ گیا ہے کہ جب آپ کو اپنے کہے کی قیمت ادا کرنا پڑتی ہے مگر انجام سے بچنے کی کوشش تو سب کرتے ہیں حالات بہت سنجیدہ اور گھمبیر ہیں مگر نہ جانے مجھے بلاول کی ایک بات نے مسکرانے پر مجبور کر دیا اور میں اپنے ماضی میں جا پہنچا کہ یہی ایک
اتوار 07 اپریل 2019ء

پاکستانی ٹیلنٹ اور افتخار مجاز

هفته 06 اپریل 2019ء
سعد الله شاہ
دل سے کوئی بھی عہد نبھایا نہیں گیا سر سے جمال یار کا سایہ نہیں گیا اڑتا رہا میں دیر تلک پنچھیوں کے ساتھ اے سعد مجھ سے جال بچھایا نہیں گیا ہوا میں اڑتا انسان کی جبلی خواہش کہ وہ پرندوں کو اڑتے ہوئے دیکھتا تھا۔ پرندہ اس کا استاد بھی ہے کہ اسے دیکھ کر رائٹ برادران نے پہلا جہاز بنایا جسے آپ جہاز نما کہہ لیں۔ پرندے کی نقل اصل سے بھی آگے نکل گئی۔ رائٹ برادران کی طرح کوئی اور بھی تو سوچ سکتا ہے تو آج پاکستانی نوجوان فیاض کی کہانی فلیش ہوئی ہے جس نے معصومانہ انداز میں
مزید پڑھیے


حج ٹریننگ کا پہلا سیشن

جمعه 05 اپریل 2019ء
سعد الله شاہ
کس نے دل میں مرے قیام کیا آسماں نے مجھے سلام کیا کیا بتائوں کہ بندگی کیا ہے میں نے خود اپنا احترام کیا بندگان خدا کی بندگی ہی اس کی شناخت اور پہچان ہے۔ یہی ان کی اڑان اور معراج ہے کیا یہ کم خوش بختی ہے کہ بندے کو خود بلا کر اپنا مہمان کرے۔ میں آج حج پر بات کرنا چاہتا ہوں کہ خوش بختی سے میں اور میری بیگم بھی عازمین حج میں شامل ہیں۔ سب جانتے ہیں کہ یہ پانچ ارکان اسلام میں پانچواں فریضہ ہے۔ مگر اس میں خاص بات یہ کہ آپ کو اللہ کے گھر کی
مزید پڑھیے


میلہ چراغاں اور مشاعرہ

منگل 02 اپریل 2019ء
سعد الله شاہ
بہار اپنے جوبن پر ہے۔ پیڑ اور پودے اپنے پیرہن بدل چکے۔ لش پش کرتے پات اور دھوپ میں بڑھتی ہوئی خوشگوار حدت۔ بسنت اور بسنتی رنگ کا خیال یقینا ایک ثقافت کا آئینہ دار ہے۔ یہ بو قلمونی اور رنگا رنگی قدرت کی صناعی ہی تو ہے۔ گلاب اور خواب کتنے ہم معنی لگتے ہیں۔ روشوں پر کھلے ہوئے پھول‘ ملول لمحوں کو بھی سنہرا کر دیتے ہیں۔ آنکھوں روشنی بھرتی سونے جیسی سرسوں‘ پائوں پڑتے ہوئے شام کے سرمئی سائے‘ ہائے ۔ یادوں کے کھلتے ہوئے در اور خواہشوں کو لگتے ہوئے پر۔ گزری ہوئی سنہری ساعتیں بھی
مزید پڑھیے


کرکٹ ‘شیریں مزاری اور عطاء اللہ عیسیٰ خیلوی

اتوار 31 مارچ 2019ء
سعد الله شاہ
حاصل عمر وہی طفل ہے اک گریہ کناں ہاتھ سے چھوٹ گئے جس کے غبارے سارے نظر انداز کیا میں نے بھی اس دنیا کو اور دنیا نے بھی پھر قرض اتارے سارے زندگی کی دھوپ چھائوں ہی آپ کو تجربات سے گزر کر نتائج سے ہمکنار کرتی ہے۔ آدمی سوچ سمجھ کر آگے بڑھے یا بے نیاز ہو کر وہ ایک دفعہ پیچھے مڑ کر دیکھتا ضرور ہے۔ وہ اپنے موسموں کو اگر دہرا نہیں بھی سکتا مگر تخیل تو اس کے پاس ہے۔ دائرہ تو اسے مکمل کرنا ہوتا ہے ۔ایک بار‘ مگر وہ ہمہ وقت دائروں میں گھومتا ضرور رہتا
مزید پڑھیے




اتنے خوبصورت لب جھوٹ کیسے بولیں گے

جمعرات 28 مارچ 2019ء
سعد الله شاہ
وہ ایک یار طرحدار بھی ضروری تھا اور اس کی سمت سے انکار بھی ضروری تھا چٹان چوٹ پہ چنگاریاں دکھانے لگی مگر تراشنا شہکار بھی ضروری تھا یہ باتیں کوئی معرفت کی باتیں نہیں ہیں‘ بالکل سامنے کی ہیں۔ اس کھیل کو سمجھنے کے لئے کوئی قانون یا آئین پڑھنا ضروری نہیں یہ تو شوق و ذوق کی شہنشاہی ہے کہ پرواز اسی مٹی کے حصے میں آئی ہے۔ کہیں اس کو نواز دیا تو کبھی اس کو اور تو اور یہ سخنوروں کی بھی ضرورت رہے ہیں کہ ’’بنتی نہیں ہے بات بلاول کہے بغیر‘‘ یہ ہماری ثقافت ہی نہیں نفسیات کا
مزید پڑھیے


’’برداشت ‘‘ کی دعائیہ محفل

بدھ 27 مارچ 2019ء
سعد الله شاہ
مجھ کو میری ہی اداسی سے نکالے کوئی میں محبت ہوں محبت کو بچا لے کوئی جگر نے بھی دل کی بات کہی تھی کہ ’’میرا پیغام محبت ہے جہاں تک پہنچے‘‘ تب اس نے یہ بھی کہا تھا کہ ’’جو دلوں کو فتح کر لے وہی فاتح زمانہ‘‘ بنیادی بات اصل میں یہی ہے کہ بندہ شیریں سخن نہ سہی کم از کم نرم خو تو ہو۔ کونپل کتنی نزاکت سے زمین کا سینہ چاک کرتی ہے۔ جرس گل بھی بہار کی نقیب ہے۔ اقبال نے بھی ہمیں مرد خلیق کی بات بتائی تھی اور ہجوم مے خانہ کا باعث اس
مزید پڑھیے


جوان جذبے، سنہرے خواب، خوش رنگ گلاب

پیر 25 مارچ 2019ء
سعد الله شاہ
اگرچہ غم بھی ضروری ہے زندگی کے لئے مگر یہ کیا کہ ترستے رہیں خوشی کے لئے وہ مجھ کو چھوڑ گیا تو مجھے یقیں آیا کوئی بھی شخص ضروری نہیں کسی کے لئے یہ شب و روز کا ہجر و وصال ہی تو زندگی ہے۔ یہ سردی گرمی اور بہار و خزاں اور پھر بارش سب موسم ہی تو ہیں۔ پھول کھلیں یا زخم سلیں یا پھر بچھڑے ہوئے ملیں‘ سب کیفیتوں کے نام ہیں۔ میں سمز کے تخیل مشاعرہ میں تھا اور یوں محسوس ہو رہا تھا کہ ’’رنگ باتیں کریں اور باتوں سے خوشبو آئے‘‘ یہ عہد شباب جوان جذبے‘ سنہرے
مزید پڑھیے


اردو سائنس بورڈ‘ اردو لغت اور پنجابی لغت

اتوار 24 مارچ 2019ء
سعد الله شاہ
ویسے تو کھیلوںمیں ہمارے ہاں یہ روایت رہی ہے کہ جو ذرا اچھا کھیلنا شروع ہو جاتا ہے اسے ٹیم ہی سے نکال دیا جاتا تاکہ اس کا دماغ ہی نہ خراب ہو جائے۔ یہ میں مذاق سے نہیں لکھ رہا۔ واقعتاً جب ایک مرتبہ ہاکی ٹیم سے میرا فیورٹ حسن سردار نکالا گیا تو تب میں نے حسن کے بارے میں انگریزی میں نظم لکھی کہ ایم اے انگریزی کا دور تھا۔ منیر نیازی نے بھی شاید اسے ہی عالم میں کہا ہو گا: مجھ میں ہی کچھ کمی تھی کہ بہتر میں ان سے تھا میں شہر میں کسی کے
مزید پڑھیے


خالد احمد کی چھٹی برسی پر کچھ یادیں

جمعرات 21 مارچ 2019ء
سعد الله شاہ
ہمارے پاس حیرانی نہیں تھی ہمیں کوئی پریشانی نہیں تھی ہمیں ہونا تھا رسوا ہم ہوئے ہیں کسی کی ہم نے بھی مانی نہیں تھی میرے پیارے قارئین:حیرت ہی وہ عمل ہے جس سے شہرِ طلسمات کے دروا ہوتے ہیں۔ یہ سیب کے کھانے سے لے کر سیب کے زمین پر گرنے تک کا ردعمل ہے۔ تو تدبر اور فکر ضروری ہے۔ ویسے تو ہبوط آدم کے ساتھ ہی شیطان بھی ساتھ ہی زمین پر اتر آیا تھا اور پھر اس نے ہمارے نفس کو بھی بیعت کر لیا۔ خیر میں بات تو کچھ اور کرنا چاہتا تھا مگر راہوارقلم کسی اور طرف
مزید پڑھیے