BN

محمد عامر خاکوانی


آگ کون بجھائے گا؟


سوال یہ نہیں کہ کون آگے بڑھے گا، کون پیچھے ہٹے گا؟ سوال یہ ہے کہ کوئی ہے جو اس بڑھتی ہوئی آگ پر پانی ڈالے اور سیاسی کشیدگی میں کمی لے آئے؟بظاہر اس کا جواب نفی میں لگ رہا ہے۔ بدقسمتی سے ہم ایسے دور میں ہیں جب غیر متنازع ثالث موجود نہیں۔ ایسے بڑے نہیں جن کی بات مانی جا سکے۔ ہمارے ہاں’’ کونسل آف ایلڈرز‘‘ نام کا کوئی غیر رسمی ادارہ بھی نہیں، جو ٹکرائو رکوانے میں اپنا کردار ادا کرے۔ بحران میں پریشر والو کا کام دے۔ دو دن پہلے ایک قاری خاتون کا فون
جمعه 23 اکتوبر 2020ء

ٹک ٹاک پر پابندی ، معذرت خواہانہ رویہ کیوں؟

جمعه 16 اکتوبر 2020ء
محمد عامر خاکوانی
ٹک ٹاک (TikTok)ایک معروف چینی موبائل ایپ ہے۔اسے ویڈیو شیئرنگ سوشل نیٹ ورک سروس کہہ سکتے ہیں۔ ٹک ٹاک میں تین سے پندرہ سکینڈز کی شارٹ میوزک، کامیڈی، ڈانس،ٹیلنٹ ویڈیوز بنائی جاسکتی ہیں۔صرف تین سال پہلے یہ ایپ چین سے باہر کے ممالک میں متعارف کرائی گئی اور اپنے مخصوص فارمیٹ کی وجہ سے اسے غیر معمولی مقبولیت حاصل ہوئی۔ ایک تازہ ترین رپورٹ کے مطابق اس ایپ سے دو ارب کے قریب ویڈیوز ڈائون لوڈ ہوچکی ہیں۔ ٹک ٹاک پر ویڈیوز بنا نا اور اپ لوڈ کرنا بہت آسان ہے، چند سکینڈ ز کے لئے کسی گانے پر پرفارم
مزید پڑھیے


چند مشہور مفروضے جوسائنسی طور پر غلط ہیں

بدھ 14 اکتوبر 2020ء
محمد عامر خاکوانی
اپنے پچھلا کالم ٹرو /فالس لکھتے ہوئے ارادہ تھا کہ اسے ہمارے ہاں کے چند معروف سیاسی تصورات پر منطبق کیا جائے۔ بات مگر لمبی ہوگئی اور اس طرف محض اشارہ ہی کیا جا سکا۔ آج کا کالم بھی اس پر نہیں لکھ سکوں گاکہ بعض قارئین نے باقاعدہ ای میلز اور ٹیکسٹ میسجز بھیج کر استفسار کیا ہے کہ ایسے کون سے مشہورِعام مفروضے ہیں جو درحقیقت درست نہیں۔ سچی بات ہے کہ میں ایسی چیزوں کے حوالے سے ماہر نہیں، میری تحقیق بھی انکل گوگل کی محتاج ہے۔نیٹ پر کچھ دیر گزارنے کے بعد ایسے کئی مفید آرٹیکلز
مزید پڑھیے


ٹرو / فالس

منگل 13 اکتوبر 2020ء
محمد عامر خاکوانی
آج کل تو امتحانات میں ایم سی کیوز (multiple-choice questions (MCQ)کا عام رجحان ہے۔ ہر پرچے میں اٹھارہ بیس نمبر کا ایک سوال اسی پر ہوتا ہے۔ مختلف ذیلی سوالات اس کا حصہ ہوتے ہیں، جن کے ساتھ تین چار جوابات دئیے ہوتے ہیں، ان میں سے ایک جواب درست ہوتا ہے، اس کی نشاندہی کرنا ہوتی ہے۔ ہمارے زمانے میں اس کا فائدہ یہ تھا کہ اس سوال کے تمام نمبر حاصل کئے جا سکتے تھے ، آج کل تو خیر ہر سوال کے تمام نمبرز مل جاتے ہیں ، اسی وجہ سے گیارہ سو میں سے ایک ہزارساٹھ،ستر
مزید پڑھیے


اردو کی بہترین فکشن، نان فکشن کتاب

اتوار 11 اکتوبر 2020ء
محمد عامر خاکوانی
کورونا کی دو ہفتوں سے زائدعلالت کے دوران گھر کے الگ تھلگ کمرے میں رہنا پڑا۔ نیٹ فلیکس کی سہولت موجود تھی، مگر کچھ دیکھنے کو جی نہیں چاہا۔ کتابیں البتہ دستیاب تھیں، چند ایک ان دنوں میں منگوائیں،ان سے استفادہ کیا۔ انہی دنوں میں ایک دوست نے فون کر کے استفسار کیا کہ اردو کے ایسے اچھے ناول کا نام بتائیں جو کسی دوست کو تحفے میں دیا جا سکے۔ اردو میں ناولوں کی تعداد کچھ زیادہ نہیں، ان میں سے اچھے ،قابل ذکر ناولوں کی فہرست ایک درجن سے کم ہی ہوگی۔ اپنے پسندیدہ ناولوں کی فہرست
مزید پڑھیے



بیانیوں کی جنگ اورمیری بیماری

منگل 06 اکتوبر 2020ء
محمد عامر خاکوانی
اسے بدقسمتی کہیں ، مقدر کا لکھا یا ہمارا غیر محتاط رویہ،جو بھی کہا جائے،نتیجہ ہماری علالت کی صورت میں نکلا۔ بیماری کا کیا نام لیں، وہی جس کا آج کل ہر ایک شکار ہے۔ جو اس کا مذاق اڑاتے تھے، آخرکار وہ بھی اس کی لپیٹ میںآگئے۔ خدا جھوٹ نہ بلوائے ہم نے کبھی اس وبا کا مذاق نہیں اڑایا، اسے ہمیشہ سنجیدہ لیا،اس کے بارے میںجاننے کی کوشش کی۔ جدید ترین طبی نظریات سے واقفیت رکھی، ڈاکٹرز کے مشورے ملحوظ خاطر رکھے۔ اپنی قوت مدافعت بہتر رکھنے کے لئے وٹامن سی، زنک کے سپلیمنٹ استعمال کرتے رہے، ثنا
مزید پڑھیے


آل پارٹیز کانفرنس، کس کو کیا ملا؟

منگل 22  ستمبر 2020ء
محمد عامر خاکوانی
اپوزیشن کی آل پارٹیز کانفرنس(اے پی سی)پر چاہے تنقید کی جائے یا اس کی ستائش، اس نے کچھ اثرات مرتب کئے ہیں۔ اس کی اہمیت سے انکار کرنا مناسب نہیں ہوگا۔چار پانچ مختلف پہلو ہیں، ان پر بات کرتے ہیں۔ اے پی سی کا اپوزیشن کو سب سے بڑا فائدہ یہ ملا کہ نیم مردہ ، زندگی سے محروم حزب اختلاف میں جان پڑ گئی ہے۔ ان میں زندگی، تحرک کا احساس پیدا ہوا ہے۔ پچھلے دو برسوں میںاپوزیشن قیادت کایہ سب سے نمایاںسیاسی اکٹھ تھا۔ اس بار اپوزیشن کا موڈ زیادہ سنجیدہ، جارحانہ لگا۔ان کا روڈ میپ بھی واضح
مزید پڑھیے


غیر مقبول یا غیرمنطقی موقف ؟

اتوار 20  ستمبر 2020ء
محمد عامر خاکوانی
ایک معروف اور مقبول کالم نگار، اینکر نے اپنے تازہ ترین کالم میں کئی ایسے نکات لکھے ہیں،جن پر بات کرنا ضروری ہے۔اس سے پہلے ضروری ہے کہ اس کالم کے چند اقتباسات پیش کئے جائیں تاکہ جس کسی نے نہیں پڑھے، وہ باخبر ہوجائے اور اپنی ’’اصلاح‘‘فرما لے۔ وہ لکھتے ہیں:’’پنجاب پاکستان کا 60 فیصد ہے‘ یہ 12کروڑ لوگوں کا صوبہ ہے چناں چہ آپ جس طرف بھی نکل جائیں آپ کو وہاں پنجابی سوچ کا غلبہ ملے گا اور ہم پنجابیوں کی سوچ یہ ہے‘ اول ہم خود کچھ کرتے ہیں اور نہ کسی دوسرے کو کرنے دیتے
مزید پڑھیے


وِکٹم بلیمنگ کیوں غلط ہے ؟

جمعه 18  ستمبر 2020ء
محمد عامر خاکوانی
وِکٹم بلیمنگ(Victim Blaiming) یعنی کسی جرم کا نشانہ بننے والے فرد(مرد یا عورت)پر تنقید کرنا، الزام لگانا ہر اعتبار سے غلط ، ناجائز اور ظلم درظلم ہے۔ اس سے بڑی زیادتی اور کیا ہوگی کہ ایک شخص ظلم اور تشدد کا نشانہ بنا ہے، اوپر سے لوگ اس پر تنقیدشروع کر دیں۔ کسی واردات کاہدف کوئی خاتون بنی ہو تو ہر ایک کو نہایت احتیاط اور ذمہ داری کا ثبوت دینا چاہیے۔ خواتین طبعاً حساس اور نازک ہوتی ہیں۔ اس لئے جب کوئی خاتون خدانخواستہ کسی واردات کا نشانہ بنے تو میڈیا، پولیس ، اہل خانہ، عزیزواقارب، محلے دار
مزید پڑھیے


سانحہ لاہور سے کیا سبق سیکھنے چاہئیں؟

منگل 15  ستمبر 2020ء
محمد عامر خاکوانی
سانحہ لاہورکے بعد پچھلے چند دنوں میں کروڑوں لوگ جس تکلیف اور کرب سے گزرے ، اس کے بارے میںکچھ بتانے کی ضرورت ہی نہیں۔ابھی یہ معاملہ ختم نہیں ہوا۔ ایک مجرم گزشتہ روز گرفتار ہوا۔ انہیںسخت ترین سزائیں دینے کی بات ہو رہی ہے۔ وزیراعظم عمران خان نے اس حوالے سے قانون سازی کا عندیہ دیا ہے۔ ایک اور نئی تجویز گینگ ریپ کے مجرموں کی آختہ سازی (خصی کر دینے)کے حوالے سے بھی آئی ہے۔ مجھے نہیں معلوم کہ اس حوالے سے شرعی پہلو کیا ہیں اور کیا یہ ممکن ہے؟ یہ بات بہرحال طے ہے کہ اس
مزید پڑھیے